Rad-e-Ismail Dehlawi on Topic of Imkan al Kizb [Ur/Pst/En/Ar]


بسم اللہ الرحمٰن الرحیم
مسئلہ امکان کذب
سوال؛ امکانِ کذب کیا ہوتا ہے اور یہ کن کا عقیدہ ہے؟
جواب؛۔
ہم یہاں ازالہء اوہامِ حضراتِ مخالفین کو اکثر عبارات ایسی نقل کررہے ہیں کہ امتناع کذبِ الہٰی پر تمام اشعریہ و ماتریدیہ کا اجماع ثابت کریں، جس کے باعث اس وہم عاطل کا علاجِ قاتل ہوکہ معاذ اللہ یہ مسئلہ قدیم سے مختلف فیہ ہے، حاش للہ! بلکہ بطلانِ امکان پر اجماع اہل حق ہے جس میں اہلسنت کے ساتھ ساتھ معتزلہ وغیرہ فرقِ باطلہ بھی متفق ، ہیں۔
موجودہ دور میں گزشتہ ادوار میں خوارج کے بیش بہا عقائد پائے جاتے ہیں جس میں سے ایک یہ مسئلہ امکانِ کذب ہے۔ اسکا آسان مفہوم یہ ہے کہ کچھ (گمراہ فرقے) یہ کہتے ہیں کہ جھوٹ بولنا بھی اللہ کی ایک صفت ہے لیکن اس نے کبھی جھوٹ بولا نہیں۔ (معاذ اللہ)۔ اور دلیل وہ یہ لاتے ہیں کہ اگر جھوٹ کو اللہ کی قدرت و اختیار نہ مانا جائے گا تو یہ توہینِ ربوبیت ہے۔
اس جاہلانہ عقیدے کے رد میں ہم یہاں پر علمائے اہلسنت وجماعت کا مشترکہ عقیدہ مستند کتابوں سے حوالوں وترجموں کے ساتھ بتا دیتے ہیں کہ اس کے بارے میں ہمارا کیا مؤقف ہے۔ اور 72 جہنمی گروہ کیا کہتے ہیں۔ پہلے آپ گمراہ عقیدے ملاحظہ کریں۔ پھر اس پر ہمارا رد
پښتو:. مسئله امکان الکذب
ده امکان الکذب نه مراد په آسان ټکو کښ دا دئ چه ده وهابيانو او ده ديوبند پيروکارو دغه باطل عقيده ده چه الله پاک دروغ وئيلي شې خو هغه جل و شانه چرئ وئيلے نه دئ، دغه يو باطل کفريه شرکيه عقيده ده، او اسلاف او ده اسلامي عقائدِ احناف کښ دغه ته شرک وئيلي کيږې چونکه ديوبند ده حنفيت دعوي هم لرې نو مونږ ستاسو ته اول ده ديوبند او وهابيانو پيرومرشد اسماعيل دهلوي وغيرهم کتابونه پيښ کول غواړو چه په ک دا شرک وئيلے شوے دے بيا په آخير کښ ورپسي ده احناف علمائے کرام چه کم ده اشعريه او ماتريديه دواړو سني مشرانو اقوال او عقيده به وې چه به تينه واضحَ شې چه دا عقيده چه په څه باندي دا خلقَ عمل پيرا دې په اصل کښ دا اسلافو عقيدو نه بالکل مخالفَ عقيده ده. الله نه به ده ايمان دعا غواړو، 

 

