Hazir wa Naazir [from Quran Sunnah and Salaf] [Ar/Ur/En]


Haazir wa Naazir!

Ahlu Sunnah Belief is: That Prophet Sal Allaho Alaihi wasalam is Haazir and Nazir in his blessed grave just like other prophets of Allah, and he can saw every action of the Ummatis as well as non-believers as one can see the palm of the hand, also he has gifted this status, that he can be seen at one time in many places and he can visit many places at once. This is all by the will of Almighty Allah and His granted powers.” time space and limitations are lifted for him.” We DO NOT BELIEVE THAT HE IS EACH AND EVERY TIME ACTIVE IN ALL PLACES’, but as we said, Wherever, whenever he wishes he can by the grace of Almighty Allah.

Hazir o nazirhazir o nazir s

[courtesy Admin 2: ZarbeHaq]

Prophet (sallalahu alayhi was’sallam) is Shahid (i.e. witness) and a witness must possess two qualities; Hadhir (i.e. present physically) as well as Nadhir (hearing, seeing). And without these qualities one can not be a truthful witness. Our belief is that Prophet (sallalahu alayhi was’sallam) is Hadhir in his heavenly resting place in Madinah ash’shareef but soul is able to move as soul of Musa (alayhis salam) was able to move from place to place while keeping touch with the body of Musa (alayhis salam) and Nadhir upon his Ummah. Ability of Hadhir Nadhir is a mojzaati qudrat which is not only granted to Awliyah-Allah[1] but to Prophet (sallalahu alayhi was’sallam) as well, who is a perfection in being Nadhir and like of which Allah (subhana wa ta’ala) has granted angle of death.

Allah (subhana wa ta’ala) states in Quran: “O Prophet! Truly We have sent you as a Witness, a Bearer of Glad Tidings, and Warner.” [Ref: 33:45]

“We have sent to you an apostle to be a witness concerning you, even as We sent an apostle to Pharaoh.” [Ref: 73:15]

If the addressed are Muslims in this verse then the verse means Prophet (sallalahu alayhi was’sallam) is witness regarding the deeds, actions, beliefs of Muslims.

The verse can also mean that Prophet (sallalahu alayhi was’sallam) is witnesss regarding the deeds, beliefs of mankind: “Then addresses the disbelievers of the Quraysh, and along with them the rest of mankind, “Verily, We have sent to you a Messenger to be a witness over you,) meaning, witnessing your deeds.” [Tafsir Ibn Kathir, 73:15]

 

And it is supported by: “How then if We brought from each people a witness, and We brought you as a witness against these people!” [Ref: 4:41]

“One day We shall raise from all Peoples a witness against them, from amongst themselves: and We shall bring you as a witness against these (people): and We have sent down to thee the Book explaining all things, a Guide, a Mercy, and Glad Tidings to Muslims.” [Ref: 16:89]

 

This establishes that Prophet (sallalahu alayhi was’sallam) is witness upon his own Ummah as well as witness upon Ummahs of other Prophets. To be a truthful witness Prophet (sallalahu alayhi was’sallam) must have seen, heard the events about he is going to bear witness about.

Ummah of RasoolAllah (sallalahu alayhi was’sallam) is witness as well, and Ummah will bear witness against other Ummahs: “Thus, have We made of you an Ummat justly balanced, that ye might be witnesses over the nations, and the Messenger a witness over yourselves; …” [Ref: 2:143]

 

And when the Ummah will be asked how do you bear witness they will say they are bearing witness because they have been told by Prophet (sallalahu alayhi was’sallam):

Abu Sa’eed al-Khudri (may Allaah be pleased with him) said: The Messenger of Allaah (peace and blessings of Allaah be upon him) said: “A Prophet will come on the Day of Resurrection accompanied by one man, and a Prophet will come accompanied by two men, or more than that. Then his people will be called and it will be said to them: ‘Did this one convey the message to you?’ and they will say, ‘No.’ It will be said to him: ‘Did you convey the message to your people?’ and he will say: ‘Yes.’ It will be said to him: ‘Who will bear witness for you?’ He will say: ‘Muhammad and his ummah.’

So Muhammad and his ummah will be called, and it will be said to them: ‘Did this one convey the message to his people?’ They will say: ‘Yes.’ It will be said: ‘How did you know that?’ They will say: ‘Our Prophet came to us and told us that the Messengers had conveyed the message.’ That is the words of Allaah, ‘Thus We have made you a just (and the best) nation.’ He said: Just, so that you will be witnesses over mankind and the Messenger will be a witness over you.”

[Ref: Musnad Imam Ahmad, Hadith 1164, Sunan Ibn Maajah, Hadith 4284]

 

This establishes that Ummats witnessing over the ummats of other Prophets is solely on the basis of Ummat being informed by Prophet (sallalahu alayhi was’sallam).

[1] Allah becomes hands, feet, eyes, ears, of a muqarrib with which the muqarrib gives, sees hears, and walks. Meaning karamati, mojzati abilities are granted to a Wali by Allah and because a Nabi is born muqarrib therefore Nabi possess these qualities since birth.
Question: Our belief is that Prophet (sallalahu alayhi was’sallam) is Hadhir in his heavenly resting place in Madinah ash’shareef but soul is able to move as soul of Musa (alayhis salam) was able to move from place to place while keeping touch with the body of Musa, do you mean by the words ” move from place to place ” that Prophet(saw) can be hazir nazir at different places at different times and is not hazir nazir all the time at all the places?

Answer:

Let me first explain the concept of Hadhir and Nadhir in detail. Where a person is, there he is Hadhir in that place, as far as he can see, hear he is Nadhir that far. Let me explain how we believe Prophet sallalahu alayhi was’sallam is Hadhir. Imagen a candle lit in a dark room, you can take the candle any where in the room yet its light will still illuminate the room. Candle being body Prophet (sallalahu alayhi was’sallam) and light of candle being Nadhir. Prophet (sallalahu alayhi was’sallam) can go any where with his body but his quwwa of nadhir encampasses the actions of Jin and mankind. He can be in Pakistan and still see the actions mankind, he can be England and he will still see the actions of mankind, where he is Hadhir does not effect his ability of Nadhir. He can be anywhere yet he will see and hear the actions of mankind because he was sent as a Witness upon the actions of mankind. Therefore Allah (subhana wa ta’ala) will ensure that his Prophet is seeing, hearing the actions of mankind, Jinn.

In short if your question was: do you mean by the words ” move from place to place ” that Prophet(saw) can be hazir at different places at different times and is not hazir all the time at all the places? Then I will say yes, Prophet sallalahu alayhi was’sallam is not Hadhir with his body all the time in all places but he is Hadhir in Madinah ash’shareef in his heavenly grave. What i mean is that Prophet (sallalahu alayhi was’sallam) is not Hadhir in every place, but he can go to any where he wants, in other words he can be Hadhir where ever he wants to be. Just as candle can be Hadhir in any part of the room and move from place to place yet its light still illuminates the room, in other words candles Nadhir ability will still spread in the entire room. You might have heard that Sunni’s believe Prophet (sallalahu alayhi was’sallam) is Hadhir Nadhir every where. Yes we believe he is Nadhir upon actions of jinkind and mankind, but we do not believe he is hadhir in the entire earth in meaning of his body being on all over the earth. We believe he is Hadhir in one place from there seeing, hearing the actions of jinn and mankind. This misconception is partly fault of opponents of Ahle Sunnat, and partly Ahle Sunnat not explaining their point of view properly. Sunni’s say Prophet is Hadhir Nadhir on mankind in meaning of just as the candle is said to be hadhir in the room. Note candle is only in one place yet it is said candle is in the room. Candle does not fill the room but its light fills the room and because of light filling the room its said candle is hadhir (present) in the room. Same way Sunni scholars say Prophet is Hadhir Nadhir upon mankind and Jinnkind. Meaning that He is Hadhir in place but because he can see, hear the actions of jinn and mankind he is said to be Hadhir and Nadhir over them or witness over them.

Question about [1] i.e., Allah becomes hands, feet…….till the end. Question is It does not mean that muqarrib becomes equal in all these siffats with ALLAH. It is metaphorical statement and can not be understood exactly.

Answer: We do not believe that a muqarrib becomes equal with Allah (subhana wa ta’ala) or part of Allah (subhana wa ta’ala), because this is Shirk al akbar. Anyone who believes a creation of Allah (subhana wa ta’ala) becomes equale with Allah (subhana wa ta’ala) in His attributes such a person is Mushrik (i.e. a kaffir who associates partners with Allah subhana wa ta’ala). A muqarrib does not become equal but Allah (subhana wa ta’ala) grants to muqarrib some powers.

Let me interpret the Hadith e qudsi in light of Sahih ahadith: “My slave comes nearer to Me, is what I have enjoined upon him; and My slave keeps on coming closer to Me through performing Nawafil till I love him, so I become his ears with which he hears, …” It means that Allah (subhana wa ta’ala) grants the ears to hear extra ordinarily, Prophet heard two people being tortured in the grave: “The Prophet once passed by two graves and said, “These two persons are being tortured not for a major sin. One of them never saved himself from being soiled with his urine, while the other used to go about with calumnies(to make enmity between friends).” [Ref: Bukhari, Book 4, Hadith 217]

” … and his eyes with which he sees …” it means supernatural ability to see, and evidence of this is Prophet (sallalahu alayhi was’sallam) said: “I happened to pass by Moses as he was busy in saying prayer in his grave, …” [Ref: Muslim, Book 30, Hadith 5859] meaning of “… , and his hand with which he grips, …” [and then gives] is explained by hadith of Hadhrat Abu Huraira who told Prophet (sallalahu alayhi was’sallam) that he forgets ahadith so Prophet: “Spread your Rida’ (garment).” I did accordingly and then he moved his hands as if filling them with something (and emptied them in my Rida’) and then said, “Take and wrap this sheet over your body.” I did it and after that I never forgot any thing. [Ref: Bukhari, Book 3,Hadith 119] and meaning of: “… and his leg with which he walks; and if he asks Me, I will give him, and if he asks My protection, I will protect him; and ….” [Ref: Bukhari, Book 76, Hadith 509] is that Allah (subhana wa ta’ala) grants the muqarrib jin or man to travel great distances in short time. In the end my objective was to establish that Allah grants his Ambiyah mojzati attributes an to his Awliyah karamati attributes.

