Hadith Rad al Shams Authenticity from Salaf [Ar/Ur/En]


On Request by one of Brother who asked to provide information on this topic!!!
حدیث رد الشمس (سورج کا پلٹ آنا ) پر معلوماتِ سلف الصالحین 
 
سوال: سیدنا علی رضی اللہ عنہ سے متعلق ایک حدیث بیان کی جاتی ہے جس میں انکے لیئے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے سورج پلٹانے کی دعا فرمائی تاکہ وہ اپنی عصر کی نماز ادا کرسکیں، مخالفین کہتےہیں کہ یہ حدیث موضوع ہے اور اس کو امام جوزی، وغیرہ نے رد کیا ہے، آپ کیا کہتے ہیں؟ 
جواب؛

 

Topic: Hadith Rad al Shams. Or. The Sun returns after it had set


The Holy Prophet (Peace be upon him) had been vested by such remarkable powers that he split the Moon into two with the movement of his finger, brough the Sun, that had set, back to offer afternoon (Asr) prayers. 


Mujadad e Islam Alahazrat Imam Ahmed Raza Khan al-Hanafi al Maturidi al Hindi approves and confirm the validity of this hadith that: 


At Sahba (in Khyber) the Holy Prophet (Peace be upon him) was resting and the lion of Allah Hazrat Ali (May Allah be pleased with him) had the Holy Prophet’s head in his lap. The Sun set and tears started trickling from the eyes of Hazrat Ali. When the Prophet (Peace be upon him) asked the reason, Hazrat Ali (may Allah be pleased with him) replied that he had not offered the Asr prayers and the Sun had set. Hearing this the most gracious, the most benevolent from beginning to enternity (peace be upon him) whose words were nothing but the words of Allah, prayed to Allah thus:” 


اللھم انہ کان فی طاعتک وطاعتہ رسولک فاردُد علیہ الشمس۔ 


O Allah, this dear {ali} was in Thy servie and in the service of Thy beloved Prophet therefore let the Sun come back.” 


Hazrat Isma (a companion) narrates that she herself saw that Sun returned after having set and there was sunshine on the peaks of the hills. 


Warning: 


This hadith has been proved and declared authentic by renowned ulema and muahddithin. I quote some of the names:- 


1. Hazrat Imam Tahawi (in Mushkil -ul- Hadith) 
2. Hazrat Qazi Ayaz (in Shifa Sharif) 
3. Muhadith Tahrani (in Muajjam) 
4. Ibn-e-Manda 
5. Ibn-e-Shaheen 
6. Ibn-e-Mardoya (in Naseem-ur-Riaz) 
7. Imam Qastalani (in Muwahib-e-Ladunnia) 
8. Imam Abdul Baqi Zarqani (in Sharah Mowahib) 
9. Imam Ahmad bin Saleh (in Naseem-ur-Riaz -Zarqani) 
10. Allama Khafaji (in Naseem-ur-Riaz) 
11. Hazrat Mulla Ali Qari (in Sharah Shifa) 
12. Imam Sakhawi (in Maqasad-e-Hasana) 
13. Allama Ibn-e-Abideen (in Raddul Mukhtar) 
14. Allama Halabi (in Seerat-e-Halbia) 
15. Allama Taqiuddin Halabi (in Nuzhatun Nazireen) 
16. Shaikh Imaduddin (in Behjatul Mahafil) 
17. Hafizl Hadith Allama Sayooti (in Kashfullabas) 
18. Allama Ashkhar Yamani (in Sharah Behjatull Mahafil) 
19. Qazi-ul Quzat (The cheif justice) Imam Iraqi (in Taqreeb) 
20. Allama Haqqi (in Tafseer Roohul Bayan) 
21. Mufassar-e-Quran Allama Syed Mahmood Aloosi (in Tafseer Roohul Ma’ani) 
22. Shaikhul Muhadithin Shah Abdul Haq Muhadith Dehlavi (in Madarajun Nabuwah) 
23. Shah Waliullah Muhadith Dehlavi (in Izalatul Khafa) 
24. Hazrat Mullan Jeevan (in Noorul Anwar) 
25. The devotee of the Holy Prophet (peace be upon him) Allama Nabhani (in Anwar-e-Muhammadia) 
26. Arifbillah Shaikh Fariduddin Attar (in Mantifquttair) 
27. Shaikhul Mashaikh Khwaja Ghulam Muhayyudin Qasuri (in Tuhfa-e-Rasoolia) 
28. Maulana Noor Baksh Tawakali (in Seerat Rasoo-e-Arabi) 
29. Imam Nowvi (in Sharah Muslim) 
30. Imam Ahl-u-Sunnah Alahazrat Barelvi (in Munirul Ain) 

