Ayat-e-Quraniya Se Hazir o Nazir ka Saboot


jkk001jkk002jkk003jkk004

Advertisements

16 thoughts on “Ayat-e-Quraniya Se Hazir o Nazir ka Saboot”

  1. Assalam o alaikum!
    Brelviyo se ak sawal ye ky quran mai ALLAH ny sorah e baqrah ayat 133 mai farmaya ky Ap (saw) unky pas mojod nhe thy jb Yaqoob a.s apny beto se keh rhy thy ky tum mere bad kis ki ibadat kya karo gy……
    Quran: sorah Yousaf ayat 102, sorah Qasas ayat 44 to 46 mai ALLAH ny saf kaha jinka mafhoom hai ky Ap(s.a.w) unky pas nhe thy aur ye b kafa ap unko dekh nhe rhy thy…
    Btao brelvyio agr Ap S.A.W hazr wa nazr hoty yousaf ya yaqoob A.S ky pas tu phr ALLAH ye ayse na farmata btao in ayat ki kya taweel karogy????

    1. Walaikumsalam:

      Aik waqt par 1 Sawal.

      Hum Ahlu Sunnat wa Jamat ka Ap KHAWARIJ or baydeeno ko Jawabat

      1) Firqa Khawairjia ki sub se bunyadi ghalati yeh hai keh ap log Quran ko lafzi maano main lete ho, Neez Ayat-e-Qurani ka shan-e-nazool samjhe bina he Behes karne or aitrazat karne chal parte ho kionkeh yahi apko sikhaya gaya hai.

      2) Qurani ayat al=Baqarah 133

      اَمْ كُنْتُمْ شُهَدَاۗءَ اِذْ حَضَرَ يَعْقُوْبَ الْمَوْتُ ۙ اِذْ قَالَ لِبَنِيْهِ مَا تَعْبُدُوْنَ مِنْۢ بَعْدِيْ ۭ قَالُوْا نَعْبُدُ اِلٰهَكَ وَاِلٰهَ اٰبَاۗىِٕكَ اِبْرٰھٖمَ وَاِسْمٰعِيْلَ وَاِسْحٰقَ اِلٰــهًا وَّاحِدًا ښ وَّنَحْنُ لَهٗ مُسْلِمُوْنَ ١٣٣؁

      Tarjuma:
      Tafsir Ibne kathir Jisko ap khawarij bhi moatabar manty ho wo kya kehti hai is ayat ke bare main wo parho pehle

      قولہ تعالی
      اَمْ كُنْتُمْ شُهَدَاۗءَ اِذْ حَضَرَ يَعْقُوْبَ الْمَوْتُ) بھلا جس وقت یعقوب وفات پانے لگے تو تم اس وقت موجود تھے۔
      یہ آیت یہود کے بارے میں نازل ہوئی جب انہوں نے نبی کریم سے کہا کہ کیا آپ جانتے ہیں کہ حضرت یعقوب نے مرتے وقت اپنے بیٹوں کو یہودیت کی دعوت دی تھی ۔ (تفسیر الطبری،1۔436، تفسیر ابن کثیر1۔198)

      Yani Sabit hua keh Ye Ayat KUFAAR ke liye nazil ki gayi hai. Ap kis hasiyat se isko Musalmano par laga rahe hain number 1!