Also Ibn Kathirs Tafsir no where negates Prophet (sallalahu alayhi was’sallam) not being witness upon his Ummah. He quotes hadith in which Isa alayhis salam will say I was only witness upon my ummah when i was amongst them, and Prophet said I will say like Isa alayhis salam said. First of all Isa (alayhis salam) will know exactly what his Ummah did after him. Because on his second comming with Imam Mahdi he will know exactly what his Ummah did after him, how his Ummah made him gods, and his mother gods and how they worship them etc … yet on the day of judgement he will negate his own knowledge regarding what his Ummah as whole has done with his religion. The statement of Isa alayhis salam is statement of humility, and knowingly he will deny his knowledge because Allah will be in jalal. And Prophet (sallalahu alayhi was’sallam) said he will deny his knowledge like Isa alayhis salam) this means both will be humble in presence of Allah (subhana wa ta’ala) even though they know.This particular point requires a comprehensive article which probably will be ten page long and for that right now I don’t have time. But a outline of the explanation as already in the above response. All I will add is further evidence to establish that indeed Isa alayhis salam will know what his Ummah did after him. And Prophet sallalahu alayhi was’sallam does indeed know what his Ummah will do after him as well because the hadith establishes he came to know everything:

“[…] Then I saw Him put his palms between my shoulder blades till I felt the coldness of his fingers between the two sides of my chest. Then everything was illuminated for me and I recognized everything. He said: Muhammad! I said: At Thy service, my Lord. He said: What do these high angels contend about? I said: In regard to expiations. He said: What are these? […]” [Ref: Tirimdhi, Vol 5, Hadith No. 3246, Tafsir Surah S’ad]

“Narrated AbdurRahman ibn A’ish: Allah’s Messenger (peace be upon him) said: I saw my Lord, the Exalted and Glorious in the most beautiful form. He said: What do the Angels in the presence of Allah contend about? I said: Thou art the most aware of it. He then placed HIS PALM between my shoulders and I felt its coldness in my chest and I came to know what was in the Heavens and the Earth. He recited: ‘Thus did we show Ibrahim the kingdom of the Heavens and the Earth and it was so that he might have certainty.’ (6:75)” [Ref: Tirimdhi, Vol 5, Hadith No. 3245, Tafsir Surah S’ad]

This establishes that Prophet (sallalahu alayhi was’sallam) will indeed know but he will be humble in presence of Allah (subhana wa ta’ala) about his own knowledge as Isa alayhis salam was humble about his knowledge.
Mufti Ahmed Yar khan Naeemi (Rta) Says:

“Hadhir lughvi meaning is being present [infront another] meaning not being Ghayb. – Mutahi Alarb […] Nadhir has few meanings, Seer – one who sees, pupil [in the eye], sight, vain of nose [??], Cornea, – Al Masabih al Munir […] As far as we can see there we are Nadhir, and as far place our reach of hand is there we are Hadhir.To sky we can see to there we are Nadhir, but we are not Nadhir that far because its out of our hand reach. And which ever room, or house we are present there we are hazir because [the area of the house] is in our reach. In the world Hadhir Nadhir’s shar’ee meaning is that one with angelic power being stationed in one place can see the entire world like palm of his hand, and who can hear, sounds of distance and near or be able to travel anywhere on the earth in a instant. And provide for the hundereds of needy [people]. ” [Ja’al Haq Page 145 Zia al Quran publications]

[Courtesy: Mufti Akhter Raza khan (dba)]
Further you can read this discussion from this given link:

[Discussion on Hazir wa Nazir in English]

=====================
For Urdu Readers:
=====================

اہلسنت وجماعت کا عقیدہ ء حاضروناظر برائے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم یہ ہے کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے لیئے لفظ حاضر وناظر بولا جاتا ہے۔ اس کا یہ مطلب ہرگز نہیں ہے کہ آپ کی بشریت مطہرہ اور جسم خاص ہرجگہ ہرشخص کے سامنے موجود ہے بلکہ مقصد یہ ہے کہ سرکاردوعالم صلی اللہ علیہ وسلم اپنے مقام رفیع پر فائز ہونے کے باوجود تمام کائنات کو ہاتھ کی ہتھیلی کی طرح ملاحظہ فرماتے ہیں؛

نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم اپنی روحانیت کے اعتبار سے بیک وقت متعدد مقامات پر تشریف فرما ہوسکتےہیں اور اولیاء کرام بیداری میں آپ کے جمال اقدس کا مشاہدہ کرتے ہیں اور حضور صلی اللہ علیہ وسلم بھی انہیں نظر رحمت وعنایت سے مسرور ومحفوظ فرماتے ہیں۔ گویا حضور صلی اللہ علیہ وسلم کا اپنے غلاموں کے سامنے ہونا، سرکار کے حاضر ہونے کے معنی ہیں اور انہیں اپنی نظر مبارک سے دیکھنا حضور کے ناظر ہونے کا مفہوم ہے۔

ذیل میں اب ہم قرآنی آیات، اور انکی مستند تفاسیر کے ساتھ ساتھ سلف کے اقوال و احادیث سے اس عقیدہ کے تائید میں ثبوت پیش کریں گے۔

پہلا ثبوت ، سورۃ الاحزاب آیت ۴۶

يٰٓاَيُّهَا النَّبِيُّ اِنَّآ اَرْسَلْنٰكَ شَاهِدًا

ترجمہ: ( اے غیب کی خبریں بتانے والے (نبی) بیشک ہم نے تمہیں بھیجا حاضر ناظر (ف۱۱۰) اور خوشخبری دیتا اور ڈر سناتا (ف۱۱۱)

تفسیر خزائن العرفان ، نعیم الدین مرادآبادی میں اسی آیت کے ماتحت لکھا ہے؛

(ف110) شاہد کا ترجمہ حاضر و ناظر بہت بہترین ترجمہ ہے ، مفرداتِ راغب میں ہے ” اَلشُّھُوْدُ وَ الشَّھَادَۃُ الْحُضُوْرُ مَعَ الْمُشَاھَدَۃِ اِمَّا بِالْبَصَرِ اَوْ بِالْبَصِیْرَۃِیعنی شہود اور شہادت کے معنی ہیں حاضر ہونا مع ناظر ہونے کے بصر کے ساتھ ہو یا بصیرت کے ساتھ اور گواہ کو بھی اسی لئے شاہد کہتے ہیں کہ وہ مشاہدہ کے ساتھ جو علم رکھتا ہے اس کو بیان کرتا ہے ۔ سید عالم صلی اللہ علیہ وسلم تمام عالم کی طرف مبعوث ہیں ، آپ کی رسالت عامّہ ہے جیسا کہ سورہ فرقان کی پہلی آیت میں بیان ہوا تو حضور پُرنور صلی اللہ علیہ وسلم قیامت تک ہونے والی ساری خَلق کے شاہد ہیں اور ان کے اعمال و افعال و احوال ، تصدیق ، تکذیب ، ہدایت ، ضلال سب کا مشاہدہ فرماتے ہیں ۔ (ابوالسعود وجمل)
(ف111) یعنی ایمانداروں کو جنت کی خوشخبری اور کافروں کو عذاب جہنم کا ڈر سناتا ۔

اب ذرا آتے ہیں قدیم تفاسیر کی طرف

علامہ ابوالسعود اس آیت کی تفسیر میں لکھتے ہیں:۔

اے نبی ! ہم نے تمہیں ان لوگوں پر شاہد(حاضروناظر) بنا کر بھیجا جن کی طرف آپ مبعوث ہیں۔ آپ ان کے احوال واعمال کا مشاہدہ اور نگرانی کرتےہیں۔ آپ ان سے صادر ہونے والی تصدیق وتکذیب اور ہدایت وضلالت کے بارے میں گواہی حاصل کرتے ہیں اور قیامت کے دن ان کے حق میں یا ان کے خلاف جو گواہی آپ دیں گے مقبول ہوگی۔

محمد بن محمد العمادي الحنفي، قاضي القضاۀ،۹۰۰هجري.مکتبه الرياض الحديثه،الرياض جز ۴.صفحه۴۲۳ سورۀ الاحزاب

Scans:

علامہ اسماعیل حقی فرماتے ہیں:۔

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی تعظیم وتوقیر کا مطلب یہ ہے کہ اس ظاہر وباطن میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی سنت کی حقیقی پیروی کی جائے اور یہ یقین رکھا جائے کہ آپ موجودات کا خلاصہ اور نچوڑ ہیں۔ آپ ہی محبوب ازلی ہیں، باقی تمام مخلوق آپ کے تابع ہے اسی لیئے اللہ تعالیٰ نے آپ کو شاہد بنا کربھیجا۔

چونکہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم اللہ تعالیٰ کی پہلی مخلوق ہیں اس لیئے اللہ تعالیٰ کی وحدانیت اور ربوبیت کے شاہد ہیں اور عدم سے وجود کی طرف نکالی جانے والی تمام ارواح، نفوس، احرام وارکان، اجسام و اجساد، معدنیات ، نباتات، حیوانات، فرشتوں ، جنات، شیاطین اور انسانوں وغیرہ کے شاہد ہیں، تاکہ اللہ تعالیٰ کے افعال کے اسرار عجائب ِ صنعت اور غرائب قدرت میں سے جس چیز کا ادراک مخلوق کے لیئے ممکن ہو وہ آپ کے مشاہدہ سے خارج نہ رہے ، آپ کو ایسا مشاہدہ عطا کیا کہ کوئی دوسرا اس میں آپ کے ساتھ شریک نہیں ہے۔