{May Allah bless them all}


Note:  


The Saintly Abu Saeed has quoted references from the renowned and illustrious ulema and muhaddithin because people whose faith is frail and faltering declare this hadith false and by doing this they deprive the faithful of love for the Holy Prophet (peace be upon him). May Allah protect the faithful from such people. For going into the details of this issue the readers may read book of Allama Mufti Muhammad Ameen (dba)’s “Radd-e-Shams”. Insha Allah they will be fully convinced. 
بسم اللہ الرحمٰن الرحیم۔ 
 
والصلوٰۃ والسلام علیٰ افضل الانبیاء والمرسلین اما بعد۔ 
 
حضرت اسماء سے یہ حدیث روایت کی گئی ہے جسکا ترجمہ آپ نیچے پڑھ سکیں گے، یہ حدیث مختلف کتابوں میں مختلف طرق سے بیان ہوئی ہے سب سے پہلے عربی میں احادیث پیش خدمت ہیں ، ان کی صحت پر اقوالِ سلف بعد میں پیش کیا جائے گا۔پہلے عربی احادیث ملاحظہ فرمائیں 
 
شرح مشكل الآثار (3/ 92)
1067 – حَدَّثَنَا أَبُو أُمَيَّةَ، قَالَ: حَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللهِ بْنُ مُوسَى الْعَبْسِيُّ، قَالَ: حَدَّثَنَا الْفُضَيْلُ بْنُ مَرْزُوقٍ، عَنْ إِبْرَاهِيمَ بْنِ الْحَسَنِ، عَنْ فَاطِمَةَ بِنْتِ الْحُسَيْنِ، عَنْ أَسْمَاءَ ابْنَةِ عُمَيْسٍ، قَالَتْ: كَانَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يُوحَى إِلَيْهِ وَرَأْسُهُ فِي حِجْرِ عَلِيٍّ فَلَمْ يُصَلِّ الْعَصْرَ حَتَّى غَرَبَتِ الشَّمْسُ , فَقَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: ” صَلَّيْتَ يَا عَلِيُّ؟ ” قَالَ: لَا، فَقَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: ” اللهُمَّ إِنَّهُ كَانَ فِي طَاعَتِكَ وَطَاعَةِ رَسُولِكَ فَارْدُدْ عَلَيْهِ الشَّمْسَ “، قَالَتْ أَسْمَاءُ: فَرَأَيْتُهَا غَرَبَتْ , ثُمَّ رَأَيْتُهَا طَلَعَتْ بَعْدَمَا غَرَبَتْ
شرح مشكل الآثار (3/ 94)
1068 – حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ مُحَمَّدِ بْنِ الْمُغِيرَةِ، قَالَ: حَدَّثَنَا أَحْمَدُ بْنُ صَالِحٍ، قَالَ: حَدَّثَنَا ابْنُ أَبِي فُدَيْكٍ، قَالَ: حَدَّثَنِي مُحَمَّدُ بْنُ مُوسَى، عَنْ عَوْنِ بْنِ مُحَمَّدٍ، عَنْ أُمِّهِ أُمِّ جَعْفَرٍ، عَنْ أَسْمَاءَ ابْنَةِ عُمَيْسٍ، أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ صَلَّى الظُّهْرَ بِالصَّهْبَاءِ ثُمَّ أَرْسَلَ عَلِيًّا عَلَيْهِ السَّلَامُ فِي حَاجَةٍ فَرَجَعَ , وَقَدْ صَلَّى النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ الْعَصْرَ، فَوَضَعَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ رَأْسَهُ فِي حِجْرِ عَلِيٍّ فَلَمْ يُحَرِّكْهُ حَتَّى غَابَتِ الشَّمْسُ، فَقَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: ” اللهُمَّ إِنَّ عَبْدَكَ عَلِيًّا احْتَبَسَ بِنَفْسِهِ عَلَى نَبِيِّكَ فَرُدَّ عَلَيْهِ شَرْقَهَا ” قَالَتْ أَسْمَاءُ فَطَلَعَتِ الشَّمْسُ حَتَّى وَقَعَتْ عَلَى الْجِبَالِ وَعَلَى الْأَرْضِ , ثُمَّ قَامَ عَلِيٌّ فَتَوَضَّأَ وَصَلَّى الْعَصْرَ , ثُمَّ غَابَتْ وَذَلِكَ فِي الصَّهْبَاءِ فِي غَزْوَةِ خَيْبَرَ [ص:95] قَالَ أَبُو جَعْفَرٍ: فَاحْتَجْنَا أَنْ نَعْلَمَ مَنْ مُحَمَّدُ بْنُ مُوسَى الْمَذْكُورُ فِي إِسْنَادِ هَذَا الْحَدِيثِ، فَإِذَا هُوَ مُحَمَّدُ بْنُ مُوسَى الْمَدَنِيُّ الْمَعْرُوفُ بِالْفِطْرِيِّ وَهُوَ مَحْمُودٌ فِي رِوَايَتِهِ وَاحْتَجْنَا أَنْ نَعْلَمَ مَنْ عَوْنُ بْنُ مُحَمَّدٍ الْمَذْكُورُ فِيهِ فَإِذَا هُوَ عَوْنُ بْنُ مُحَمَّدِ بْنِ عَلِيِّ بْنِ أَبِي طَالِبٍ وَاحْتَجْنَا أَنْ نَعْلَمَ مَنْ أُمُّهُ الَّتِي رَوَى عَنْهَا هَذَا الْحَدِيثَ فَإِذَا هِيَ أُمُّ جَعْفَرٍ ابْنَةُ مُحَمَّدِ بْنِ جَعْفَرِ بْنِ أَبِي طَالِبٍ. فَقَالَ قَائِلٌ: كَيْفَ تَقْبَلُونَ هَذَا وَأَنْتُمْ تَرْوُونَ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ مَا يَدْفَعُهُ فَذَكَرَ مَا
 
المعجم الكبير للطبراني (24/ 144)
382 – حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيلُ بْنُ الْحَسَنِ الْخَفَّافُ، ثنا أَحْمَدُ بْنُ صَالِحٍ، ثنا مُحَمَّدُ بْنُ أَبِي فُدَيْكٍ، أَخْبَرَنِي مُحَمَّدُ بْنُ مُوسَى الْفِطْرِيُّ، عَنْ عَوْنِ بْنِ مُحَمَّدٍ، عَنْ أُمِّ جَعْفَرٍ، عَنْ أَسْمَاءَ بِنْتِ عُمَيْسٍ، أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ صَلَّى الظُّهْرَ بِالصَّهْبَاءِ، ثُمَّ أَرْسَلَ عَلِيًّا فِي حَاجَةٍ، فَرَجَعَ وَقَدْ صَلَّى النَّبِيُّ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ الْعَصْرَ، فَوَضَعَ النَّبِيُّ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ رَأْسَهُ فِي حِجْرِ عَلِيٍّ فَنَامَ، فَلَمْ يُحَرِّكُهُ حَتَّى غَابَتِ الشَّمْسُ، فَقَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: «اللهُمَّ إِنَّ عَبْدَكَ عَلِيًّا احْتَبَسَ بِنَفْسِهِ عَلَى نَبِيِّهِ فَرُدَّ عَلَيْهِ الشَّمْسَ» قَالَتْ: فَطَلَعَتْ عَلَيْهِ الشَّمْسُ حَتَّى رُفِعَتْ عَلَى الْجِبَالِ وَعَلَى الْأَرْضِ، وَقَامَ عَلِيٌّ فَتَوَضَّأَ وَصَلَّى الْعَصْرَ، ثُمَّ غَابَتْ وَذَلِكَ بِالصَّهْبَاءِ 
 
