Anecdotes from Salaf (English / Urdu)


The Talking Camel:

03d8ac3a680b91a04e48361718e5496d

Abu’l Qaasim Tabrani has narrated this riwayah from Zaid bin Thabit (rd) in his book Kitab al Da’waat that, “We fought along with the Prophet Sal Allaho Alaihi Wasalam, until we enter during combat inside the streets of Madinah, we were gathering there and we saw a villager who came towards us and was having a rope of a camel in his hands. He reached towards Prophet Sal Allaho Alaihi Wasalam and paused there, we were also around the Prophet Alaihi Salam, so he said: “Asalamu Alayika Ayuhan Nabiyo” (Peace be upon you O Prophet of Allah) wa Rahmatullahi Wa Barakatu, So You Alaihi Salam answered him and said: “Kaifa Ashabat” “How’s your day going on”. Then one person came who was looking like a guard (night-watcher), upon his reaching, he said O Prophet of Allah Sal Allaho Alaihi Wasalam this villager has stolen my camel, suddenly the camel goes wired and started to mimic (crying). So Prophet Alaihi Salam makes him silent and started to listening the camel. When camel became silent, then Prophet Sal Allaho Alaihi Wasalam turn towards the guard and asked him to go away because this camel has given his depone against you, and said that you are a liar. The guard went away, then Prophet Sal Allaho Alaihi Wasalam asked that villager and said: “when you came to me what were you saying?”, he replied “O Allah’s Apostle be may parents sacrify upon you, I said “Allahumma Sallayalla Muhammad Hatta La Tabqy Salat, Allahuma wa Baarikala Muhammad hata la tabqy barakata, Allahhumawasallam ala Muhammad Hata la yabqi salam, Allahuma Arham Muhammadan hatta la tabqy Rahmata”, So You Alaihi SalatuWasalam said: “Allah has expose him to me and that camel was also talking by the Qudrat (divinely) of Allah. And indeed Angels has blocked the Uffaq (Sunrising time’s sky) of Skies”.

In the same book another narration is been narrated by Nafy’ from Ibne Umar (rdaj) who narrates that people bring one person to the Prophet Sal Allaho Alaihi Wasalam, they gave shahada (witness/depone) against him that such person did this thing. So Prophet Sal Allaho Alaihi Wasalam ordered to cut his hand, upon this, that person turns back and said: “Allahuma Sallyala Muhammad……..(till the end darood sharif as previously written while the end words are little different which are….)…. la Yabqi min barkatika shayi wasallam ala Muhammad hatta la yabqy min salamik shayi” on this, camel started to talk and said:” O Prophet Muhammad Sal Allaho Alaihi Wasalam this person is not entitle for theft of me”. So Prophet Sal Allaho Alaihi Wasalam said:”Who will bring me back that person, so the among the people of Badr, seventy people get that person and brings him back to Prophet Sal Allaho Alaihi Wasalam.” When they come back with him, Prophet Sal Allaho Alaihi Wasalam said:”O person! what would you said just before when you came here early?” So he replied with that Darood (salutations) which he said. So Prophet Sal Allaho Alaihi Wasalam said:”because of saying such words (means darood / salutations upon Prophet) I saw Angels who were coming from the streets of Madinah from among the people, it was even so nearer that they can be soon came between you and me.” And then Prophet Sal Allaho Alaihi Wasalam again said:”You will come to (al-Siraat) in such condition that your face will be glowing more than the 14th of moon.”

And inSha’Allah soon during the explanation of ‘Naaqa’ such kind of hadith with same meanings will come which is been narrated by Haakim.” (end)!

caravan

 