ده تبليغيانو په مذهب کښ خو دا عقيدئ دې چه وائي که تاسو الله له پاره دا ګمان نه کوۍ چه هغه په دروغ قدرت نه لري نو دا ده الله د قدرت نه انکار شو، په دې وجه باندي دا ضروري شئ دئ، استغفرالله. 
خواهلسنت وجماعت اصلي حقيقي دا وائي چه چونکه دروغ ګوئې يو عيب دے او په قرآن کښ او تمام تر تفاسير صحابه تابعين کښ دا وئيلئ شوې دې چه احاديثو مطابق هم الله پاک ده هر قسم َ عيب نه پاک او منزه او بلند ارفع دئ نو چونکه دروغ يو بد عمل دئ نو دا ده الله پاک صفت هرګز نه دئ او دغه ګمان نا صرف چه ده اهلسنت وجماعت اجماعي عقيده اسلام ده بلکه ورسره معتزله چه کم فرقه وا ده هغو هم په دې معامله باندې اهلسنت سره اتفاق وو، او دا موجوده مسئله فرعي نه ده څنګه چه ده تبليغيانو په غلط کتابونو کښ لوستونکې شوې دې، اردو کښ تمام تر تفصيل ملاحظه کړئ اوبيرته خپل ايمان ته فکر وکړئ چه تاسو په کمه لاره روان يئ او په دې حقله مونز ده ائمه کرامو عقيده سره ده عکسونه تاسو ته راوړاندئ کوؤ.الله ده هرچا ته ده صحيح ايمان هدايت ورکړې، آمين

BELIEF OF IMAM OF DEOBANDI WAHHABIS I.e.,  ISMAIL DEHLVI:

“We don’t say it’s impossible for ALLAH to tell Lie.”
(Yakrozi, check Scan)

“If ALLAH could not tell lie then it would definitely be concluded that man has more power than ALLAH.”

BELIEF OF RASHEED GANGOHI DEOBANDI:

Maulana Gangohi, merely following Maulana Shaheed (Ismail Dehlvi), agreed on the matterof possibility of Lie. This quote of him is sheer blame and pretentious assertion. Maulana Gangohi has followed the great late nobles.” (Shahaab-e-Thaaqib page 102)

And interestingly they declared infidels by their own book!

FATWA OF DEOBANDI INTELLECTUALS:

“It is said that near both (Dehlvi and Gangohi), ALLAH can be Liar or Truthless and it is possible that there is lie in the Book of ALLAH (ALLAH forbid!); but this is false and mere fib and our nobles (scholars) never accepted such belief…. Instead, consider and declare such person infidel and Zoroastrian.” (Shahaab-e-Thaaqib, page 105)

So it proves, that those people who are following blindly behind the in-decent ways of Ibn Abdul-Wahhab Najadi , and Ismail Dehlawi, Rasheed ahmed gangohi etc are having conflicts among their own house, we urge readers of such community to recheck their beliefs with authentic Islamic literature as given below by yourself.

Some more Kufriyat of Ismail Dehlawi:

In „Yak Rozeh‟, a persian magazine published by Farooqi publishers on page 144,

“After providing the knowledge, it is possible that Allah may extract that information away (by making a person forgetful).

Hence, to prove the equality of the Holy Prophet śallAllāhu álayhi wa sallam with someone else is not contradictory to any verdicts of the scholars, and for the Quran to be taken away after its revelation is possible”

The people of the truth had already elaborated on the fact that it is impossible for anyone to be equal to the Holy Prophet śallAllāhu álayhi wa sallam in his magnificent attributes; and other experts have stated that Allah Ta‟ala sent the Holy Prophet śallAllāhu álayhi wa sallam as a Final Messenger, if there is a possibility for anyone to be similar to the Holy Prophet śallAllāhu álayhi wa sallam then, Allah Forbid, there is a possibility of a lie in the Divine Command. The answer to this is that the person who inscribed the above statement in Book -Yak Roza has uttered a kufr; “if Allah has to make people forget every letter of the Quran then it will not be contradictory to any scholarly statements”. Here it is a clear acknowledgment of the writer of Yak Rozi that there is no complain or protest if any words or promise of Allah has to
become false, the real complain is that the people must abide by that falsehood (if it has to occur); if Allah has to make them forget and falsify or change His own promise then they will not remember the original Word of Allah before the change (as they have forgotten), then how can anyone inspect on this matter since Allah has the Power to cause forgetfulness in the people.