المعجم الكبير للطبراني (24/ 147)
390 – حَدَّثَنَا الْحُسَيْنُ بْنُ إِسْحَاقَ التُّسْتَرِيُّ، ثنا عُثْمَانُ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ، ح [ص:148] وَحَدَّثَنَا عُبَيْدُ بْنُ غَنَّامٍ، ثنا أَبُو بَكْرِ بْنِ أَبِي شَيْبَةَ، قَالَا: ثنا عُبَيْدُ اللهِ بْنُ [ص:149] مُوسَى، عَنْ فُضَيْلِ بْنِ مَرْزُوقٍ، عَنْ إِبْرَاهِيمَ بْنِ الْحَسَنِ، عَنْ فَاطِمَةَ بِنْتِ حُسَيْنٍ [ص:150]، عَنْ أَسْمَاءَ بِنْتِ عُمَيْسٍ، قَالَتْ: كَانَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ [ص:151] يُوحَى إِلَيْهِ وَرَأْسُهُ فِي حِجْرِ عَلِيٍّ، فَلَمْ يُصَلِّ الْعَصْرَ حَتَّى غَرَبَتِ الشَّمْسُ فَقَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: «اللهُمَّ إِنَّ عَلِيًّا كَانَ فِي طَاعَتِكَ وَطَاعَةِ رَسُولِكَ فَارْدُدْ عَلَيْهِ الشَّمْسَ» قَالَتْ أَسْمَاءُ: «فَرَأَيْتُهَا غَرَبَتْ وَرَأَيْتُهَا طَلَعَتْ بَعْدَمَا غَرَبَتْ» وَاللَّفْظُ لِحَدِيثِ عُثْمَانَ
الكتب » الثالث من فوائد أبي عثمان البحيري
(حديث مرفوع) أَخْبَرَنَا أَبُو مُحَمَّدٍ عَبْدُ اللَّهِ بْنُ مُحَمَّدِ بْنِ الْحَسَنِ ، ثنا مُحَمَّدُ بْنُ أَحْمَدَ بْنِ مَحْبُوبٍ ، ثنا سَعِيدُ بْنُ مَسْعُودٍ ، ثنا عُبَيْدُ اللَّهِ بْنُ مُوسَى ، ثنا فَضْلُ بْنُ مَرْزُوقٍ ، عَنْ إِبْرَاهِيمَ بْنِ الْحَسَنِ ، عَنْ فَاطِمَةَ بِنْتِ الْحُسَيْنِ ، عَنْ أَسْمَاءَ بِنْتِ عُمَيْسٍ ، قَالَتْ : كَانَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، يُوحَى إِلَيْهِ وَرَأْسُهُ فِي حِجْرِ عَلِيٍّ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ ، فَلَمْ يُصَلِّ الْعَصْرَ حَتَّى غَرَبَتِ الشَّمْسُ ، فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : ” صَلَّيْتَ الْعَصْرَ ” . قَالَ : لا . قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : ” اللَّهُمَّ إِنَّهُ كَانَ فِي طَاعَتِكَ وَطَاعَةِ نَبِيِّكَ , فَارْدُدْ عَلَيْهِ الشَّمْسَ ” . قَالَتْ أَسْمَاءُ : فَرَأَيْتُهَا غَرَبَتْ ، ثُمَّ رَأَيْتُهَا طَلَعَتْ بَعْدَ مَا غَرَبَتْ . 
 