اسی لیئے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا (علمت ماکان وما سیکون) (ہم نے جان لیا وہ سب کچھ جو ہوچکا اور جو ہوگا) کیونکہ آپ نے سب کا مشاہدہ کیا ۔ اور ایک لمحہ بھی غائب نہیں رہے، آپ نے آدم علیہ السلام کی پیدائش ملاحظہ فرمائی، اسی لیئے فرمایا؛ ہم اس وقت بھی نبی تھے جب کہ آدم علیہ السلام مٹی اور پانی کےدرمیان تھے، یعنی ہم پیدا کئے گئے تھے اور جانتے تھے کہ ہم نبی ہیں اور ہمارے لیئے نبوت کا حکم کیا گیا ہے جبکہ حضرت آدم علیہ السلام کا جسم اور ان کی روح ابھی پیدا نہیں کی گئی تھی ۔ آپ نے ان کی پیدائش ، اعزاز واکرام کا مشاہدہ کیا اور خلاف ورزی کی بنا پر جنت سے نکالا جانا ملاحظہ فرمایا؛

آپ نے ابلیس کی پیدائش دیکھی اور حضرت آدم علیہ السلام کو سجدہ نہ کرنے کے سبب اس پر جوکچھ گزرا ، اسے راءندہ درگاہ اور ملعون قراردیا گیا، سب کچھ ملاحظہ فرمایا، ایک حکم کی مخالفت کی بنا پر اس کی طویل عبادت اور وسیع علم رائگاں گیا۔ انبیاء ورسل اور ان کی امتوں پر وارد ہونے والے حالات کے علوم آپ کو حاصل ہوئے۔ “۔

تفسیرروح البیان ۔ جلد ۹ ، ص ۱۸

Scans:

علامہ سید محمود آلوسی رحمتہ اللہ علیہ اپنی شہرہ آفاق تفسیر روح المعانی میں رقمطراز ہیں:۔ کہ

بعض اکابر صوفیہ نے اشارہ کیا کہ اللہ تعالیٰ نے اپنے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو بندوں کے اعمال پر آگاہ کیا اور آپ نے انہیں دیکھا ، اسی لیئے آپ کو شاہد کہا گیا۔ مولانا جلال الدین رومی قدس سرہ نے فرمایا؛۔

درنظر بودش مقامات العباد
زاں سبب نامش خدا شاہد نہاد

یعنی؛ بندوں کے مقامات آپ کی نظر میں ہیں، اسی لیئے اللہ تعالیٰ نے آپ کا نام شاہد رکھا۔

علامہ سید محمود آلوسی رحمتہ اللہ تعالیٰ علیہ، تفسیر روح المعانی جلد ۲۲ ،صفحه ۴۵،احیاء دارالتراث العربی بیروت،لبنان

Scans:

 

ترجمہ؛ صفحات بر صفحہ 35 اور 36 علامہ سید محمود آلوسی اپنی تفسیر روح المعانی میں لکھتے ہیں؛

شیخ سراج الدین بن ملقن ، طبقات الاولیاء میں فرماتےہیں:۔

شیخ عبدالقادر جیلانی قدس سرہ نے فرمایا؛ مجھے ظہر سے پہلے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی زیارت ہوئی۔ آپ نے فرمایا ؛ بیٹا گفتگو کیوں نہیں کرتے؟ عرض کیا اباجان! میں عجمی ہوں ، فصحائے بغداد کے سامنے گفتگو کیسے کروں؟ فرمایا؛ منہ کھولو، میں نے منہ کھولا تو آپ نے سات مرتبہ لعاب دہن عطا فرمایا اورحکم فرمایا کہ لوگوں سے خطاب کرو۔ اور اپنے رب کے راستے کی طرف حکمت اور موعظہ حسنہ سے دعوت دو۔ میں نماز ظہر پڑھ کر بیٹھا ہوا تھا۔ مخلوقِ خدا بڑی تعداد میں حاضر تھی۔ مجھ پر اضطراب طاری ہوگیا۔ میں نے دیکھا کہ حضرت علی مرتضیٰ رضی اللہ عنہ مجلس میں میرے سامنے کھڑے ہیں اور فرما رہے ہیں بیٹے! خطاب کیوں نہیں کرتے؟ میں نے عرض کیاکیسے خطاب کروں؟ میری طبیعت پر تو ہیجان طاری ہے۔ فرمایا: منہ کھولو تو میں نے منہ کھولا، آپ نے مجھے چھ مرتبہ لعاب دہن عطا فرمایا۔ میں نے پوچھا کہ آپ نے سات کی تعداد کیوں نہیں پوری کی؟ تو آپ نے فرمایا ؛ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے احترام کے پیش نظر۔

دوسری جگہ علامہ لکھتے ہیں؛

طبقات الاولیاء میں شیخ خلیفہ بن موسیٰ نہرملکی کا تذکرہ کرتے ہوئے لکھا ہے:

انہیں خواب اور بیداری میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی بکثرت زیارت ہوتی تھی۔ ان کے بارے میں کہا جاتا تھا کہ ان کے اکثر افعال خواب یا بیداری میں نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے حاصل کیئے گئے تھے۔ ایک رات انہیں سترہ مرتبہ زیارت کی سعادت حاصل ہوئی۔ ان ہی مواقع میں سے ایک موقع پر ارشاد فرمایا؛ “خلیفہ ہم سے تنگ نہ ہو بہت سے اولیاء ہمارے دیدار کی حسرت لے کر دنیا سے رخصت ہوئگے”۔ (روح المعانی، جلد ۲۲ صفحہ ۳۵،۳۶

 مزید لکھتے ہیں:۔

شیخ تاج الدین بن عطاء اللہ، لطائف المنن میں فرماتے ہیں ؛ ایک شخص نے شیخ ابوالعباس مرسی سے عرض کیا؛ جناب آپ اپنے ہاتھ کے ساتھ مجھ سے مصافحہ فرمائیں، کیونکہ آپ نے بہت سے شہر دیکھے ہیں اور بہت سے اللہ والوں سے ملاقات کی ہے۔ انہوں نے فرمایا؛ اللہ تعالیٰ کی قسم! میں نے اس ہاتھ سے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے علاوہ کسی سے مصافحہ نہیں کیا۔

شیخ ابوالعباس مرسی نے فرمایا:

اگر ایک لمحہ کے لئے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم مجھ سے غائب ہوجائیں تو میں اپنے آپ کو مسلمان شمار نہ کروں۔ (روح المعانی صفحہ ۳۵

علامہ آلوسی بغدادی فرماتے ہیں؛

ہوسکتا ہے کہ حضرت عیسیٰ علیہ السلام کی نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے روحانی ملاقات ہو، اور یہ کوئی انہونی بات نہیں ہے، کیونکہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے وصال کے بعد اس امت کے ایک سے زیادہ کاملین کو بیداری میں آپ کی زیارت حاصل ہوئی اور انہوں نےاستفادہ کیا۔ (ایضاً صفحہ ۳۵ جلد ۲۲

Scans:

تقریباً یہی بات شاہ ولی اللہ دہلوی محدث نے لکھی ، وہ لکھتے ہیں کہ :۔

جب میں مدینہ منورہ میں داخل ہوا اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے روضہ مقدسہ کی زیارت کی تو آپ کی روح انور کو ظاہر وعیاں دیکھا ۔ فقط عالم ارواح میں نہیں بلکہ حواس کے قریب عالم مثال میں۔ تب مجھے معلوم ہوا کہ عوام الناس جو نمازوں میں نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے حاضر ہونے اور لوگوں کی امامت کرانے کا ذکر کرتےہیں اس کی بنیاد یہی دقیقہ ہے۔ ۔شاہ ولی اللہ دہلوی، فیوض الحرمین میں مزید لکھتے ہیں؛

پھر میں روضہ عالیہ مقدسہ کی طرف چند بار متوجہ ہوا۔ تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک لطافت کے بعد دوسری لطافت میں ظہور فرمایا، کبھی محض عظمت وہیبت کی صورت میں اور کبھی جذب، محبت ، انس اور انشراح کی صورت میں اور کبھی سریان کی صورت میں، یہاں تک کہ میں خیال کرتا تھا کہ تمام فضا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی روح مقدس سے بھری ہوئی ہے اور روح مبارک فضا میں تیز ہوا کی طرح موجزن ہے۔

آٹھویں، نویں، اور دسویں مشاہدات دیئے گئے سکینز میں پڑھ سکتے ہیں، اس سے چند مزید باتیں بھی ظاہر ہوتی ہیں جیسے کہ ، میلاد مصطفیٰ صلی اللہ علیہ وسلم منانا مدینہ کے لوگوں کا یعنی مسلمانوں کا معمول تھا اور درود وسلام پڑھنا بھی اجماع امت ہے، نیز مزارات پر حاضری دینا و فیوض و برکات کے بھی ثبوت موجود ہیں، نیز نا صرف یہ بلکہ شاہ ولی اللہ دہلوی کے بھی قول کے مطابق، اصحابِ نبی صلی اللہ علییہ وسلم ، ورضوان اللہ تعالیٰ علیہم اجمعین بھی حیات ہیں،اور ان سے بھی فیوض و برکات ملتے ہیں۔ یعنی جیسے شہید حیات ہے تو ظاہر ہے کہ درجہ بہ درجہ مقامات ہیں، شہداء پھر صالحین، صحابہ اور پھر انبیاء اور انبیاء سے بھی اعلیٰ ہمارے آقا صلی اللہ علیہ وسلم۔باقی جسمانی طور پر حیات بعد از مرگ صرف انبیاء کو عطا ہوتی ہے دیگر کسی کو نہیں۔اس پرمزید تفصیلات کے لیئے مین پیج سے حیات الانبیاء کے آرٹیکل کو پرھیئے۔