Such filthy statement leads to absurd conclusions as you read above and Allah is free from the words of the oppressors!

It is mentioned in „Shifa Sharif‟ on page 361,

“If someone believes in the Oneness of Allah, Prophethood of our Holy Prophet śallAllāhu álayhi wa sallam and whatever the Messengers have brought from Allah, but believes the
permissibility of Kizb in all of this fundamentals (possibility of a lie from Allah); then such a person whether he was expedient in his statement or not, is a kaafir in either way”

A person who attributes a lie to the Messengers Alayhi Salaam will be considered as a kaafir, then why should a person, who attributed a lie to Allah, not be considered in terms of consensus a kaafir?

The person who penned this down (Ismail Dehlvi) has verily
proposed a grimy and evil belief. This humble servant has answered this matter with various explanations and analysis in a book by the name of „Subhaanas Subbooh an ayb kazbi maqbooh‟ (1307 AH).

Kufr:

In Yak Roza on page 145,

“Inability to lie is considered to be amongst the magnificence of Allah and we declare this worthy of praise in comparison to a dumb and speechless person. One of the admirable attribute is that if a
person has the power to lie then out of wisdom and prudence he avoids speaking a lie; such a person is worthy of honour. On contrary, a person who intended to speak a lie but keeps quiet or someone impedes him from speaking; such a person is worthy of blame. Hence, to save oneself from the defect of self-centred falsehood and to escape from the taint of a lie; is considered a marvellous attribute”

In this portion it is clearly stipulated that it is not impossible for Allah to lie and that such a quality is habitually possible in Allah and as for a dumb person to speak is not impossible personally (out of effort), intellectually (through help), legally (through a sign) and
strangely (through a miracle), however it is impossible habitually. The writer elaborates that for Allah to reveal a lie is dissimilar to the speaking of a lie by a mute person because we praise Allah, not the dumb person, for this quality. Therefore it becomes definite that this quality of proclaiming a lie by Allah is routinely possible.

This elaboration of his is kufr as within this; the faith, religion and law are all falsehood; because if a lie is attributed to Allah in every case then in which facet of Islam can there be authenticity?

In the same assertion he admitted that it is permissible for filth and defect to occur in Allah but due to wisdom He avoids this occurrence; this belief entails likelihood of blemish, pollution, loss and defect in the Majesty of Allah. This kufr brings about thousands of other infidelities.

 

Shirkiya Beliefs- UnIslamic Polytheist Beliefs of Wahhabi Deobandism:

This slideshow requires JavaScript.

رد
Refutation from Orthodox Sources:
اکثر عبارتیں علمائے اشعریہ کی ہوں گی تاکہ معلوم ہوکہ مسئلہ خلافی نہیں اور وہ عبارات جن میں بنائے کلا حسن و قبح عقلی کے انکار پر ہو کہ یہ اصول ِ اشاعرہ سے ہے۔ تو لاجرم مسئلہ اشاعرہ وماتریدیہ کا اجماعی ہوا اگرچہ عند التحقیق صرف حسن وقبح بمعنی استحقاق مدح وثواب وذم وعقاب کی شرعیت وعقلیت میں تجاذب آرا ہے، نہ بمعنی صفت کمال وصفت نقصان کہ بایں معنی باجماع عقلاً عقلی ہیں۔
ہم اسکی فقہی بحث کی سخت زبان کو علماء پر چھوڑ کر یہاں عام لوگوں کو سمجھانے کی خاطر فی ڈائریکٹ عکس اور انکی تفاصیل پیش کررہے ہیں۔ سب سے پہلے عقیدہ اہلسنت وجماعت
ہم اہلسنت وجماعت (بشمول، اشعریہ، ماتریدیہ) اور ہمارے علاوہ (معتزلہ ) کا مشترکہ اجماع امت اس بات پر ہے کہ جھوٹ ایک نقص ایک عیب ہے ، جبکہ قرآن سے ثابت ہوتا ہے کہ اللہ ہر قسم کے عیوب سے پاک و منزہ ہے۔ لہٰذا جو لوگ یہ گمان رکھتے ہیں (جواوپر بیان ہوا) وہ غلطی پر ہیں اور ان کو تجدیدِ ایمان کرنی واجب ہے۔

Refutation and short summary for English readers, on Topic of Imkan al Kizb (Option of Lie) for Almighty. Deobandi Jamat specially and Wahhabis too, usually had also this deviant belief, that Allah can lie, but He never lied. This is called blasphemy which has been produced as a Belief of Wahhabi-o-nized Deobandism.