الكتب » تاريخ دمشق لابن عساكر
رقم الحديث: 44459 
(حديث مرفوع) أَخْبَرَنَا أَبُو الْمُظَفَّرِ بْنُ الْقُشَيْرِيِّ ، وَأَبو الْقَاسِمِ الْمُسْتَمْلِي ، قَالا : أنا أَبُو عُثْمَانَ الْبَحِيرِيُّ ، أنا أَبُو مُحَمَّدٍ عَبْدُ اللَّهِ بْنُ مُحَمَّدِ بْنِ الْحَسَنِ الدندانقاني بِهَا ، نا مُحَمَّدُ بْنُ أَحْمَدَ بْنِ مَحْبُوبٍ ـ وَفِي حَدِيثِ ابْنِ الْقُشَيْرِيِّ : نا أَبُو الْعَبَّاسِ الْمَحْبُوبِيُّ ـ نا سَعِيدُ بْنُ مَسْعُودٍ . ح وَأَخْبَرَنَا أَبُو الْفَتْحِ الْمَاهَانِيُّ ، أنا شُجَاعُ بْنُ عَلِيٍّ ، أنا أَبُو عَبْدِ اللَّهِ بْنُ مَنْدَهْ ، أنا عَلِيُّ بْنُ أَحْمَدَ الْبُسْتِيُّ ، نا أَبُو أُمَيَّةَ مُحَمَّدُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ ، نا عُبَيْدُ اللَّهِ بْنُ مُوسَى ، نا فُضَيْلُ بْنُ مَرْزُوقٍ ، عَنْ إِبْرَاهِيمَ بْنِ الْحَسَنِ ـ زَادَ أَبُو أُمَيَّةَ : ابْنُ الْحَسَنِ ـ عَنْ فَاطِمَةَ بِنْتِ الْحُسَيْنِ ، عَنْ أَسْمَاءَ بِنْتِ عُمَيْسٍ ، قَالَتْ : كَانَ رَسُولُ اللَّه صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يُوحَى إِلَيْهِ وَرَأْسُهُ فِي حِجْرِ عَلِيٍّ ، فَلَمْ يُصَلِّ الْعَصْرَ حَتَّى غَرُبَتِ الشَّمْسُ ، فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : ” صَلَّيْتُ الْعَصْرَ ؟ ” وَقَالَ أَبُو أُمَيَّةَ : ” صَلَّيْتُ يَا عَلِيُّ ؟ ” قَالَ : لا ، فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : ـ وَقَالَ أَبُو أُمَيَّةَ : فَقَالَ : النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : ـ ” اللَّهُمَّ إِنَّهُ كَانَ فِي طَاعَتِكَ ، وَطَاعَةِ نَبِيِّكَ ـ وَقَالَ أَبُو أُمَيَّةَ : رَسُولُكَ ـ فَارْدُدْ عَلَيْهِ الشَّمْسَ ” ، قَالَتْ أَسْمَاءُ : فَرَأَيْتَهَا غَرُبَتْ ، ثُمَّ رَأَيْتُهَا طَلَعَتْ بَعْدَمَا غَرُبَتْ ، تَابَعَهُ عَمَّارُ بْنُ مَطَرٍ الرَّهَاوِيُّ ، عَنْ فُضَيْلِ بْنِ مَرْزُوقٍ . .
الكتب » طرح التثريب للعراقي » كِتَابُ الْجِهَادِ » بَابُ الْغَنِيمَةِ وَالنَّفَلِ
رقم الحديث: 1284 
(حديث مرفوع) وَرَوَى الطَّبَرَانِيُّ فِي مُعْجَمِهِ الْكَبِيرِ ، بِإِسْنَادٍ حَسَنٍ أَيْضًا ، عَنْ أَسْمَاءَ بِنْتِ عُمَيْسٍ ، أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ” صَلَّى الظُّهْرَ بِالصَّهْبَاءِ ، ثُمَّ أَرْسَلَ عَلِيًّا فِي حَاجَةٍ فَرَجَعَ ، وَقَدْ صَلَّى النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ الْعَصْرَ ، فَوَضَعَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ رَأْسَهُ فِي حِجْرِ عَلِيٍّ فَنَامَ ، فَلَمْ يُحَرِّكْهُ حَتَّى غَابَتْ الشَّمْسُ ، فَقَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : اللَّهُمَّ إنَّ عَبْدَك عَلِيًّا احْتَبَسَ بِنَفْسِهِ عَلَى نَبِيِّهِ فَرُدَّ عَلَيْهِ الشَّمْسَ . قَالَتْ أَسْمَاءُ : فَطَلَعَتْ عَلَيْهِ الشَّمْسُ حَتَّى وَقَفَتْ عَلَى الْجِبَالِ وَعَلَى الأَرْضِ ، وَقَامَ عَلِيٌّ فَتَوَضَّأَ ، وَصَلَّى الْعَصْرَ ثُمَّ غَابَتْ ، وَذَلِكَ بِالصَّهْبَاءِ ” . وَفِي لَفْظٍ آخَرَ : ” كَانَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ إذَا نَزَلَ عَلَيْهِ الْوَحْيُ يَكَادُ يُغْشَى عَلَيْهِ ، فَأَنْزَلَ اللَّهُ عَلَيْهِ يَوْمًا ، وَهُوَ فِي حِجْرِ عَلِيٍّ ، فَقَالَ لَهُ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : صَلَّيْت الْعَصْرَ ؟ فَقَالَ : لا يَا رَسُولَ اللَّهِ ، فَدَعَا اللَّهَ ، فَرَدَّ عَلَيْهِ الشَّمْسَ حَتَّى صَلَّى الْعَصْرَ . قَالَتْ : فَرَأَيْت الشَّمْسَ طَلَعَتْ بَعْدَ مَا غَابَتْ حِينَ رَدَّتْ ، حَتَّى صَلَّى الْعَصْرَ ” .
Imam Allama Muhammad bin Yusuf bin Ismail al-Nabhani (rta) has written in his famous book Hujatal-lahi alal Alameen fi Mowjizat e Sayidil Mursaleen, that!