اردو

بولنے والا اونٹ

ابوالقاسم طبرانی نے اپنی کتاب الدعوات میں زید بن ثابت رضی اللہ عنہ سے روایت کیا ہے کہ ہم نے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ مل کر ایک جنگ لڑی یہاں تک کہ ہم مدینہ کی گلیوں میں ایک مجمع میں تھے تو ہم نے ایک دیہاتی کو دیکھا کہ اس نے ایک اونٹ کی لگام پکڑ رکھی ہے یہاں تک کہ وہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آکر رک گیا اور ہم آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے آس پاس تھے تو اس نے کہا السلام علیک ایہا النبی ورحمتہ اللہ وبرکاۃ تو آپ نے اس کا جواب دیا اور فرمایا کیف اصحبت کیسے صبح کی؟۔ پھر ایک آدمی آیا گویا کہ وہ چوکیدار ہے ۔ تو وہ کہنے لگا اے اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم ! اس دیہاتی نے میرے اس اونٹ کو چرایا ہے تو اونٹ بڑبڑانے لگا اور رونے لگا۔ تو نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے اس بندے کو خاموش کرایا اور اونٹ کی آواز سننے لگے۔ جب اونٹ خاموش ہوگیا تو نبی صلی اللہ علیہ وسلم چوکیدار کی طرف متوجہ ہوئے اور فرمایا کہ تو چلا جا کیونکہ اونٹ نے تیرے خلاف گواہی دی ہے کہ تو جھوٹا ہے تو وہ چوکیدار چلا گیا اور نبی صلی اللہ علیہ وسلم اس دیہاتی کی طرف متوجہ ہوئے اور فرمایا جب تومیرے پاس آیا تو توُ نے کیا کہا تھا؟۔ تو وہ کہنے لگا اے اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم آپ پر میرے ماں باپ فدا ہوں میں نے کہا تھا۔

اللھم صلی علی محمد حتی لا تبقی ۔۔۔۔۔(الی الآخر، عربی سکین میں عربی عبارت ملاحظہ کریں)۔ تو آپ نے فرمایا؛ اللہ تعالیٰ نے اس کو میرے اوپر ظاہر کردیا تھا اور اونٹ بھی اسی کی قدرت سے بول رہا تھا۔ اور بے شک فرشتوں نے آسمان کے افق کو بند کردیا تھا۔”

اسی کتاب میں نافع عن ابن عمر رضی اللہ عنہم سے یہ روایت بھی مروی ہے کہ لوگ ایک آدمی کو لے کر نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں حاضر ہوئے تو انہوں نے یہ گواہی دی کہ اس آدمی نے ان کی اونٹنی کو چوری کیا ہے۔ تو نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے اس کے ہاتھ کاٹنے کا حکم دیا تو وہ آدمی یہ کہتے ہوئے مُڑا

اللھم صلی علیٰ محمد۔۔۔۔۔۔۔۔۔(درود شریف، عربی میں سکین میں دیکھیں)۔۔تو اونٹ بول اٹھا اور کہنے لگا اے محمد صلی اللہ علیہ وسلم! یہ آدمی مجھے چوری کرنے سے بری الذمہ ہے۔ تو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا اس آدمی کو میرے پاس پکڑ کرکون شخص لائے گا تو اہل بدر میں سے ستر آدمی اس کی طرف لپکے اور اس کو پکڑ کر نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس لے آئے تو آپ نے فرمایا اے شخص ابھی تو نے کیا کہا تھاتو اس نے بتا دیا جو اس نے کہا تھا۔ تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا یہ بات کہنے کی وجہ سے میں نے فرشتوں کو دیکھا کہ وہ مدینہ کی گلیوں میں لوگوں کے بیچ سے نکل کرآرہے تھے یہاں تک کہ قریب تھا کہ وہ میرے اور تیرے درمیان بھی حائل ہوجاتے پھر آپ نے فرمایا کہ تُو پُلِ صراط پر اس حالت میں آئے گا کہ تیرا چہرہ چودھویں کے چاند سے زیادہ روشن ہوگا۔ اور انشاء اللہ عنقریب ناقہ کے بیان میں اسی معنی کی حدیث آئے گی جس کو حاکم نے روایت کیا ہے۔” (اختتام)۔