محدث شاہ ولی اللہ دہلوی، رحمتہ اللہ علیہ، فیوض الحرمین ، ناشر، دارالاشاعت، پاکستان

Scans:

 

علامہ عبدالرحمٰن سیوطی رحمتہ اللہ علیہ لکھتےہیں؛

امام عماد الدین اسماعیل بن ہبۃ اللہ ، اپنی تصنیف مزیل الشبہات فی اثبات الکرامات میں فرماتے ہیں کہ حضرت عثمان غنی رضی اللہ عنہ نے محاصرہ کے دنوں میں فرمایا؛ مجھے اس کھڑکی میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی زیارت ہوئی، فرمایا، ان لوگوں نے تمہارا محاصرہ کررکھا ہے ؟ عرض کی! جی ہاں ! آپ نے ایک ڈول لٹکایا جس میں پانی تھا، میں نے سیر ہوکر پانی پیا۔ یہاں تک کہ میں اس کی ٹھنڈک اپنے سینے اور دونوں کندھوں کے درمیان محسوس کررہا ہوں۔ پھر فرمایا؛۔اگرچاہو تو ان کے خلاف تمہیں مدد دیجائے اور اگرچاہوتوہمارے پاس افطار کرو۔ میں نے آپ کے پاس افطار کرنے کو ترجیح دی۔ چنانچہ اسی دن شہید کردیئے گئے۔

علامہ سیوطی رح فرماتے ہیں کہ یہ واقعہ مشہور ہے اور کتب حدیث میں سند کے ساتھ بیان کیا گیا ہے۔ امام حارث بن اسامہ نے یہ حدیث اپنی مسند میں اور دیگر ائمہ نے بھی بیان کی ہے۔ امام عمادالدین نے اسے بیداری کا واقعہ قرار دیا ہے۔

از۔ عبدالرحمٰن بن ابی بکر السیوطی الامام المحدث، الحاوی للفتاوی، جلد ۲ صفحه ۲۶۲ دارالکتب العلمیہ بیروت لبنان

اسی کتاب کے صفحہ ۲۵۶ پر امام سیوطی مزید لکھتے ہیں:۔

امام ابن ابی جمرہ فرماتے ہیں کہ بعض صحابہ (میراگمان ہے کہ وہ ابن عباس رضی اللہ عنہما ہیں، سیوطی) کو خواب میں نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی زیارت ہوئی، انہیں یہ حدیث یاد آئی (کہ جسے خواب مں زیارت ہوئی وہ بیداری میں بھی زیارت کرے گا) اور اس بارے میں غوروفکر کرتے رہے۔ پھر ایک ام المومنین (میراگمان ہے کہ حضرت میمونہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا، سیوطی) کے پاس حاضر ہوئے اور ماجرا بیان کیا۔ ام المومنین نے انہیں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کا آئنہ لاکردکھایا۔ صحابی کہتے ہیں کہ میں نے آئینہ دیکھا تو مجھے اپنی صورت نہیں، بلکہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی صورت مبارکہ دکھائی دی۔ (از صفحہ ۲۵۶ جلد ۲

امام جلال الدین سیوطی مزید صفحہ 256 پر یہ بھی تحریر کرتےہیں کہ ؛

اس کا مطلب یہ ہے کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا وعدہ شریفہ پورا کرنے کے لیئے خواب میں دیدار سے مشرف ہونے والوں کو بیداری میں دولتِ دیدار عطا کی جاتی ہے اگرچہ ایک مرتبہ ہی ہو۔

عوام الناس کو یہ دولت گراں مایہ دنیا سے رخصت ہوتے وقت حاصل ہوتی ہے، وہ حضرات جو پابند سنت ہوں انہیں ان کی کوشش اور سنت کی حفاظت کے مطابق زندگی بھر بکثرت یا کبھی کبھی زیارت حاصل ہوتی ہے، سنت مطہرہ کی خلاف ورزی اس سلسلے میں بڑی رکاوٹ ہے۔

آگے مزید لکھتے ہیں؛

امام مسلم حضرت عمران بن حصین، صحابی رضی اللہ عنہ سے روایت کرتے ہیں کہ مجھے سلام کہا جاتا تھا۔ میں نے گرم لوہے کے ساتھ داغ لگایا تویہ سلسلہ منقطع ہوگیا۔ اور جب یہ عمل ترک کیا تو سلام کا سلسلہ پھر جاری ہوگیا۔ علامہ ابن اثیر نے نہایہ میں فرمایا؛ فرشتے انہیں سلام کہتے تھے جب انہوں نے بیماری کی وجہ سے گرم لوہے سے علاج کیا تو فرشتوں نے سلام کہنا چھوڑ دیا کیونکہ گرم لوہے سے داغ لانا توکل، تسلیم، صبر اور اللہ تعالیٰ سے شفا طلب کرنے کے خلاف ہے، اس کا مطلب یہ نہیں ہے کہ داغ لگانا ناجائز ہے، ہاں! یہ توکل کے خلاف ہے جو اسباب کے اختیار کرنے کے مقابلے میں بلند درجہ ہے۔

از۔ (امام سیوطی الحاوی للفتاوی ۔ بیروت جلد 2۔ صفہ ۲۵۷۔)۔

 

Scans:

and:

More scans will be added soon on next update ,to be continued… 

مزید تحقیق جاری ہے۔۔۔۔۔۔ (ایڈمن مجذوب القادری، برائے مکاشفہ)۔

اپڈیٹ:تفسیر خازن اور معنی لفظِ شاھد

امام محی السنہ علاء الدین خازن رحمتہ اللہ تعالیٰ علیہ (متوفی ۷۴۱ھ) نے آیت میں لفظ شاھد کے بارے ایک تفسیر یہ بیان کی ہے،جسکی تصدیق امام نسفی نے بھی حاشیہ میں کی ہے۔

شاھدا علی الخلق کلھم یوم

آپ قیامت کے دن تمام مخلوق پر گواہ ہوں گے۔

تفسیر الخازن المسمی لباب التاویل فی معانی التنزیل ، تالیف الامام علاء الدین علی بن محمد بن ابراھیم البغدادی الصوفی،المعروف بالخازن، وبھامشہ تفسیر النسفی للامام ابی البرکات عبداللہ بن احمد بن محمود النسفی، مکتبہ ببغداد ص،۵۰۴/۵۰۵ طبع قدیم

Scans:

مشاہدہ اعمال: امام عبداللہ قرطبی باب ماجآء فی شھادۃِ النبی صلی اللہ علیہ وسلم علیٰ امتِہِ میں فرماتے ہیں؛

ابن مبارک فرماتےہیں کہ ہمیں ایک انصاری نے منہال ابن عمرو سے خبر دی کہ انہوں نے حضرت سعید بن مسیب رضی اللہ عنہ کو فرماتے ہوئے سنا کہ ہردن صبح وشام نبی اکرم صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم کی امت آپ کے سامنے پیش کی جاتی ہے، تو آپ انہیں ان کی علامتوں اور اعمال سے پہچانتے ہیں۔ اسی لیئے آپ ان کے بارے میں گواہی دیں گے، اللہ تعالیٰ فرماتا ہے (فکیف اِذَا جئنا من کل امتہِِ بشھید وجئنابک علیٰ ھٰؤلآءِ شھیدا

حوالہ؛ امام محمد بن احمد القرطبی ، التذکرۃ (المکتبۃ التوفیقیہ) ص ۳۳۹،ايضاً الجامع لاحکام القرآن،دارعالم الکتب للنشر والتوزيع، عبدالعزيز بن آل سعود صفحه ۱۹۸.سعودي عرب،وطبع بيروت جلد ۵، ص ۱۹۸.

Scans:

اسی تفسیر کی تائید میں اب ایک حدیثِ نبوی صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم بھی پڑھیں جس سے واضح ہوجاتا ہے کہ آقائے دوجہاں سرورکائنات صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم  نے خود کیا ارشاد فرمایا ہے۔یہی ہمارا سنیوں حنفیوں صوفیوں بریلیوں کا عقیدہ ہے جو کہ ۱۴۰۰ سال سے رائج چلا آرہا ہے ۔

حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم

نے فرمایا؛

ان اللہ قد رفع لی الدنیا انا انظر الیھا واِلیٰ ماھو کائن فیھا الیٰ یوم القیامۃ کانما انظر الیٰ کفی ھٰذہِ۔

یعنی۔ بے شک اللہ تعالیٰ نے میرے سامنے دنیا کو پیش فرما دیا۔ تو میں نے اسے اور اس میں قیامت تک ہونے والی چیزوں کو اس طرح دیکھتا ہوں جس طرح اپنی ہتھیلی کو دیکھتا ہوں۔

حوالہ؛ امام العلامۃ علاء الدین علی المتقی بن حسام الدین الہندی البرھان فوری المتوفی ۹۷۵ھ۔ جز۱۱صفحه ۳۷۸،طباعت، موسسۀ الرسالۀ بيروت

Scans:

اب ہم دوسری آیت قرآن سے اس عقیدہ کی بابت پیش کرتے ہیں۔ قرآن پاک کی سورۃ البقرۃ کیآیت ۱۴۳ میں اللہ رب العزۃ ارشاد فرماتا ہے؛