      or number 2 yeh

      (ف241) شان نزول: یہ آیت یہود کے حق میں نازل ہوئی انہوں نے کہا تھا کہ حضرت یعقوب علیہ السلام نے اپنی وفات کے روز اپنی اولاد کو یہودی رہنے کی وصیت کی تھی اللہ تعالیٰ نے ان کے اس بہتان کے رد میں یہ آیت نازل فرمائی ۔ (خازن) معنیٰ یہ ہیں کہ اے بنی اسرائیل تمہارے پہلے لوگ حضرت یعقوب علیہ السلام کے آخر وقت ان کے پاس موجود تھے جس وقت انہوں نے اپنے بیٹوں کو بلا کر ان سے اسلام و توحید کا اقرا رلیا تھا اور یہ اقرار لیا تھا جو آیت میں مذکور ہے۔
      (ف242) حضرت اسمٰعیل علیہ السلام کو حضرت یعقوب علیہ السلام کے آباء میں داخل کرنا تو اس لئے ہے کہ آپ ان کے چچا ہیں اور چچا بمنزلہ باپ کے ہوتا ہے’ جیسا کہ حدیث شریف میں ہے اور آپ کا نام حضرت اسحاق علیہ السلام سے پہلے ذکر فرمانا دو وجہ سے ہے ایک تو یہ کہ آپ حضرت اسحاق علیہ السلام سے چودہ سال بڑے ہیں دوسرے اس لئے کہ آپ سید عالم ﷺ کے جد ہیں ۔

      Tafsir Dur e Mathur main Kuch yun likha hai

      حضرت یعقوب علیہ السلام کی اپنے بیٹوں کو وصیت
      (۱) ابن ابی حاتم نے ابو العالیہ رحمہ اللہ علیہ سے روایت کیا کہ لفظ آیت ’’ ام کنتم شھداء‘‘ میں کنتم کا خطاب اہل مکہ کو ہے۔
      (۲) ابن ابی حاتم نے حسن رحمہ اللہ علیہ سے روایت کیا کہ لفظ آیت ’’ ام کنتم شھداء اذ حضر یعقوب الموت‘‘ (الآیہ) سے مراد ہے یہود نصاری اور دوسرا شخص حاضر نہیں تھا جیسے یعقوب علیہ السلام نے اپنے بیٹوں سے عہد کیا تھا جب ان کو موت حاضر ہوئی کہ نہ عبادت کرنا مگر اسی (ایک خدا) کی انہوں نے اس کا اقرار کیا تھا اور اللہ تعالیٰ نے ان کے متعلق گواہی دی ہے کہ انہوں نے ان کی عبادت کا اقرار کیا تھا بے شک وہ مسلمان تھے۔
      (۳) ابن ابی حاتم نے ابن عباس ؓ سے روایت کیا کہ وہ فرماتے تھے کہ دادا باپ ہوتا ہے اور دلیل کے طور پر یہ آیت پڑھتے تھے لفظ آیت ’’قالوا نعبد الہک والہ ابئک ابرہم واسمعیل واسحق‘‘۔
      (٤) ابن جریر نے ابو زید رحمہ اللہ علیہ سے روایت کیا کہ اللہ تعالیٰ نے اسماعیل علیہ السلام کا ذکر پہلے فرمایا کیونکہ وہ بڑے تھے۔
      (۵) ابن ابی حاتم نے ابو العالیہ رحمہ اللہ علیہ سے روایت کیا کہ اس آیت میں چچا کو باپ کہا گیا ہے۔
      (٦) ابن ابی حاتم نے محمد بن کعب رحمہ اللہ علیہ سے روایت کیا کہ ماموں والد ہے اور چچا بھی والد ہے اور یہ آیت پڑھی لفظ آیت ’’قالوا نعبد الہک والہ وبائک‘‘ پڑھتے تھے۔
      (۷) عبد بن حمید نے حسن رحمہ اللہ سے روایت کیا کہ وہ لفظ آیت ’’نعبد الہک والہ وبائک‘‘ یعنی ایک معنی پر۔

      Tafsir e Mazhari main iski Mukammal Detail or maani likhe hain. Jo Ap apni nadani main apne taur par saboot ke taur par samne laay ho apni baat k jawaz k taur par. Wo khud apke dharam ke khilaf jati hai.

