Deobandi Twist and Fabrication in Sheikh Rifayis Book Caught


Bismillahi Rehman iRahim

Brothers and Sisters, today I am presenting another fabrication in Urdu version of the Book al Burhan al Mowyed by Sheikh Syed Ahmad Kabir Rafayi al Hussaini (rta). The Translator is famous Deobandi Mulla who wrote down this translation. What kind of fabrication he did?

He is putting his own personal words inside (Brackets) which when an ordinary person read, surly he will be misguided, let me show you first their translation and then in the end I will present you original Arabic words which Imam (rta) said in actual.

Scan of Fabrication in Translation:

Now Correction and Exposing;

As you can read in page 180’s translation, the translator has written inside the brackets words (Naa-Unse Faryad Karo) means (Don’t Ask them for help) <——– Now let me present Arabic text here, then you will realize that, how cheap are they, who are forcing their pathetic sick beliefs by fabricating the words and books of famous Imams.

Arabic Text:

“أي سادة ” إذا استعنتم بعباد الله وأوليائه فلا تشهدوا المعونة والإغاثة منهم , فإن ذلك شرك , ولكن اطلبوا من الله الحوائج بمحبته لهم ” رب أشعث أغبر ذي طمرين مدفوع بالأبواب , لو أقسم علي الله لأبره ” ( رواه احمد ومسلم عن ابي هريرة رضي الله عنه )   صرفهم الله في الأكوان , وقلب لهم الأعيان وجعلهم يقولون بإذنه للشيء كن فيكون   عيسي عليه السلام خلق طيرا من الطين بإذن الله   أحيي الموتي بإذن الله   نبينا وحبيبنا سيد سادات الأنبياء محمد عليه أفضل الصلاة والسلام حن الجذع إليه   وسلمت الجمادات عليه   وجمع الله به ماتفرق في الأنبياء والمرسلين من المعجزات   وجرت أسرار معجزته في أولياء أمته   فهي للأولياء كرامات تمر, وله عليه الصلاة والسلام معجزة تستمر 

 

Now as you can read in Arabic text, there are no such brackets, neither its been said that (DONT ASK THEM FOR HELP) and even they are so stubborn that, in the next lines Imam Rafayi (rta) is clearly showing the Actual Aqeeda of (US SUNNI SUFIS) that, if someone think that help of Auliya is their own power, then its Shirk, but If someone is asking them for help while considering them the best bondmen of Allah, the best slaves of Allah, whose request in the Lordship of Almighty is never rejected. Now how could Imam Rifayi can say these words which this MULLA is presenting while translating it, so that, in the very beginning he has cultivated this sick belief by putting brackets so that, in other lines even if someone read the original lines, still there will be an error in their minds about Tawasul. 

This is called Satanic act. The same thing has been done several times by these morons i.e., Wahhabism, Deobandism. These one snake with two heads are actually cause of all disturbance. 

Lanat ullahi alal Kazibeen wal Munharifeen.

 

شیخ احمد رفاعی رحمتہ اللہ علیہ کی کتاب برھان کا ترجمہ اس وہابی مکتبہ نے اردو میں کیا، اور مولانا ظفر احمد عثمانی تھانوی نے یہ کارہائے نمایاں سرانجام دیا ہے کہ دل تو بہت کچھ لکھنے کو چاہ رہا ہے لیکن فیصلہ ہم پڑھنے والوں پر چھوڑتے ہیں۔ دینی کتب میں یہ تحریفات کیسے جائز؟

شیخ نے وسیلے کے حق میں باقاعدہ لکھا ہے کہ اولیاء اللہ کا وسیلہ اگر کوئی یہ ذہن میں تصور رکھ کر مانگے کہ یہ تو انکی اپنی مدد کرنے کی قوت ہے تو بلاشبہ یہ شرک ہے۔ لیکن اگر اولیاء اللہ کا وسیلہ اور مدد یہ کہہ کر حاصل کی جائے کہ یہ اللہ کے مقرب بندے ہیں اور اللہ اپنے مقرب بندوں کی درخواستوں کو رد نہیں فرماتا۔ 

اب دیوبندی مولوی نے ڈنڈی یہ ماری ہے کہ بریکٹس میں لکھا ہے (نہ ان سے فریاد کرو)۔ اب یہ الفاظ میں نے تین عربی ایڈیشنز میں چیک کیئے ہیں کہیں بھی کسی بھی جگہ پر بریکٹس نہیں ہیں اور ناں ہی یہ الفاظ شیخ احمد رفاعی رحمتہ اللہ علیہ نے لکھے ہیں۔ یہ اختراع، یہ فیبریکیشن اور یہ جھوٹ دیوبندی کے اپنے دماغ وباطل دل کی پیداوار ہے۔ شروع میں ہی بریکٹ میں دے کر یہ ثابت کرنے کی کوشش کی ہے کہ یہاں تو ہمارے عقیدے کی مت ماری جائے گی چلو بریکٹ ڈال کر لوگوں کے دماغوں کو مشکوک کردو۔ ہم نے اوپر عربی کا اوریجنل ٹیکسٹ دیا ہے جس میں صاف صاف ہماری بات کی تصدیق ہوتی ہے۔  دیوبندی وہابی طبقہ کو شرم سے چلو بھر پانی میں ڈوب مرنا چاہیئے کہ اتنے بڑے بڑے خطابات دے دیتے ہیں اپنے ملا کو، لیکن ملا کی اصلیت اتنی گھٹیا ہے کہ اس نے کسی امام کسی ولی کسی چیز کو نہیں چھوڑا، دیوبندی وہابی کتابیں تحریف کے بے مثال نمونے بن چکے ہیں لہٰذا ہماری عوام سے درخواست ہے کہ ان کی کتابوں سے اپنی جان بچائیں ان کے ترجموں کا بھی کوئی اعتبار نہیں۔ اگر ہم آپ کو یہ نہ بتاتے رہیں تو یقین کریں کہ آپ اندازہ بھی نہیں کرسکتے کہ انہوں نے کہاں کہاں کیا کیا گل کھلا رکھے ہیں

پشتو

دا کتاب ده شيخ کبير احمد رفاعي رح لوستونکئ دئ، چه ترجمه ائ ديوبندو يو مولانا کړئ ده په اردو کښ، او په کتاب کښ چه کم ځائي امام صاحب دَ الله ده وليانو نه مدد غوښتل ليکلي دې هم هغه ځائ کښ ديوبندو مولانا تحريف وکړو، او په بريکټ کښ دنه اي ده ځان نه ليکلي دې چه “هغو نه مدد مه غواړه’ دغه شئ ته تحريف وئيلي کيږي، ديوبند دې دَ شرم نه مرګ په کار دئ چه دوئي په اکثر ترجموکښ دَ ځان ځان نه ټکي ليکې چه دَه خلقو ايمان خراب شي، وليانو ته څوک هم خدائ نه وائي او نه تردَ خدائ په شانِ ګنړې بلکه اهلسنت وجماعت دغه عقيده چه کمه امام صاحب بيانَ کړئ ده چه د وليانو نه مدد غوښتل عين سلف عمل دئ او تش دا به په زړه کښ ايمان لرئ چه دا مدد ده هغو الله په وجه او په مرضي باندئ دئ زکه چه الله خپل خوګ خلقو درخاست نه رد کوې مونږ ستاستو عربي عبارت هم پيش کړو وس فيصله په هر صاحب ايمان ده چه ايا تاسو دَ ديوبندو په منافقت او په تحريف شده ترجمو باندئ ايمان لرئ او که ايا دَ اسلافو اصل تعليماتو باندې 

 

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s