وَيَكُـوْنَ الرَّسُوْلُ عَلَيْكُمْ شَهِيْدًا 

ترجمہ(کنزالایمان

اور یہ رسول تمہارے نگہبان و گواہ (ف۲۵۹) ۔

دیوبندیوں کے مولانا اشرف علی تھانوی نے بھی اس آیت کی تفسیر کچھ ان الفاظ میں اپنی ترجمہ بیان القرآن میں کی ہے کہ لکھتے ہیں:۔

اور ہم نے تم کو ایک ایسی جماعت بنادیا ہے جو (ہر پہلو سے) نہایت اعتدال پر ہے تاکہ تم (مخالف) لوگوں کے مقابلہ میں گواہ ہو اور تمھارے لیے رسول الله صلی اللہ علیہ وسلم  گواہ ہوں 

ایک اور دیوبندی مولانا عاشق الٰہی میرٹھی نے بھی ایسا ہی ترجمہ وتفسیر کی ہے۔

تاکہ تم ہو جاؤ لوگوں پر گواہ اور ہو جائے رسول تم پر گواہ 

اس امت کی افضلیت کا ظہور میدان حشر میں اس طرح سے ہوگا کہ یہ امت تمام امتوں کے بارے میں گواہی دے گی اور رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم  اپنی امت کے بارے میں گواہی دیں گے کہ ہاں میری امت عدل ہے ثقہ ہے اس کی گواہی معتبر ہے۔

دوسری امتوں کے مقابلہ میں اس امت کی گواہی اور اس پر فیصلے:

حضرت ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم  نے ارشاد فرمایا کہ قیامت کے روز حضرت نوح علیہ السلام کو لایا جائے گا اور ان سے سوال ہو گا کہ تم نے تبلیغ کی؟ وہ عرض کریں گے کہ یا رب میں نے واقعتا تبلیغ کی تھی۔ ان کی امت سے سوال ہو گا کہ بولو انہوں نے تم کو احکام پہنچائے؟ وہ کہیں گے نہیں۔ ہمارے پاس تو کوئی نذیر (ڈرانے والا) نہیں آیا۔ اس کے بعد حضرت نوح علیہ السلام سے پوچھا جائے گا کہ تمہارے دعوے کی تصدیق کے لیے گواہی دینے والے کون ہیں؟ وہ جواب دیں گے کہ حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم اور ان کے امتی ہیں۔ یہاں تک بیان فرمانے کے بعد آنحضرت سید عالم  صلی اللہ علیہ وسلم  نے اپنی امت کوخطاب کرکے فرمایا کہ اس کے بعد تم کو لایا جائے گا اور تم گواہی دو گے کہ بے شک حضرت نوحp نے اپنی قوم کو تبلیغ کی تھی، اس کے بعد آنحضرت سید عالم  صلی اللہ علیہ وسلم نے آیت ذیل تلاوت فرمائی:

(وَ کَذٰلِکَ جَعَلْنٰکُمْ اُمَّۃً وَّسَطًا لِّتَکُوْنُوْا شُھَدَآءَ عَلَی النَّاسِ وَ یَکُوْنَ الرَّسُوْلُ عَلَیْکُمْ شَھِیْدًا)

’’اور اسی طرح ہم نے تم کو ایک جماعت بنا دیا ہے جو نہایت اعتدال پر ہے تاکہ تم دوسری امتوں کے لوگوں کے مقابلہ میں گواہ بنو، اور تمہارے لیے رسول  صلی اللہ علیہ وسلم  گواہ بنیں۔‘‘
یہ بخاری شریف کی روایت ہے۔ (ص ٦٤۵ ج ۲

اور مسند احمد وغیرہ کی روایات سے ظاہر ہوتا ہے کہ حضرت نوح علیہ السلام کے علاوہ دیگر انبیاء کرام علیہ السلام کی امتیں بھی انکاری ہوں گی اور کہیں گے کہ ہم کو تبلیغ نہیں کی گئی ان کے نبیوں سے سوال ہو گا کہ تم نے تبلیغ کی؟ وہ اثبات میں جوا ب دیں گے کہ واقعی ہم نے تبلیغ کی تھی۔ اس پر ان سے گواہ طلب کیے جائیں گے تو وہ حضرت محمد رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم  اور آپ کی امت کو گواہی میں پیش کریں گے۔ چنانچہ حضرت محمد رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم اور ان کی امت سے سوال ہوگا کہ اس بارے میں آپ لوگ کیا کہتے ہیں؟ وہ جواب میں عرض کریں گے کہ ہم پیغمبروں کے دعوے کی تصدیق کرتے ہیں۔ امت محمدیہ علی صاحبہا الصلوٰۃ والتحیۃ سے سوال ہو گا کہ تم کو اس معاملہ کی کیا خبر ہے؟ وہ جواب میں عرض کریں گے کہ ہمارے پاس ہمارے نبی تشریف لائے اور انہوں نے خبر دی کہ تمام پیغمبروں نے اپنی اپنی امت کو تبلیغ کی۔ (درمنثور ص ۱٤٤ ج ۱)۔ 

آیت کا عموم (لِتَکُوْنُوْا شُھَدَآءَ عَلَی النَّاسِ) بھی اس کو چاہتا ہے کہ حضرت نوح  کے علاوہ دیگر انبیاء کرام علیہ السلام کی امتوں کے مقابلوں میں بھی امت محمدیہ علی صاحبہا الصلوٰۃ والتحیۃ گواہی دے گی۔

صاحب روح المعانی لکھتے ہیں کہ بعض روایات میں یہ بھی وارد ہوا ہے کہ جب امت محمدیہ علی صاحبہا الصلوٰۃ والتحیۃ دوسری امتوں کے بارے میں گواہی دے گی کہ ان کے نبیوں نے ان کو تبلیغ کی ہے تو سیدنا حضرت محمد رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم  کو لایا جائے گا اور آپ سے آ پ کی امت کے بارے میں سوال کیا جائے گا کیا آپ کی امت عادل ہے گواہی کے لائق ہے؟ اس پر آپ ان کا تزکیہ فرمائیں گے کہ واقعی میری امت عدل ہے۔ گواہی کے لائق ہے اس کی گواہی معتبر ہے۔(ص ۵ ج ۲) بلاشبہ اس امت کا بڑا مرتبہ ہے اور بڑی فضیلت ہے جس کا میدان حشر میں تمام اولین و آخرین کے سامنے ظہور ہو گا۔یہ امت خیر الامم ہے اس کو افضل الانبیاء کی امت ہونے کا شرف حاصل ہے اور اس کو اللہ تعالیٰ نے سب کتابوں میں سے افضل کتاب عطا فرمائی جو اللہ کی کتاب ہی نہیں اللہ کا کلام بھی ہے جو چھوٹے بچوں تک کے سینوں میں محفوظ ہے اور صیغر و کبیر سب کے وردزباں ہے۔ اللہ تعالیٰ نے اس امت کو تمام بنی آدم سے منتخب فرمایا۔ سورہ حج میں ارشاد ہے۔

(وَ جَاھِدُوْا فِی اللّٰہِ حَقَّ جِھَادِہ ھُوَ اجْتَبٰکُمْ وَ مَا جَعَلَ عَلَیْکُمْ فِی الدِّیْنِ مِنْ حَرَجٍ مِلَّۃَ اَبِیْکُمْ اِبْرٰھِیْمَ ھُوَسَمّٰکُمُ الْمُسْلِمِیْنَ مِنْ قَبْلُ وَ فِیْ ھٰذَا لِیَکُوْنَ الرَّسُوْلُ شَھِیْدًا عَلَیْکُمْ وَ تَکُوْنُوْا شُھَدَآءَ عَلَی النَّاسِ) ’

’اور

اللہ کے کام میں خوب کوشش کیا کرو جیسا کہ کوشش کرنے کاحق ہے۔ اس نے تم کو منتخب فرمایا اور تم پر دین میں کسی قسم کی تنگی نہیں کی، تم اپنے باپ ابراہیم کی ملت پر قائم رہو اللہ نے تمہارا لقب مسلمان رکھا پہلے بھی اور اس (قرآن) میں بھی تاکہ تمہارے لیے رسول گواہ ہوں اور تم لوگوں کے مقابلہ میں گواہ بنو۔‘‘ 

تفسیر نعیم الدین مرادآبادی میں لکھا ہے؛

امت کو تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی اطلاع کے ذریعہ سے احوال امم و تبلیغ، انبیاء کا علم قطعی و یقینی حاصل ہے اور رسول کریم صلی اللہ علیہ وسلم بکرم الہٰی نور نبوت سے ہر شخص کے حال اور اس کی حقیقت ایمان اور اعمال نیک و بد اور اخلاص و نفاق سب پر مطلع ہیں

مسئلہ : اسی لئے حضور کی شہادت دنیا میں بحکم شرع امت کے حق میں مقبول ہے یہی وجہ ہے کہ حضور نے اپنے زمانہ کے حاضرین کے متعلق جو کچھ فرمایا مثلاً: صحابہ و ازواج و اہل بیت کے فضائل و مناقب یا غائبوں اور بعد والوں کے لئے مثل حضرت اویس و امام مہدی وغیرہ کے اس پر اعتقاد واجب ہے

مسئلہ : ہر نبی کو ان کی امت کے اعمال پر مطلع کیا جاتا ہے تاکہ روز قیامت شہادت دے سکیں چونکہ ہمارے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی شہادت عام ہوگی اس لئے حضور تمام امتوں کے احوال پر مطلع ہیں فائدہ یہاں شہید بمعنی مطلع بھی ہوسکتا ہے کیونکہ شہادت کا لفظ علم وا طلاع کے معنی میں بھی آیا ہے ۔ (وَاللّٰهُ عَلٰي كُلِّ شَيْءٍ شَهِيْدٌ  58- المجادلة:6)۔

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے حاضروناظر ہونے پر مزید قرآنی آیات یہ ہیں۔