      اَمْ كُنْتُمْ شُهَدَاۗءَ اِذْ حَضَرَ يَعْقُوْبَ الْمَوْتُ ( کیا تم موجود تھے جب یعقوب ؑ کا آخری وقت آیا)حضر کے معنی ’’ موت قریب ہوئی‘‘ ام کنتم میں ام منقطعہ ہے حاصل یہ ہے کہ اے یہودیو ! جس طرح تم کہتے ہو اس طرح نہیں ہوا کیا تم وہاں موجود تھے یعنی موجود نہ تھے تو پھر کیوں ایسے بلا دلیل دعوے ہانکتے ہو بعض مفسرین نے کہا کہ ام کنتم میں مؤمنین کو خطاب ہے اور معنی یہ ہیں کہ اس وقت تم وہاں موجود نہ تھے بلکہ یہ قصہ تم کو وحی سے معلوم ہوا ہے۔
      اِذْ قَالَ لِبَنِيْهِ ( جب انہوں نے اپنے بیٹوں سے پوچھا) یہ اِذْ حَضَرسے بدل ہے۔
      مَا تَعْبُدُوْنَ مِنْۢ بَعْدِيْ ( تم لوگ میرے بعدکس چیز کی پرستش کرو گے)یعقوب علیہ السلام کو اپنے بیٹوں سے یہ امر دریافت کرنے سے ان کو توحید اور سلام پر پکا کرنا اور ان سے عہد لینا منظور تھا۔
      عطا نے فرمایا ہے کہ جب کسی پیغمبرکی موت قریب آتی ہے تو موت سے پہلے حق تعالیٰ انہیں زندگی اور موت میں اختیار عطاء فرماتا ہے کہ تمہیں اختیار ہے چاہے دنیا میں رہو یا عالم بقا میں چلو حسبِ معمول جب حضرت یعقوب کو یہ اختیار ملا تو عرض کیا خداوندا کچھ دیر کے لیے مجھے مہلت عطا فرمائیے تاکہ میں اپنے بیٹوں کو کچھ وصیت کردوں۔ مہلت مل گئی اس وقت یعقوب ؑ نے اپنے سب بیٹوں پوتوں کو جمع کرکے یہ وصیت فرمائی۔
      قَالُوْا نَعْبُدُ اِلٰهَكَ وَاِلٰهَ اٰبَاۗىِٕكَ اِبْرٰھٖمَ وَاِسْمٰعِيْلَ وَاِسْحٰقَ ( انہوں نے جواب دیا ہم اس کی پرستش کریں گے جس کی آپ اور آپ کے بزرگ ابراہیم اور اسماعیل و اسحق ؑ پر ستش کرتے آئے ہیں) ابراھیم و اسمٰعیل و اسحق اٰباءِک سے عطف بیان ہے اور اسماعیل ؑ اگرچہ ان کے چچا تھے لیکن عرب کے لوگ چچا کو بھی باپ ہی کہتے ہیں جیسے خالہ کو ماں کہہ دیتے ہیں جناب رسول اللہ ؐ نے فرمایا کہ چچا آدمی کا اس کے باپ کی مثل ہے اس حدیث کو ترمذی نے علیؓ سے اور طبرانی نے ابن عباس ؓ سے روایت کیا ہے نیز جناب سرور کائناتؐ نے اپنے چچا عباس ؓ کے بارے میں فرمایا تھا کہ میرے باپ کو میرے پاس لے آؤ میں ڈرتا ہوں کہ قریش ان سے بھی وہی معاملہ نہ کریں جو ثقیف نے عروہ بن مسعود ؓ سے کیا تھا۔ (ثقیف نے عروہ رضی اللہ عنہ کو قتل کردیا تھا)
      اِلٰــهًا وَّاحِدًا ( یعنی وہی معبود جو واحد ( لا شریک لہ ) ہے یہ الٰھک و الہ ابائک کے مضاف سے بدل ہے اگرچہ الٰھک و الہ اباء ک سے خود معلوم ہوتا تھا کہ معبود برحق مراد ہے لیکن اِلٰھاً وَّاحِدًا کی زیادتی سے توحید کی اور زیادہ تصریح ہوگئی اور نیز مضاف کو عطف کے تعذر کی وجہ سے جو مکرر کیا گیاہے اس سے وہم ہوتا تھا کہ یعقوب ؑ کا الٰہ اور ہے اور آباء و اجداد کا الہ دوسرا ہے۔ الٰھًا واحدًا سے اس وہم کو بھی دفع فرمادیا اور یا الٰھاً واحدًانرید مقدر کا مفعول ہے مطلب یہ ہو گا کہ ہم الٰھَکَ وَ الٰہَ اَبَاءَ کَ سے اٰلہ واحد مراد لیتے ہیں۔
      وَّنَحْنُ لَهٗ مُسْلِمُوْنَ ( اور ہم اسی کی اطاعت پر رہیں گے) یا تو نعبد کے فاعل یا مفعول اور یا دونوں سے حال ہے اور یہ بھی ممکن ہے کہ جملہ معترضہ ہو۔
      ( وہ ایک جماعت تھی) اس سے حضرت ابراہیم اور حضرت یعقوب اور ان کی اولاد ؑ مراد ہے امۃ اصل میں مقصود کوبولتے ہیں جماعت کو امت اس لیے کہنے لگے کہ جس جانب جماعت ہوتی ہے لوگ اسی کا قصد کرتے ہیں۔