The miraculous returning of the sun is proven for the Prophet (sal Allaho Alehi wasalam), aima of hadith (scholars of science of hadith) has narrated it in their books, Imam Qastalani has written in his Muwahib-laduniya that!”

“As far as the issue of returning of the sun for Prophet (alehisalam), so in this regard there is hadith of Hazrat Asma bint a’mees, that [explaining hadith here as written before]…….Asma’a says, and i had seen that the sun turns back, and the setted back sun shines back and its light was shed upon mountains and on ground…this [happening] was occurred at Sahba [place of Khyber]. This narration was narrated by Imam Tahtawi (rta), Imam Tahtawi says that Ahmad bin Saleh [always use to say], “who-so-ever related with religious knowledge [ilm-al-deen], he must not be left [himself] out [from] learning [this hadith], because it is among the Symbol and Argument of Nabuwah [Prophet-hood].”

تفصیلات ، مفہوم و ترجمہ: 
 
اس حدیث کو حدیث رد شمس (سورج کا لوٹنا) بھی کہا جاتا ہے اور یہ معجزاتِ نبویہ مین شمار ہوتا ہے۔  
 
امام علامہ محمد بن یوسف بن اسمٰعیل النبھانی رحمتہ اللہ علیہ اپنی معرکۃ الاراء تصنیف حجتہ اللہ علی العالمین فی معجزات سید المرسلین میں تحریر فرماتے ہیں کہ؛ 
 
“سورج کا معجزانہ طور پر پلٹنا نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے لیئے ثابت ہے، اسے ائمہ حدیث نے اپنی کتابوں میں نقل کیا ہے۔ امام قسطلانی مواہب لدنیہ میں تحریر فرماتے ہیں؛ 
 