Bcz, (deobandis) claims to be Hanafite, Now we are giving Real Belief of Salaf of Ahnaf on this issue, which clearly and simply says,

R-T


According to Al-Imam Masood bin Umar bin Abdullah, aka, Saad-ud-deen Al-Taftazani (rta) writes in his Sharhil Maqasid Vol 5, p 231, Published by Alam-al Kutub, that, “The belief of Ahlu Sunnah is that, whole universe is Ha’Dis [which is been made i.e., creation) and ‘been made by‘ while the Maker is Qadeem (Oldest) and with the attributes of Qadeema, neither ignorance is possible [for Him], nor “LIE” can be, nor weakness or errors.”

نص اول؛شرح مقاصد کے مبحث کلام میں ہے۔
الکذب محال باجماع العلماء لان الکذب نقص باتفاق العقلاء وھو علی اللہ تعالیٰ محال، ملخصاً
ترجمہ؛ جھوٹ باجماع علماء محال ہے کہ وہ باتفاقِ عقلاء عیب ہے اور عیب اللہ تعالیٰ پر محال۔
نص 2؛اسی شرح المقاصد کی بحث حسن و قبیح میں ہے۔
قدبینا فی بحث الکلام امتناع الکذب علی الشارع تعالیٰ۔
ترجمہ؛ ہم بحث کلام میں ثابت کرآئے کہ اللہ عزوجل پر کذب محال ہے۔

 

نوٹ: حوالہ جات کے لیے آخر میں دیا فورم لنک دیکھیں

 

نص ۳ اسی کی بحث تکلیف بالمحال میں ہے؛
محال ھو جہلہ او کذبہ تعالیٰ عن ذٰلک
ترجمہ؛ اللہ تبارک و تعالیٰ کا جہل یا کذب دونوں محال ہیں برتری ہے اُسے ان سے۔
نص ۴ اسی میں یہ بھی تحریر ہے
الکذب فی اخبار اللہ تعالیٰ فیہ مفاسد لاتحصیٰ ومطاعن فی الاسلام لاتخفی منہا مقال الفلاسفۃ فی المعاد ومجال الملاحدۃ فی العناد وھٰھنا بطلان ما علیہ الاجماع من القطع بخلود الکفار فی النار، فمع صریح اخبار اللہ تعالیٰ بہ فجواز الخلف وعدم وقوع مضمون ھٰذا الخبر متحمل، ولما کان ھٰذا باطلا قطعا علم ان القول بجواز الکذب فی اخباراللہ تعالیٰ باطل قطعاً۔ ملتقطاً۔
ترجمہ؛ یعنی خبر الٰہی میں کذب پر بے شمار خرابیاں اور اسلام میں آشکارا طعن لازم آئے گے، فلاسفہ حشر میں گفتگو لائیں گے، ملحدین اپنے مکابروں کی جگہ پائیں گے، کفار کا ہمیشہ آگ میں رہنا کہ بالاجماع یقینی ہے، اس پر سے یقین اٹھ جائیں گے کہ اگرچہ خدا نے صریح خبریں دیں مگر ممکن ہے کہ واقع نہ ہوں، اور جب یہ امور یقیناً باطل ہیں تو ثابت ہوا کہ خبر الٰہی میں کذب کو ممکن کہنا باطل ہے۔
نوٹ؛ اور یہی اسماعیل دہلوی کی وہابی ازم اور دیوبندی ازم کیوجہ سے آج ہورہاہے، ہم سے مباحث میں بڑی بار اس بیوقوفانہ بات کو عیسائی اور یہودی مباحثین نے اٹھایا یہ ہمارا ذاتی تجربہ ہے، کہ اس ایک گمراہ جہنمی عقیدے کی وجہ سے کتنی زبانیں کھل گئیں واقعی اسلاف نے سچ لکھا ہے۔
نص ۵ شرح عقائد نسفي، جو کہ سنیوں کے عقائد کی ایک جامع مفصل کتاب ہے اور جس سے دینی علم سیکھنے والا بچہ بچہ واقف ہے اس میں علامہ سعد الدین تفتازانی الحنفی رضی اللہ عنہ نے لکھا ہے
کذب محال علی اللہ سبحانہ وتعالیٰ۔ یعنی جھوٹ اللہ پر محال ہے
حوالہ شرح عقائد النسفی ، طباعت، المدینۃ العلمیۃ دعوۃ الاسلامیۃ، کراچی پاکستان ص ۱۶۲