اہم نقطہ؛ اس حدیث سے چند باتیں معلوم ہوتی ہیں کہ ایک تو یہ ایک معجزہ ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم اللہ کی عطا سے غیب پر مطلع ہوجاتے تھے اور یہ بھی کہ جانور تک آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے باتیں کرتے تھے جو کہ آپ کے معجزات میں سے بھی ایک ہے اور یہ کہ درودِ پاک کی برکت سے انسان ہر سختی سے بچ جاتا ہے اور یہاں آقائے دوجہاں صلی اللہ علیہ وسلم پر دورد کی برکت کا وسیلہ اور مدد ہی بیان ہوئی ہے۔

حوالہ: حیات الحیوان، علامہ موسیٰ الدمیری جز اول، صفحات ۴۴۱/۴۴۲ مطبوعہ دارالبشائر۔ الدعاء للطبرانی جلد ۲ / ۱۲۹۱.رقم ۱۰۵۴

This is open example of the Barakah of Darood Shareef (Salutations upon the Prophet) i.e., (Sal Allaho Alaihi Wasalam)

Relief from Sorrows:

R-T:

“I had seen in the book ‘Kitab al Dua’ of Sheikh Imam Abu Bakr Muhammad bin Waleed fahri Taftushi and he was “the Pious Imam” “writer” and ‘Less talker’. He died in 502 H in Sikandariyah. He narrates from Mutraf bin Abd’ullah B. Abi mas’ab madani who says that he went to Mansur, and saw him in sorrow and tension.

For loss of some of his friends he was not even able to talk properly. So he asked me ‘O Mutrf! I have such kind of Problem (Sorrow) upon myself that only Allah can open that (means release him from), with which he examined me”.

And said:

“Is there some supplication for me, to which i can recite so Allah makes me comfort?”. I said: “O leader of the believers! I heard from Muhammad bin Thabit who heard from Umar bin Thabit Basari, who said, that a mosquito entered into the ear of one person in Basra, until it reaches to the hole, that makes the person weaker and makes him awake for day and night. So someone among the friends of Hasan Basari (rta) told him that ‘You need to try with the Dua of Ala’ al Hadzrmi, that Al’aa (rd) who was the Companion of the Prophet Sal Allaho Alaihi Wasalam, he used to recite this supplication (dua) in desert and also he use this same dua in ocean, upon which Allah bless them emancipation from turmoils. So he said that Abu Huraira (Rd) narrates that ala’a al hadzrmi (rd) was sent towards Bahrin with an army in which I was also present, we enter into a formalize desert, where we were in tough problems up till we felt like we will die, so Hazrat al’aa (rd) performed two raka of Namaz (prayers) and then he said this supplication. “Ya Haleem, Ya Aleem, Ya Alyeeo, Ya Azeemu Asqana”, suddenly a cloud like a wing of the bird came upon us and started to shower, with that we filled our all utensils, and we were able to give water to the animals. Then we went on, until we reaches to a river of an ocean, where no one other enter upon ever, and neither will anybody else. We did’nt find any boats there, so he (hazrat alaa hazrmi (rd)) again perform two rakats of Namaz and then said “Ya Haleemo Ya Aleemo Ya Azeemo Ajarna”. and them he said while taking rein of his horse!

“Bismillah Jo’wzu” Means With the name of Almighty Go a head!

Abu Huraira (Rd) said that we were able to walk upon the water surface like in such way that neither our feets get wet and neither our shoes nor horses nor our army of four thousands.”

When that person heard that, he also supplicate with such manners, I swear of Almighty! that we were even not removed from the place that we heard the voice mimbling of that mosquito, who comes out from his ear and accidented in the wall.”

So Mansoor make himself towards Qibla and perform this Dua for some time and then he turn towards us and said: “Allah has remove that sorrow from me now” and then he asked to bring food, makes me to sit with him and we both ate it.
Wazeefa For Reciting in Turmoils and Difficulty:

Dameeri further writes:

“There is another incident of same kind which is narrated by Ibne Khalqan through Imam Musa Kazim bin Jafar al-Saadiq, in which he is describing the biography and events of his lifespan, that Harun al-Rasheed (Caliph of that time) arrested him in Baghdad, and then one day he bring his police officer (guards of administration of that time) and tells him that I had seen a dream in which a black Habashi (african) came towards me, having a small lance in his hands, and telling me that if you don’t release him (i.e., Musa (rd)) I will cut you off with the help of this lance”. So Haroon al Rasheed asked him to release him from the jail and give him thirty thousand dirhams. And also ask him that if you want to stay with us, you will get whatever you want, and if you want to go to Madina, you are free to go. The Guard (custodian) says, I did what was ordered to do and asked him (Imam Musa) that I had seen very different thing about you. Imam Musa (rd) said:”I am going to tell you that while I was asleep, Prophet Sal Allaho Alaihi Wasalam blessed me with a visit and told me that, “O Musa! you are been captured oppresively, so you need to recite these words then you will be not here in on going night (means released from jail).”

“Ya Saa’myo Kulla Sawtin waa Yaa Sabiqo……..(see the arabic dua till the end)….Farij Anni”.

So what you saw, and came, such event occured (as said) and Musa Kazim (rd) died by poisoning in Bagdad in the Rajab of 183 or 187 Hijri. And its been said that, he died, when he was in jail. Imam al Shafi’e (rd) says that “Qabar” (Grave) of Imam Musa Kazim (rd) is an endorsed mith”. (means blessings like an antidote/cure for turmoils).
These two events also explains that visitng to the graves of the pious ones and using their intercession (Not the intercession of the grave but it means the person who resides there), is permissible and bless worthy act. (End Tr).

ترجمہ

غم دور کرنے کا وظیفہ

میں نے شیخ امام ابوبکر محمد بن ولید فہری طفطوشی کی کتاب الدعا میں دیکھا ہے اور (امام پرہیزگار) ادیب، کم گو تھے۔ ان کی وفات 502 ھ میں سکندریہ میں ہوئی۔ یہ مطرف بن عبداللہ بن ابی مصعب مدنی سے بیان کرتے ہیں کہ انہوں نے کہا کہ میں منصور کے پاس گیا تو اس کو مغموم وپریشان دیکھا۔

اپنے بعض دوستو کی جدائی کے دکھ میں بول بھی نہیں سکتا تھا۔ تو اس نے مجھے کہا اے مطرف مجھ پر ایسا غم طاری ہوگیا ہے جس کو وہ اللہ ہی کھول سکتا ہے جس نے مجھے اس کے ذریعے آزمایا ہے۔

کہا میرے لیئے کوئی ایسی دعا ہے جسے میں پرھوں تو اللہ میری یہ حالت دور کردے۔ میں نے کہا امیرالمؤمنین مجھے محمد بن ثابت نے عمر بن ثابت مصری سے بیان کیا ہے کہ بصرہ میں ایک آدمی کے کان میں ایک مچھر گھس گیا یہاں تک کہ اس کے سوراخ میں پہنچ گیا۔ تو اس نے اس آدمی کو تھکا دیا اور رات دن بیدار رکھا۔ تو اس کو حسن بصری کے ساتھیوں میں سے ایک نے کہا کہ تو علاء الحضرمی کی دعا کے ذریعے دعا کرو۔ وہ علاء الحضرمی جو نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھی تھے اور انہوں نے یہ دعا بیابان میں بھی کی اور سمندر میں بھی تو اللہ نے ان کو اس سے چھٹکارہ دے دیا۔ تو اس نے کہا ابوہریرہ فرماتے ہیں کہ العلاء الحضرمی کو بحرین کی طرف ایک لشکر میں بھیجا جس میں ، میں بھی موجود تھا ہم ایک بیاباں میں داخل ہوگئے جہاں ہم سخت مصیبت میں مبتلا ہوگئے۔ یہاں تک کہ ہم کو ہلاکت کا خوف لاحق ہوگیا تو علاء اترے اور دورکعت نماز پڑھ کر یہ دعا مانگی۔ یا حلیم یا علیم یا علی یا عظیم اسقنا۔ تو ایک بدلی پرندے کے پر کی جیسی آئی اور ہم پرکڑک کر برسنے لگی۔ یہاں تک کہ ہم نے برتن بھر لیئے اور سواریوں کو پانی دے لیا۔ پھر ہم چل پڑے یہاں تک کہ سمندر کی ایک نہر پر پہنچ گئے۔ جہاں اس سے قبل نہ کوئی داخل ہوا تھا اور نہ ہی اسکے بعد۔ ہم کو وہاں کشتیاں بھی نہ ملیں۔ تو علاء نے وہاں دورکعات نماز پڑھ کر یہ دعا کی۔ یا حلیم یا علیم یا عظیم اجرنا۔