جہاں تک نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کےلیئے سورج کے لوٹنے کا تعلق ہے، تو اس بارے میں حضرت اسماء بنت عمیس کی روایت ہے، کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم پر وحی اتر رہی تھی اس وقت آپ کا سراقدس حضرت علی المرتضیٰ کرم اللہ تعالیٰ وجہہ الکریم کی گود میں تھا۔ انہوں نے اس وقت تک عصر کی نماز نہ پڑھی تھی یہاں تک کہ سورج غروب ہوگیا۔ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ان سے دریافت فرمایا؛۔ علی! کیا تم نے عصر کی نماز پڑھی تھی؟ انہوں نے عرض کیا نہیں یارسول اللہ! تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے دعا مانگی! اے اللہ ! علی (رض) تیری اور تیرے رسول (صلی اللہ علیہ وسلم) کی طاعت وخدمت میں تھا، لہٰذا اس کے لیئے سورج کو واپس لوٹا (تاکہ وہ نمازِ عصر ادا کرسکے)۔ اسماء بیان فرماتی ہیں۔ میں نے دیکھا کہ ڈوبا ہوا سورج، پھر طلوع کرآیا اور اس کی روشنی پہاڑوں اور زمین پر پڑنے لگی۔ یہ واقعہ خیبر کے مقام صہباء پر پیش آیا۔ اس روایت کو امام طحطاوی نے نقل فرمایا؛۔ امام طحطاوی فرماتے ہیں کہ احمد بن صالح کہا کرتے تھے، کہ جس شخص کو علم دین سے تعلق ہے وہ حدیثِ اسماء کو یاد کرنے سے پیچھے نہ رہے، کیونکہ یہ نبوت کی علامت اور دلیل ہے۔

Imam Tahtawi and Qadi Iyad Maliki (rtaj) has graded this hadith as ‘Sahih’. Ibne Manda and Ibne Shahin has did “Takhrij” [Graduation] and Ibn-e-Mardowya has narrated this hadith through Syaduna Abu Huraira (rd). Tabrani has narrated with ‘Sanad-e-Hasan’ {Hasan Grade of Narration} through Hazrat Asma (rda). Tabrani’s words are …….{same hadith here again}.” 

 
اس حدیث کو امام طحطاوی اور قاضی عیاض رحمتہ اللہ علیہ نے صحیح قرار دیا ہے ۔ ابن مندہ اور ابن شاھین نے حدیثِ اسماء سے اسکی تخریج کی اور ابن مردویہ نے اسے حضرت ابوہریرہ سے روایت کیا۔ طبرانی نے اسے سند حسن کے ساتھ حضرت اسماء رضی اللہ عنہا سے نقل کیا۔ طبرانی کے الفاظ یہ ہیں:”حضرت اسماء سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے مقام صہباء میں ظہر کی نماز پڑھی، بعد ازاں نمازِ عصر کے بعد حضرت علی (رض) کو بلا بھیجا (انہوں نے ابھی عصر کی نماز نہیں پڑھی تھی) جب وہ تشریف لائے، تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان کی گود میں اپنا سرمبارک رکھا، حضرت علی (رض) نے آپ کو جنبش دینا مناسب نہیں سمجھا یہاں تک کہ سورج غروب ہوگیا، جب آپ کی آنکھ کھلی تو آپ نے دیکھا کہ حضرت علی (رض) کی نمازِ عصر کا وقت جاتا رہا ، تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے دعا فرمائی” اے اللہ! تیرا بندہ علی تیرے نبی کی خدمت میں تھا (اور اسکی نماز قضا ہوگئی ہے) تو سورج کو مشرق کی طرف لوٹا دے”۔ اسماء بیان کرتی ہیں کہ سورج لوٹ کر اتنا اٹھ آیاکہ اسکی دھوپ پہاڑوں پر اور زمین پر پڑنے لگی۔ اسکے بعد حضرت علی اٹھے اور وضو فرما کر عصر کی نماز ادا فرمائی، پھر سورج غروب ہوگیا۔ یہ واقعہ مقام صہباء کا ہے۔  
 
امام طبرانی اوسط میں سند حسن کے ساتھ جابر رضی اللہ عنہ سے روایت کرتے ہیں کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے سورج کو حکم دیا تو وہ کچھ دیر کے لیئے ٹھہر گیا۔ ” اختتام 
Imam Tabrani in Awsat, narrating with “Hasan Chain” through Hazrat Jaabir (rd) that Prophet (sal Allaho alehi wasalam) ordered sun to stand by, which happened“.
 