نص ۶ طوالع الانوار کی فرع متعلق بمبحث کلام میں ہے؛۔
الکذب نقص والنقص علی اللہ تعالیٰ محال۔ یعنی ۔ جھوٹ عیب ہے اور عیب اللہ تعالیٰ پر محال۔

 

دورغ يو عيب دي او الله پاک ده هرقسمَ عيب نه پاک دي
حواله ؛ طوالع الانوار للبيضاوي، ص ۱۸۲ طبع قديم، دارالکتبه، ابي الثنا شمس الدين ابن محمد بن عبدالرحمن الاصفهاني، و حاشيه السيد الشريف علي بن محمد الجرجاني

 

Its Written:
“Lie is a disgrace and Allah is free from it.”
Tawaly ul Anwaar- With Hashiya of Jarjani- Pp 182

نص ۷۔ مواقف کی بحث کلام میں ہے؛۔
انہ تعالیٰ یمتنع علیہ الکذب اتفاقا اما عند المعتزلۃ فلان الکذب قبیح وھو سبحانہ لایفعل القبیح واما عندنافلانہ نقص والنقص علی اللہ محال اجماعا۔(ملخصاً)۔
یعنی اہلسنت وجماعت ومعتزلہ سب کا اتفاق ہے کہ اللہ تعالیٰ کا کذب محال ہے ، معتزلہ تو اسلیئے محال کہتے ہیں کہ کذب برا ہے اور اللہ تعالیٰ برا فعل نہیں کرتا اور ہم اہلسنت کے نزدیک اس دلیل سے ناممکن ہے کہ کذب عیب ہے اور ہرعیب اللہ تعالیٰ پر بالاجماع محال ہے۔
نص ۸۔ مواقف وشرح مواقف کی بحث میں لکھا ہے؛۔
مدرک امتناع الکذب منہ تعالیٰ عندنا لیس ھو قبحہ العقلی حتی یلزم من انتفاء قبحہ ان لا یعلم امتناعہ منہ اذلہ مدرک اٰخرو قدتقدم۔
ترجمہ؛ یعنی ہم اشاعرہ کے نزدیک کذب الٰہی محال ہونے کی دلیل قبح عقلی نہیں ہے کہ اس کے عدم سے لازم آئے کہ کذبِ الٰہی محال نہ جاناجائے بلکہ اس کے لیئے دوسری دلیل ہے کہ اوپر گزری، یعنی وہی کہ جھوٹ عیب ہے اور اللہ تعالیٰ میں عیب محال۔

 

نص ۹ انہیں کی بحث معجزات میں ہے؛
قدم فی مسئلۃ الکلام من موقف الالٰھیات امتناع الکذب علیہ سبحانہ وتعالیٰ۔
یعنی ہم موقف الٰہیات سے مسئلہ کلام میں بیان کرآئے کہ اللہ تعالیٰ کا کذب زنہار ممکن نہیں۔