پارہ ۲ سوره بقرۀ آيت نمر ۱۴۳
پاره ۵ سوره ۴ آيت نمبر ۴۱

ان کے علاوه پاره ۱۱ سوره ۹ آيت نمبر ۱۲۸ جسکا ترجمه کچھ یوں ہے

ترجمہ: بے شک تمہارے پاس تشریف لائے تم میں سے وہ رسول جن پر تمہارا مشقت میں پڑنا گراں ہے۔ (پارہ ۱۱ سوره ۹ آيت نمبر ۱۲۸

اس آیت میں تین طرح حضور صلی اللہ علیہ وسلم کا حاضر ناظر ہونا ثابت ہوتا ہے ایک یہ کہ جاءکم میں قیامت تک کے مسلمانوں سے خطاب ہے کہ تم سب کے پاس حضور علیہ السلام تشریف لائے جس سے معلوم ہوا کہ نبی علیہ السلام ہرمسلمان کے پاس ہیں اور مسلمان تو عالم میں ہرجگہ ہیں توحضور بھی ہرجگہ موجود ہیں۔ دوم یہ فرمایا گیا (من انفسکم ) تمہاری نفسوں میں سے ہیں۔ یعنی ان کا آنا تم میں ایسا ہے جسیے جان کا قالب میں آنا کہ قالب کے رگ رگ اور رونگٹے میں موجود اور ہرایک سے خبردار رہتی ہے۔ ایسے ہی حضور صلی اللہ علیہ وسلم ہرمسلمان کے ہرفعل وعمل سے خبردار ہیں۔

اگر اس آیت کے صرف یہ معنی ہوتے کہ وہ تم میں سے ایک انسان ہیں تو منکم کافی تھا من انفسکم کیوں ارشاد ہوا؟۔ تیسرے یہ کہ عزیز علیہ ما عنتم ۔ یعنی ان پر تمہارا مشقت میں پڑنا گراں ہے۔ جس سے معلوم ہوا کہ ہماری راحت وتکلیف کی ہروقت حضور کو خبر ہے تب ہی تو ہماری تکلیف سے قلب مبارک کو تکلیف ہوتی ہے ورنہ اگر ہماری خبر ہی نہ ہوتوتکلیف کیسی؟ یہ کلمہ بھی حقیقت میں انفسکم کابیان ہے کہ جس طرح جسم کے کسی عضو کودکھ ہو تو روح کو تکلیف اسی طرح تم کو دکھ درد ہو تو آقا کو گرانی ہوتی ہے۔

اسی طرح قرآن میں (پارہ ۵ سوره ۴ آيت نمبر ۶۴)۔ کہتی ہے !۔

اور اگر جب وہ اپنی جانوں پر ظلم کریں تو اے محبوب تمہارے حضور حاظر ہوں پھر اللہ سے معافی چاہیں اور رسول ان کی شفاعت فرماویں، توضرور اللہ کو بہت توبہ قبول کرنے والا مہرباں پائیں۔

اس سے معلوم ہوا کہ گنہگاروں کی بخشش کی سبیل صرف یہ ہے کہ حضور علیہ السلام کی بارگاہ میں حاضر ہوکر شفاعت مانگیں۔ اور حضور کرم کریمانہ سے شفاعت فرمادیں۔ اور یہ تو مطلب ہو سکتا نہیں کہ مدینہ پاک میں حاضر ہوں۔ ورنہ پھر ہم فقیر پردیسی گنہگاروں کی مغفرت کی کیا سبیل ہوگی۔ اور مالدار بھی عمر میں ایک دوبار ہی پہنچتے ہیں اور گناہ دن رات کرتےہیں۔ لہٰذا تکلیف مافوق الطاقت ہوگی لہٰذا مطلب یہ ہوا کہ وہ تمہارے پاس موجود ہیں تم غائب ہو تو تم بھی حاضر ہوجاؤ کہ ادھر متوجہ ہوجاؤ۔

اسی طرح سورہ الحج کی آیت ۱۰۷ بھی کہ جو کہتی ہے (اور ہم نے تم کو نہ بھیجا مگر رحمت سارے جہان کے لیئے

پھر قرآن میں فرمایا جاتا ہے؛

ورحمتی وسعت کل شیئ۔ یعنی اور میری رحمت ہرچیز کو گھیرے ہے۔ پارہ ۹ سورہ ۷ آیت ۱۵۶۔

معلوم ہوا کہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم چونکہ تمام جہانوں کے لیئے رحمت ہیں۔ اور رحمت جہانوں کو محیط ہے۔ لہٰذا حضور صلی اللہ علیہ وسلم جہانوں کو محیط، خیال رہے کہ رب کی شان ہے رب العٰلمین، حبیب کو رتبہ دیا جارہا ہے رحمۃ اللعالمین ۔ معلوم ہوا کہ اللہ جس کا رب ہے۔ حضور صلی اللہ علیہ وسلم اس کے لیئے رحمت ۔

اسی طرح ایک اور قرآنی حوالہ ہے (پارہ ۹ سورہ ۸ آیت نمبر ۳۳) کہ لکھا ہے؛

اور اللہ کا کام نہیں کہ عذاب کرے جب تک اے محبوب تم ان میں تشریف فرما ہو۔

یعنی عذابِ الٰہی اسلیئے نہیں آتا کہ ان میں آپ موجود ہیں اور عام عذاب تو قیامت تک کسی جگہ بھی نہ آئے گا۔جیسا کہ روح البیان میں فرمایا ہے کہ حضور علیہ السلام ہرسعید وشقی کے ساتھ رہتے ہیں۔

مزید حوالہ جات؛

پارہ ۲۶ سورہ ۴۹ آیت نمبر ۷۔

پارہ ۷ سورہ ۶ آیت ۷۵۔

پارہ ۳۰ سورہ الفیل آیت نمبر ۱۔

پارہ ۳۰ سوره ۹ آیت نمبر ۶۔

پارہ ۷ سورہ الانعام آیت نمبر ۶۔

پارہ ۲۱ سورہ ۳۳ آیت نمبر ۶۔

یہاں ہم قرآنی حوالوں کا اختتام کرتےہیں۔ آگے احادیث وغیرہ سے روشنی ڈالی جائے گی۔

اپڈیٹ اختتام۔مجذوب القادری

اپڈیٹ ۔شروعات، مجذوب القادری۱۲ مارچ  ۲۰۱۵۔

احادیث

مشکوٰۃ باب اثبات عذاب القبر میں ہے؛

فیقولان ما کنت تقول فی ھذا الرجل (لمحمد)۔
یعنی؛ نکرین پوچھتے ہیں کہ تم ان کے (محمد صلی اللہ علیہ وسلم) کے بارے میں کیا کہتے تھے۔

حوالہ جات؛

مشکوٰۃ اثبات عذاب القبر الفصل الثانی ص ۲۵ مطبوعہ نورمحمد کتب خانہ کراچی پاکستان
صحیح مسلم کتاب الجنۃ وصفۃ نعیمھا باب عرض مقعد لمیت من الجنۃ اوالنارعلیہ واثبات عذاب القبر والتعوذ منہ ج ۴ صفحہ ۲۲۰۰ رقم الحدیث ۲۸۷۰ مطبوعہ داراحیاء التراث العربی بیروت

اسی ملتے جلتے متن کی حدیث اہل حدیث کے علامہ وحید الزماں کی مسلم شریف کے باب جنت کا اور جنت کے لوگوں کا بیان میں حدیث ۷۲۱۶ بھی ہے اور مشکوٰۃ المصابیح تالیف محمد بن عبداللہ الخطیب التبریزی، جبکہ تحقیق محمد ناصر الدین البانی الجزء الاول ، طبع المکتب الاسلامی کے کتاب نمبر ۵ کتاب الجنائز، کے باب ۳ مایقال عند من حضرہ الموت، کی حدیث ۱۶۳۰ میں بھی موجود ہے۔

اشعۃ اللمعات میں اسی حدیث کے ماتحت درج ہے جسکا ترجمہ کچھ یوں ہے ؛۔

یا قبر میں ظاہر ظہور آپ کی ذات شریف کو کرتے ہیں اس طرح کہ قبر میں حضور صلی اللہ علیہ وسلم کا وجود مثالی موجود کردیتے ہیں اور اس جگہ مشتاقان غمزدہ کو پڑی خوشخبری ہے کہ اگر اس شادی (خوشی) کی امید پر جان دے دیں اور زندہ قبروں میں چلے جائیں تو اس کا موقعہ ہے۔ (اشعۃ اللمعات جلد ۱ صفحہ ۱۱۵ مطبوعہ لکھنئو ہند)۔

حضور صلی اللہ علیہ وسلم چونکہ حیات ہیں اور یہی عقیدہ اسلام ہے اسی لیئے اس کے ثبوت میں یہ تاریخی شواہد اور احادیث بکثرت ہیں جن میں سے کچھ یہاں حوالوں کے ساتھ تحیری کی جارہی ہیں۔ جیسے کہ سیکڑوں میں دور غزوہ موتہ کے حالات صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کو بتانے۔مثال کے طور پر:۔

امام ابوعبداللہ محمد بن اسماعیل بخاری متوفی ۲۵۶ھ روایت کرتے ہیں:۔

عن انس رضی اللہ عنہ ان النبی انعی زیدا او جعفرا وابن رواحۃ للناس قبل ان یاتیھم خبرھم فقال اخذ الرایۃ زید فاصیب ثم اخذ جعفر فاصیب ثم اخذ ابن رواحۃ فاصیب عیناہ تذر فان حتی اخذ الرایۃ سیف من سیوف اللہ یعنی حتی فتح اللہ علیھم۔