      ==============

      Jawab number 2: Baqi jo ap ne apni taraf se Mafhoom likhe hain wo ab ap ke zimma hai keh unko Sahih Tafasir e qadeema se saboot ke taur par do.

      ======================
      Jawab number 3:
      Ibadat – or Waseela 2 alag cheezen hoti hain, Wese he Ap ki misal Musalmano se alag isliye hai keh.

      Khawairj ke bare main Ibne Umar (rd) ne farmaya tha keh Ye log (Yani ap janab) Kufar par nazil ki gayi ayat ko Musalmano par laga kar unke qatal ko jaiz karenge.’

      To janab yahi to ap kar rahy ho, Kafiron ke liye nazil ki gayi ayat ka ap ne apni taraf se khud saakhta mafhoom gharh liya hai jiska na sar hai na pair. na he us se hazir nazir ka koi taluq hai.

      Pehle ye post parh lo keh HUM ASLI SUNNI MUSALMANO ka Aqeeda-e- Hazir o Nazir kya hai. Phir aa kar ulema ki tarha reference den lekin Adhooray nahi Pooray hawalay ke sath. Khud ka banaya hua tafseer ka charba nahi balke Qadeem tafasir e quran jo salaf saliheen se sabit hain unke zariye hawalajat ke sath tehqiq ke baad kuch likha karen.

      https://makashfa.wordpress.com/2012/12/17/hazir-o-nazir-ki-sharaye-tehqeeq-roman-urdu/

      Jazak Allah

  2. Jo ayat oper ap logo ny jo tarjuma ya tafseer btai hai wo agr sahe maan li jaye tu naozubillah phr ALLAH ny oper meri btai hoi ayaat mai Ap s.a.w ky hazir o nazir hony ka rad kue kya in ayat mai bi shahida ka lafz aya hai. Tu kya ALLAH ky kalam mai bi naozubillah bahimi ayat ka takrao mumkin hoskta hai???
    jbky ALLAH ny khud farmya hai quran mai kisi jaga takrao nhe

    1. Wah Yani apke kehne ka matlab yeh hai keh Hum apki apni Gharhi hovi baat ko to sahih maan len lekin hum ne jo ayat e qurani ki tafseer di hai wo Sahih nahi? Chalen pehle inko Ghalat sabit karen with scan.

      Yahi wo baat hai keh Allah ke kalam main takrao nahi ho sakta Misal dekhen>

      Quran main likha hai

      Wabtughu ilehil waseelata bil ehsana
      Yani: Meri taraf Waseela Dhondo Bhalai ke sath.

      Dosri jaga irshad hua Surah tehreem ayat 4 main keh

      Beshak Allah unka madadgar hai, OR JIBRAEEL OR NAIK EEMAN WALAY or Unke baad Farishty madad par hain.”