 

حوالہ جات مشترکہ؛
الامام مسعود بن عمر بن عبدالله الشهير بسعد الدين التفتازاني، ۷۱۴، ۷۹۳ هجري، الجز الخامس، شرح المقاصد، ص ۲۳۱و ۱۵۴ و ۱۵۵، طباعت عالم الکتب بيروت
مطالع الانظار علي متن طوالع الانوار ، تاليف شمس الدين بن محمود بن عبدالرحمن الاصفهاني ويليه حاشيه السيد الشريف علي بن محمد الجرجاني ص ۱۸۳ بدارالکتب
شرح العقائد النسفيه مع حاشيه جمع الفوائد، المدينۀ العلميه الدعوۀ الاسلاميۀ،کراچي پاکستان، ص ۱۶۲
شرح المواقف ، قاضي عضدالدين عبدالرحمن الايجي المتوفي ۷۵۶هجري، تاليف سيد شريف علي بن محمد الجرجاني ومعه حاشيته السياکوټي والحلبي ص ۱۱۵، جز ۸، مرصد الرابع، المقصد السابع، في انه تعالي متکلم و ص ۲۱۴ مقصد الخامس في الحسن والقبح، صفحه ۲۶۳ المرصد الاول مقصد الثالث ، دارالکتب العلميه بيروت
مزید حوالہ جات؛
شرح المقاصد، المبحث السادس، دارالمعارف النعمانيه لاهور ۲/۱۰۴ و قال وتمسکوا بوجوه ۲/۱۵۲ ، و المبحث الخامس، ۲/۱۵۵، و المبحث الثاني عشر ۲/۲۳۸
شرح العقائد النسفيه ، دارالاشاعت العربيه قندهار افغانستان ص ۷۱
مواقف مع شرح المواقف، المقصد السابع، منثورات الشريف الرضي قم ايران، ۱۰۱ و ۱۰۰ .مجلد ۸ ، و، المرصد السادس المقصد الخامس، ۱۹۳، الموقف السادس في السمعيات ۲۴۰
یعنی حاصل ِ کلام یہ ہے کہ اہلسنت وجماعت کا اجماع ہے کہ یہ چیز یعنی جھوٹ (امکانِ کذب) بلکہ اسکا امکان بھی محال اور ناممکن ہے پھر ایسا عقیدہ اسلام میں رائج کرنا بدعتِ سیئہ اور کھلی گمراہی وجہالت نہیں تو اور کیا ہے۔ دیوبند چونکہ خود کو سنی بھی کہتی ہے لہٰذا اس پر زیادہ فرض بنتا ہے کہ اب اسکو مانے بھی کیونکہ ہم نے اشعریہ اور ماتریدیہ دونوں کے عظیم اماموں اور اسلاف کے اقوال لکھ دیئے ہیں اور اسکی روشنی میں بخوبی آپ لوگ فیصلہ خود کرسکتے ہیں کہ کون صحیح ہے اور کون غلط۔ اور ہاں کوئی یہ نہ کہہ دے کہ یہ تمام امام بھی بریلوی ہیں۔ یہ سلسلہ مزید اپڈیٹ تک جاری رہے گا۔ انشاء اللہ تعالیٰ العزیز
جاری ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Forum link for more scans updated soon [Click Here] & [Here]

Updated: Same date:

 

نص نمبر ۱۰ امام المحقق علی الاطلاق کمال الدین محمد ، مسایرہ میں لکھتےہیں؛۔ 

یستحیل علیہ تعالیٰ سمات النقص کالجہل والکذب۔ یعنی۔ جتنی نشانیاں عیب کی ہیں، جیسے جہل و کذب سب اللہ تعالیٰ پر محال ہیں۔
نص ۱۱ ۔ اسی طرح ایک اور جگہ اسکی شرح مسامرہ میں لکھتے ہیں؛ 


لا خلاف بین الاشعریۃ وغیرھم فی ان کل ما کان وصف نقص فالباری تعالیٰ منزہ عنہ وھو محال علیہ تعالیٰ والکذب وصف نقص۔  