ترجمہ؛ حضرت انس رضی اللہ عنہ فرماتےہ یں کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے حضرت زید، حضرت جعفر اور حضرت ابن رواحہ کی خبر آنے سے پہلے ان کے شہید ہوجانے کے متعلق لوگوں کو پہلے ہی بتادیاتھا۔ چنانچہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ اب جھنڈا زید نے سنبھالا ہوا ہے لیکن وہ شہید ہوگئے۔ پھر جعفر نے جھنڈا سنبھال لیا، تو وہ بھی شہید ہوگئے۔ پھر ابن رواحہ نے جھنڈا سنبھالا ہے اور وہ بھی جام شہادت نوش کرگئے۔یہ فرماتے ہوئے آپ کے چشمان مبارک اشک بار تھیں یہاں تک کہ اللہ تعالیٰ کی تلواروں میں سے ایک تلوار (یعنی حضرت خالد بن ولید رضی اللہ عنہ) نے جھنڈا سنبھال لیا ہے اور اس کے ہاتھوں اللہ تعالیٰ نے کافروں پر فتح مرحمت فرمادی۔

حوالہ جات؛۔

صحیح البخاری جلد۲ ص ۲۱۱ مطوبعه قديمي کتب خانه کراچي
مجمع الزوائد ج ۲ ص ۱۶۰
سنن الکبري جلد ۸ ص ۱۵۴.
دلائل النبوه بيهقي باب ماجا في غزوۀ موتۀجلد ۴ ص ۳۶۵/۳۶۶ دارالکتب العلميه بيروت.
سبل الهدي والرشاد جلد ۱۰ ص ۶۴ دارالکتب العلميه بيروت.
حجۀ الله علي العالمين في معجزات سيدالمرسلين ص ۳۴۴ دارالکتب العلميه بيروت.
المعجم الکبير للطبراني جلد ۲ ص ۱۰۵ رقم الحديث ۱۴۵۹ مکتبه العلوم والحکم موصل.
انان العيون في سيرۀ الامين المامون المعروفته بالسيرۀ الحلبيه جلد ۳ ص ۶۷ دار احيا التراث العربي بيروت.
نسيم الرياض في شرح الشفا قاضي عياض، جلد ۴ ص ۲۰۱ دارالکتب العلميه بيروت.
الشفا بتعريف حقوق المصطفي جلد ۱ ص ۲۱۰ دارالکتب العلميه بيروت.
تاريخ الامم والملوک المعروف تاريخ الطبري جلد ۲ ص ۱۵۱ دارالکتب العلميه بيروت.
شرح العلامه الزرقاني علي الموهب اللدنيۀ جلد ۷ ص ۲۰۹ دارالمعرفته بيروت.
الوفا باحوال المصطفي الباب الخامس عشر في اخبار رسول الله بالغائبات جلد ۱ ص ۳۱۴ مصطفي البابي مصر.
کنز العمال جلد ۱۱ ص ۳۶۷ و ۳۶۸ رقم الحديث ۳۱۷۶۴ موسسته الرسالۀ بيروت.
خصائص الکبري باب ماوقع في غزوۀ الموتته من الآيات والمعجزات ج ۱ ص ۴۳۰،۴۳۱ دارالکتب العلميه بيروت.
الاحاديث المختارۀ ج ۹ ص ۱۶۲ و ۱۶۳ حديث ۱۳۸/۱۳۹ مکتبته النهضته الحديثه مکه مکرمه.
ذخائر العقبي في مناقب ذوي القربي ذکر ماجاانه يطير بجتاحين مع الملائکته في الجنته ص ۲۱۸ دارالکتب المصريۀ.
اعلام النبوۀ الباب العاشر ص ۱۵۷ دارالکتاب العربي بيروت.
تخريج الدلالات المعيته ص ۳۷۴ دارالغرب الاسلامي بيروت.
انسان العيون، سيرت حلبيه، جلد ۲ ص ۷۹۰ دارالمعرفته بيروت.
صفوۀ الصفوۀ لابن جوزي ذکروفاته جعفربن ابي طالب رضي الله عنه جلد ۱ ص ۵۱۹ دارالمعرفته بيروت.
التذکرۀفي احوال الموتي وامورالآخرۀ للقرطبي باب ماجا ان عيسي جلد۲ ص ۵۶۸/۵۶۹ مطبوعه سعيديه کتب خانه صدف پلازه محله جنګي پشاور(پيښور).خ
حليته الاوليا وطبقات الاصفيا،ذکر عبدالله بن رواحۀ الانصاري جلد ۱ ص ۱۲۰ دارالکتاب العربي بيروت لبنان.

یعنی ثابت ہوا کہ بہ وقت شہادت ، بلکہ اس سے بھی کئی پہلے آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے پیشنگوئی فرمادی تھی جیسے کہ علم الغیب کے موضوع پر ہم نے لکھا تھا،یہ حدیث بالوقت حدیث ہے، یعنی عین اس وقت جب یہ واقعات رونما ہورہے تھے آپ صلی اللہ علیہ وسلم، اللہ کی عطا سے غیب سے یہ سب ملاحظہ فرما رہے تھے ، اور یاد رہے کہ یہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی حیاتِ مبارکہ کے دوران سب کچھ ہوا۔آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا ملاحظہ فرمانا بالکل اسی حدیث کی نشاندہی ہے جو کہ ہم احناف سنی حنفیوں شافعیوں مالکیوں اور حنبلیوں کا عقیدہ بھی ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم قبرمبارک میں بھی امت اور دیگر امتوں کو ایسے دیکھ رہے ہیں اور احوال پر مطلع ہیں کہ جیسے کوئی اپنے ہاتھ کی ہتھیلی دیکھا کرتا ہے۔اور یہی امتِ مسلمہ اہلسنت وجماعت کا عقیدہ ء حاضروناظر برائے رسول ِ پاک صلی اللہ علیہ وسلم ہے جس پر کچھ نادان لوگ اپنی ناسمجھی کم علمی میں بہتان تراشی کے باعث اپنی اور دوسروں کی عاقبت کو برباد کر کے تفریق کا بیج بوتے ہیں۔

حدیث نمبر ۲:۔

امام جلال الدین سیوطی رحمتہ اللہ علیہ متوفی ۹۱۱ ھ روایت کرتے ہیں؛۔

عربی کے لیئے سکینز دیکھئے ، ترجمہء حدیث؛

موسی ابن عقبہ بن شہاب زہری سے نقل کرتے ہیں کہ علمائے سیرت کا بیان ہے کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا؛ جعفر بن ابی طالب رضی اللہ عنہ فرشتوں کے جھرمٹ میں اڑتے ہوئے گزرے ہیں ان کے دوپر تھے۔ وہ کہتے ہیں کہ یعلیٰ بن منبہ شہیدانِ موتہ کی خبر لے کرنبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں آئے تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان سے فرمایا؛ چاہو تو تم مجھے خبردو یا تمہیں پسند ہو تو میں وہاں کے حالات بیان کروں، یعلیٰ بولے یارسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم آپ ہی ان کے حالات ارشاد فرمادیں تو نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے غزوہ موتہ کے تمام حالات اور شہیدوں کے واقعات بیان کردیئے۔ یہ سن کر یعلیٰ کہنے لگے ؛ اُس ذات کی قسم جس نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو حق کے ساتھ مبعوث فرمایا آپ نے غزوہ موتہ کی کہانی کا ایک حرف تک نہیں چھوڑا بلکہ پورا واقعہ حرف بحرف بیان فرمادیا ہے۔ حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا؛ دراصل اللہ نے زمین اٹھا کر میرے سامنے رکھ دی یہاں تک کہ میں نے لڑائی کا پورا منظر بچشمِ خود دیکھا ہے۔

امام محدث جلال الدین السیوطی رحمتہ اللہ علیہ، خصائص الکبریٰ جلد ۱، باب ما وقع فی غزوۃ موتۃ صفحات،۴۳۱۰/۴۳۱ دارالکتب العلمیہ بیروت۔

مزید حوالہ جات؛

دلائل النبوۃ بیہقی ، جلد ۴ ص ۳۶۵/۳۶۴ دارالکتب العلمیہ بیروت
حجۃ اللہ علی العالمین فی معجزات سید المرسلین ص ۳۴۵ دار الکتب العلمیہ بیروت
انسان العیون فی سیرۃ الامین المامون، سیرۃ الحلبیہ، جلد ۲ ص ۷۹۰ دارالمعرفۃ بیروت
زادالمعاد فی ھدی خیرالعباد فصل فی غزوۃ موتۃ جلد ۳ ص ۳۸۵ موسسۃ الرسالۃ بیروت
الاکتفاء بما تضمہ من مغازی رسول اللہ والثلاثۃ الخلفاء غزوہ موتۃ من ارض الشام جلد۲ص ۲۰۹ عالم الکتب بیروت
السیرۃ النبویہ غزوۃ موتۃ جلد ۳ ص ۴۴۴ دارالکتاب العربی بیروت

حدیث نمبر ۳

مشہور امام اور مؤرخ علامہ امام محمد بن سعد المعروف ابن سعد متوفی ۲۳۰ھ لکھتے ہیں؛۔

عربی عبارت سکینز میں دیکھئے؛ ترجمہ:

حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ تم نے میری جو حالت دیکھی یہ ہے کہ مجھے میرے اصحاب کے قتل نے غمگین کردیا یہاں تک کہ میں نے انہیں اس طرح جنت میں دیکھ لیا کہ وہ بھائی بھائی ہیں آمنے سامنے تختوں پر بیٹھے ہیں ان میں سے ایک میں نے کسی قدر اعتراض (روگردانی) کودیکھا گویا انہیں تلوار ناپسند ہے میں نے جعفر کو دیکھا کہ وہ ایک فرشتے ہیں جن کے دوبازو ہیں جو خون میں رنگے ہیں اور ج کے قدم بھی رنگے ہوئے ہیں۔