      Ab Apke khawarij ke aqeede ke mutabiq to Ghairullah se madad shirk hai jubke Quran main baqol apke bhi Tasadam mumkin nahi To phir ye dono ayat ka kya maani hai.

      Maani yahi hai keh JO ap yani deobandi/wahabi/salafi/ahle hadith etc etc ka ajkal ka aqeeda hai wo darasal Islam ke khilaf hai kionkeh Quran main to tasadum nahi ho sakta. Agar Allah farma raha hai keh Meri taraf Waseela dhondo to wo waseela beshak Allah ke naik bandy hain or in sub ka tarjuma or tafsir hum ne main page par Tawasul ke section main di hovi hai neez degar posts bhi hain Tasali se parho ap pehle. Phir humari he tarha Scans ke sath inka radd lao warna kindly yahan time zaya mat karen.

  3. Apki jo tafseer hai hazr o nazr ky mutalik wo sab phele waly aslaaf aur tafaseer ky khilaf hai phele mufasire quran Abdullah bin Abbass r.z ki tafseer se bi apki oper btai hoi tafseer nhe milti na hi tafseer e ibn ekaseer se na tafseer e tibri tasfeer e rohul maani waghera se milti hai. Unsub authentic sources ko chor kr apki bat ya tafseer ko kese mana jasktahaii????

    1. Aslaf? Pehle ap apne Aslaaf bayan karo or apna hadood arba keh konsi jamat or konse firqe se ho takeh baat wazeh ho sake.

      2nd Phir proof karo keh ye Ghalat hai Scans ke sath. Jese hum log is blog par apni scans library or posts ke sath de chuke hain hazar baar saboot.

      Abdullah ibne abass (Rd) ki oper batai hovi tafsir apko nahi mili? Kindly kis ayat ki tafsir apko chahiye Tafsir ibne abbas se ya jo bhi chahiye uske liye ye blog hargiz nahi.

      Tafseerat ke scans ke liye Facebook group main aain wahan par apka shoq pura kar diya jaiga. Is doran JO pehla comment jawabi apko diya gaya hai uska Radd lay aain.

      Jazak Allah

      1. Beta hmary aslaf wo hai ju thmary nhe kuy ky ayma e arba pirne pir shiekh jelani sameet kisi ny meelad nhe anaya na unka hazir nazir ka aqeda tha yehi hmary aslaf ky chand naam hai

  4. Janab baqi sorah e yousaf ayat 102 ki tafseer aur sorah e qasas ki tafseer kue nhe btai jin mai Ap s.a.w ko hi mukhatib kya gya ha aur un ayat ki scan copy laoga sabqa tafaseer se jo tumhari hazir o nazir aqedy ka rad kary gi
    Insa ALLAH
    ونعم بالله

    1. Bhai Jub Kaam poora kar liya karo tab he Daway kiya karo. Or kindly ye beta weta ki sifla salafi zuban mat istimal karo. Warna Rabulizat ki qasam agar mene is zuban main guftagu shuru kar di to ap janab ne yahan se aisa ghaib hona hai keh ainda nazar nahi ana. Islye behtar hai pehle saboot lao tab baat kiya karo.

    2. Agay daur peeche chaor Wahabi/Deobandiyo ka kaam hai Sunni Musalmano ka nahi. Isliye pehle jo aik Ayat tum ne di thi Uski tafseer hum ne paish ki. Pehle us point ko clear karo tab baqi sare sawalaon ke jawab bhi mil jainge. time zaya karne se bhetar hai keh mufassal radd tayar karo.

  5. Janab mere phele sawal ka pora jawab tu nhe dya na baqi ayaat ka jawab na day mai khud do ga kuch daer mai aur tumhary hazir o nazir waly ayaat ki tafseer bi….
    InshaALLAH
    ونعم بالله

    1. hazir – Mojood. Nazir – witness
      Some people think that Allah is ‘Omnipresent’ (Hazir) in every time in every place. THis is not true bcz, Allah is not bound to time and space.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s