ترجمہ 
یعنی اشاعرہ وغیرہ کسی کو اس میں اختلاف نہیں کہ جو کچھ صفتِ عیب ہے باری تعالیٰ اس سے پاک ہے اور وہ اللہ تعالیٰ پر ممکن نہیں اور کذب صفت عیب ہے۔ 


حوالہ جات؛ کتاب المسامرۃ فی شرح المسایرۃ، للکمال بن ابی شریف بن الھمام الحنفی (رض)۔ الجزالاول والثانی، ص ۲۳۹ المکتبه الازهريۀ للتراث بجامعته الازهرشريف، مصر، و المسايره متن المسامرته ، ختم المصنف کتابه ببيان عقيده اهلسنت اجمالاً ، المکتبته التجاريته الکبري مصر ص ۳۹۳ و اتفقو علي ان ذلک غير واقع ، ص ۳۹۳ 


 
نص ۱۲ امام فخرالدین الرازی تفسیر کبیر میں فرماتے ہیں؛۔ 


قولہ تعالیٰ فلن ،،،،،، الیٰ منہ محال۔ (ملخصاً)۔ عربی کے لیئے سکین دیکھیں۔ 


ترجمہ عربی؛ 


اللہ عزوجل کا فرمانا کہ اللہ ہرگز اپنا عہد جھوٹا نہ کریگا دلالت کرتا ہے کہ مولیٰ تعالیٰ سبحانہ اپنے ہروعدہ و، وعید میں جھوٹ سے منزہ ہے ، ہمارے اصحاب ِ اہلسنت وجماعت اس دلیل سے کذبِ الٰہی کو ناممکن جانتے ہیں کہ وہ صفتِ نقص ہے اور اللہ عزوجل پر نقص محال، اور معتزلہ اس دلیل سے ممتنع مانتے ہیں کہ کذب قبیح لذاتہ ہے تو باری عزوجل سے صادر ہونا محال، غرض ثابت ہوا کہ کذبِ الٰہی اصلاً امکان نہیں رکھتا۔ 


حوالہ ؛ التفسیر الکبیر، امام رازی، الجز الثالث (۳) ص (۱۴۳). زير تفسير آيت ۸۰ سوره البقره، طبع قديم المکتبته البهيه مصر
نص ۱۳ ، اللہ عزوجل کا ارشاد ہے 


وتمت کلمت ربک صدقا وعدلا لا مبدل لکلمٰتہ وھو السمیع العلیم۔ آیت ۱۱۵ سوره الانعام 

ترجمہ؛ پوری ہے بات تیرے رب کی سچ اور انصاف میں کوئی بدلنے والا نہیں، اس کی باتوں کا، اور وہی ہے سنتا جانتا ہے۔ 


اعلم ان ھذہ الاٰیۃ علی ان کلمۃ اللہ موصوفۃ بصفات کثیرۃ (الی ان قال) الصفۃ الثانیۃ من صفات کلمۃ اللہ کونھا صدقا والدلیل علیہ ان الکذب نقص والنقص علی اللہ تعالیٰ محال۔ 


ترجمہ؛ 

 

یہ آیت ارشاد فرماتی ہے کہ اللہ تعالیٰ کی بات بہت صفتوں سے موصوف ہے ، ازانجملہ اس کا سچا ہونا ہے اور اس پر دلیل یہ ہے کہ کذب عیب ہے اور عیب اللہ تعالیٰ پر محال۔ 


حوالہ؛ مفاتیح الغیب، یعنی تفسیر امام رازی ، تحت آیت سورہ الانعام ۱۱۵ المطبعته البهيته المصريه ج ۱۳ ص ۱۶۰ تا ۱۶۱ طبع اول
Update Ended:

Advertisements

One thought on “Rad-e-Ismail Dehlawi on Topic of Imkan al Kizb [Ur/Pst/En/Ar]”

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s