پھر انہوں نے اپنے گھوڑے کی باگ پکڑی اور کہا بسم اللہ جوزو یعنی اللہ کا نام لے کرگزرجاؤ۔ ابوہریرہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ ہم پانی پر اسطرح چلے کہ نہ ہمارے قدم گیلے ہوئے اور نہ موزے اور نہ گھوڑوں کے کھر اور ہمارا لشکر چارہزار کا تھا۔ جب اس آدمی نے یہ بات سنی تو اس نے یہ دعا پڑھی تو خدا کی قسم ہم ابھی اس جگہ سے ہٹے بھی نہ تھے کہ وہ مچھر آواز نکالتا ہوا اس کے کان سے نکل کر دیوار سے جا ٹکرایا۔

تو منصور قبلہ رخ ہوکریہ دعا کچھ دیر کرتا رہا۔ پھر ہماری طرف متوجہ ہوا اور کہا اللہ نے میرا وہ غم دور کردیا ہے ۔ اور کھانا منگوایا مجھے بھی ساتھ بٹھایا اور میں نے بھی اس کے ساتھ مل کر کھانا کھایا۔

مصیبت سے نجات کا وظیفہ:۔

اسی واقعہ کے قریب قریب وہ واقعہ ہے جو ابن خلکان نے موسی کاظم بن جعفر الصادق کے حالاتِ زندگی میں بیان کیا ہے۔ کہ ہارون رشید نے ان کو بغداد میں قید کردیا پھر اپنے پولیس آفیسر یعنی محافظ کماندار کو ایک دن بلایا اور کہا کہ میں نے خواب میں ایک حبشی دیکھا جو میرے پاس آیا اور اس کے پاس ایک چھوٹا سا نیزہ تھا اور کہا کہ اگر تو نے موسیٰ کو نہ رہا کیا تو میں تجھے اس نیزے سے کاٹ ڈالوں گا۔ تو ہارون نے کہا تم جا کر ان کو رہا کردو اور ان کو تیس ہزار درہم بھی دے دو۔ اور اس سے کہو کہ اگر ہمارے پاس ٹھہرنا چاہے تو جو تم چاہو گے تمہیں ملے گا اور اگر مدینہ جانا چاہتے ہو تو چلے جاؤ۔ محافظ نے کہا میں نے اسی طرح کیا۔اور ان کو کہا کہ میں نے آپ کی بڑی عجیب بات دیکھی ہے۔ موسیٰ نے فرمایا؛ میں تجھے بتاتا ہوں کہ میں سویا ہوا تھا کہ میرے پاس نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم تشریف لائے اور کہا اے موسیٰ! تجھے ظالمانہ طور پر محبوس رکھا گیا ہے۔لہٰذا تم یہ کلمات پڑھو تو تم یہ رات بھی قید میں نہ رہو گے۔

یا سامع کل صوت۔۔۔۔۔۔۔۔الیٰ الآخر۔۔۔۔۔فرج عنی۔۔۔۔۔(عربی دیکھیں)۔سکینز

تو جو کچھ آپ دیکھ کر آرہے ہیں یہ واقعہ پیش آگیا۔ اور موسی کاظم رجب 183 یا 187 ہجری کو بغداد میں زہر سے فوت ہوگئے۔ اور کہا گیا ہے کہ وہ قید میں فوت ہوئے اور امام شافعی رحمتہ اللہ علیہ فرماتے ہیں کہ موسیٰ کاظم رضی اللہ عنہ کی قبر مجرب تریاق ہے۔

صفحات ، ۴۳۰/ ۴۳۱/ ۴۳۲

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s