از کتاب الطبقات الکبیر ، لمحمد بن سعد بن منیع الزھری متوفی ۲۳۰ھ، جز ء ۲، صفحہ ۱۲۱، مکتبۃ الخانجی بالقاھرۃ

دیگر حوالہ جات؛۔

طبقات الکبری ابن سعد، جلد ۲ ص ۱۳۰ دار صادر بیروت ایڈیشن
ذخائر العقبی فی مناقب، ص ۲۱۶ دارالکتب المصریۃ
المعجم الکبیر طبرانی جلد ۲ ص ۱۰۷ حدیث ۱۴۶۶ مکتبۃ العلوم والحکم موصل
الکامل فی ضعفاء الرجال جلد ۱ ص ۲۴۰ دارالفکر بیروت
السیرۃ النبویۃ ذکر جعفر بن ابی طالب ج ۳ ص 458 دارالکتاب العربی بیروت
الجامع الصغیر فی احادیث البشیر النذیر حرف الراء ، ج ۱ ، ص 268 ،ح؛ ۴۳۸۳ دارالکتب العلمیہ بیروت
الفتح الکبیر فی ضم الزیادۃ الی الجامع الصغیر، ج ۲ ، ص ۱۲۱ رقم الحدیث ۶۵۰۷۔موسسۃ الرسالۃ بیروت
الاصابۃ فی تمیز الصحابۃ ذکر جعفر بن ابی طالب رض،ج۱،ص ۴۸۷ برقم ۱۱۶۸ مطبوعہ دارالجیل بیروت
الاستیعاب فی معرفۃ الاصحاب ، ج ۱، ص ۲۴۴ دار الجیل بیروت
سیر اعلام النبلاء ، ج ۱ ص۲۱۲ موسسۃ الرسالۃ بیروت

اپڈیٹ اختتام؛

اپڈیٹ شروعات ؛ ۶ اپريل  ۲۰۱۵
علامہ بدرالدین عینی فرماتے ہیں؛
ارباب معرفت کے طریقے پر کہا جاسکتا ہے کہ جب نمازیوں نے التحیات کے ذریعے ملکوت کا دروازہ کھولنے کی درخواست کی تو انہی کی لایموت کے دربار میں حاضر ہونے کی اجازت دے دی گئی۔ مناجات کی بدولت ان کی آنکھیں ٹھنڈی ہوئیں، انہیں آگاہ کیا گیا، کہ یہ سعادت نبی رحمت صلی اللہ علیہ وسلم اور آپ کی پیروی کی برکت سے ہے۔ اچانک انہوں نے توجہ کی تو پتہ چلا کہ (الحبیبُ فی حرمِ الحبیبِ حاضر) محبوب کریم، رب کی بارگاہ میں حاضر ہیں۔ تو (السلامُ علیک ایھا النبی ورحمۃ اللہ وبرکاتہ) کہتے ہوئے آپ کی طرف متوجہ ہوگئے۔
حوالہ ؛ عمدۃ القاری شرح صحیح البخاری ، امام العلامۃ بدرالدین ابی محمد محمود بن احمد العینی ۔ جلد ۵ دارالکتب العلميه بيروت، ص ، ۱۵۹/۱۶۰
مزيد حواله جات؛
احمد بن علي بن حجر عسقلاني الامام، فتح الباري ، احيا التراث العربي بيروت، جلد ۲ ص ۲۵۰
محمد بن عبدالباقي ، زرقاني علامه، شرح مواهب لدنيه جلد ۷ ص ۳۷۷.۷۸
زرقاني علي الموطا المکتبه التجاريه مصر. جلد ۱ س ۱۹۰
محمد بن عبدالحئي لکهنوي، علامه، السعايه في کشف شرح الوقايه لاهورجلد ۲ س ۲۷۷
شيخ عبدالحق محدث دهلوي اشعته اللمعات مطبوعه سکهر جلد ۱ س ۴۰۱
نورالحق المحدث دهلوي تيسير القرآن، شرح صحيح البخاري طبع لکهنو جلد ۱ ص ۱۷۲/۱۷۳
نواب صديق حسن قنوجي بهوپالي، مسک الختام شرح بلوغ المرام جلد ۱ ص ۲۴۴
یعنی۔ جب نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم اور تمام نیک بندوں پر سلام بھیجا جاتا ہے نماز میں تو، یہ خیال ہرگز نہ کیا جائے کہ ہمارا سلام نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کو نہیں پہنچتا ۔ محض خیالی صورت سامنے رکھ کر سلام عرض کیا جارہا ہے۔ کیونکہ امام بخاری کی جلد 1 ص 115 مطبوعہ رشیدیہ دہلی کی حدیث کے مطابق جب ہرنیک بندے کو سلام پہنچتا ہے تو اللہ تعالیٰ کے حبیب اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کو کیوں نہیں پہنچتا؟
اس جگہ سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ روش کلام کے مطابق غائب کا صیغہ السلام علی النبی لانا چاہیئے تھا، خطاب کا صیغہ (السلام علیک ایھا النبی) کیوں لایا گیا؟ علامہ طیبی نے جواب دیا کہ ہم ان کلمات طیبہ کی پیروی کرتےہیں جو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے صحابہ کرام کو سکھائے۔اور دوسرا جواب ہم علامہ بدرالدین عینی کے حوالے سے اوپر بیان کرچکے ہیں سکین کے ساتھ۔
علامہ عبدالحئی لکھنوی ، علامہ بدرالدین عینی رحمتہ اللہ علیہ کا قول لکھ کر اپنی کتاب الساعیہ فی کشف شرح الوقایہ سہیل اکیڈمی لاہور جلد 2 ص 227 پر لکھتے ہیں:
میرے والد علام اور استاذ جلیل (علامہ عبدالحکیم لکھنوی) اپنے رسالہ “نورالایمان بزیارۃ آثار حبیب الرحمٰن” میں فرماتے ہیں کہ التحیات میں صیغہ خطاب (السلامُ علیک ایھا النبی) لانے کا راز یہ ہے۔ کہ گویا حقیقت محمدی ہروجود میں جاری وساری اور ہربندے کے باطن میں حاضر ہے۔ اس حالت کا کامل طور پر انکشاف نماز کی حالت میں ہوتا ہے، لہٰذا محلِ خطاب ہوگیا”۔
تو اے مسلمانو! جب نبی کریم علیہ الصلوٰۃ والسلام کی حقیقتِ محمدیہ جو کہ موجودات کے ذروں اور افراد ممکنات میں جاری وساری ہے جو نمازیوں کی ذات میں موجود اور حاضر ہے۔ تو پھر نبی کریم علیہ الصلوٰۃ والتسلیم کو حاضر ناظر ماننے میں کیا موت ہے کچھ بے دینوں کو؟ یہی بات خود غیرمقلدین کے نواب صدیق حسن بھوپالی نے مسک الختام شرح بلوغ المرام جلد 1 ص 244 میں بھی درج کی ہے تو کیا صدیق حسن بھوپالی بھی مشرک ہوگیا؟

 

اپڈیٹ اختتام ؛ (ایڈمن، ضرب حق)۔

اپڈیٹ؛ (بشکریہ ایڈمن مجذوب

بعض معترضین یہ سوال اٹھاتے ہیں کہ تشہد سے حاضر و ناظر کے عقیدہ پر استدلال صحیح نہیں ہے کیونکہ حضرت عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ ہم نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی ظاہری حیات میں یہ التحیات پڑھا کرتے تھے۔ آپ کے وصال کے بعد ہم السلام علی النبی پڑھنے لگے۔ اس کا جواب ہم سنیوں کے عظیم امام حضرت امام مُلا علی قاری الحنفی الھروی المکی رحمتہ اللہ علیہ کی زبانی دے رہے ہیں وہ شرح مشکوٰۃ شریف میں فرماتے ہیں:

حضرت عبداللہ بن مسعود کا یہ فرمانا کہ ہم رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی حیاتِ ظاہرہ میں (السلامُ علیک ایھا النبی) پڑھا کرتے تھے، جب آپ کا وصال مبارک ہوگیا تو ہم (السلام علی النبی) کہتے تھے۔ یہ امام ابوعوانہ کی روایت ہے، امام بخاری کی روایت اس سے زیادہ صحیح ہے جس سے معلوم ہوتا ہے کہ یہ حضرت ابن مسعود رضی اللہ عنہ کے الفاظ نہیں ہیں، بلکہ ان کے شاگردوں نے جو کچھ سمجھا وہ بیان کردیا۔

امام بخاری کی روایت میں ہے : فلما قبض قلنا السلام یعنی علی النبی ، جب نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا وصال ہوگیا تو ہم نے کہا کہ السلام یعنی نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم پر (لفظ یعنی بتارہا ہے کہ بعد میں کسی نے وضاحت کی ہے) اس قول میں دو احتمال ہیں:

اول؛۔ یہ کہ جس طرح نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی ظاہری حیات میں بصیغہ خطاب سلام کرتے تھے ۔ اسی طرح وصال کے بعد کہتے رہے

دوئم؛۔ ہم نے خطاب چھوڑ دیا تھا۔ جب لفظوں میں متعدد احتمال ہیں تو دلالت (قطعی) نہ رہی، اسی طرح علامہ ابن حجر نے فرمایا۔” (اختتام)

علی بن سلطان محمد القاری، العلامہ؛ المرقاۃ شرح مشکاۃ جز الثانی ، ۲ ص ۵۸۱ دارالکتب العلميه بيروت لبنان.

اپڈیٹ اختتام

 

Advertisements

2 thoughts on “Hazir wa Naazir [from Quran Sunnah and Salaf] [Ar/Ur/En]”

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s