حوالہ؛ حجتہ اللہ علی العالمین فی معجزات سید المرسلین (اردو) ، تصنیف امام یوسف بن اسماعیل نبھانی (رح) نوریہ رضویہ  
پبلیکیشنز لاھور پاکستان، ص ۶۵۵ و ۶۵۶ 
جمہور نے اس حدیث کی تصدیق کی ہے سوائے چند علماء کے انہوں نے بھی اسکی جزءیات پر بحث کی ہے نا کہ اسکی اصل کو غلط قرار دیا ہے، علم الحدیث کا عام قائدہ ہے کہ جو حدیث ضعیف بھی ہو وہ فضائل میں مقبول ہوتی ہے، اور دو اصول مزید بھی ہیں کہ ایک تو یہ کہ جب جمہور یعنی اکثریت اس کو مان لیتی ہے تو پھر کسی بحث کی گنجائش نہیں رہتی، دوسرے یہ کہ اس حدیث کو دیگر طرق سے اسنادِ حسن سے بھی بیان کیا گیا ہے۔ جیسا کہ آگے ذکر ہوگا۔ اور قائدہ مشہورہ ہے ہے کہ جب ایک حدیث ایک طرق سے ضعیف ہو لیکن اسکی حمایت میں صحیح طرق سے بیان کی گئی ہو یا اس پر اقوال موجود ہوں تو اس کو بھی قبولیت حاصل ہوجاتی ہے۔
Jamhoor {Majority,Unanimously agreed upon} has proven authenticated this hadith, despite of few ulama, and even so those [ulemas] talk about its sections, not about its Asl ‘Reality’ This is common rule among the sciences of hadith that, if a hadith is considered Daeef, still it can be used as ‘Maqboo’ [praised worthy] in the context of Fadhail [Excellence]. and two more rules are also there, one is that when Jamhoor [Majority] accepted it, then there is no ground left behind for discussion, and second rule, is; this hadith has also been narrated through another chain which is hassan, [as will be explained later] and it is established science that, if some narration is daeef but the same has another chain which is authentic then, this supportive stand gives authenticity to that daeef hadith too.  
 
مخالفین اس روایت پر اسکی سند میں اعتراض کرتے ہیں؛ لیکن حافظ العراقی نے اس کو سند حسن کہا ہےاور امام ھیثمی (رح) نے فرمایا رجال الصحیح یعنی اسکے رجال صحیح ہیں، یعنی ان دونوں کے نزدیک سند کے تمام راوی ثقہ صدوق اور حسن الاسانید ہیں،امام ہیثمی کا یہ بیان ہے
The people object in its Isnad [chain] but Hafidh Iraqi (rta) has degreed with Sanad-e-Hasan and Imam Haythami (rta) said “Rijal al Sahih” [narrators are Sahih authentic]. This means, that, according to Imam Haythami and Imam Hafidh al Iraqi both are having same belief regarding the authenticity, truthful-ness of its narrators, and declared them, Thiqa [Trustworthy] [Suddooq-Truthful] and Hasan – al- Asaa’need, this is saying of Imam Haythami! [check scan below] 

 

 
مجمع الزوائد ومنبع الفوائد (6/ 140) 
رَوَاهُ الطَّبَرَانِيُّ، وَرِجَالُهُ رِجَالُ الصَّحِيحِ غَيْرَ مَرْزُوقِ بْنِ أَبِي الْهُذَيْلِ وَهُوَ ثِقَةٌ 
اور جو حافظ عراقی سے اوپر روایت عربی میں بیان کی گئی ہے اسکی سند کے متعلق حافظ کا یہ کہنا ہے؛۔ 
and this is the saying of Hafidh Iraqi [the hadith written before in arabic], about its Isnad, Hafiz is saying this!. ‘Hadith al Marfu; narrated by al-Tabrani in Mojam’al-Kabeer, with Hasan Isnad.”
 
الكتب » طرح التثريب للعراقي » كِتَابُ الْجِهَادِ » بَابُ الْغَنِيمَةِ وَالنَّفَلِ 
رقم الحديث: 1284 
حديث مرفوع) وَرَوَى الطَّبَرَانِيُّ فِي مُعْجَمِهِ الْكَبِيرِ ، بِإِسْنَادٍ حَسَنٍ أَيْضًا 
 
ان محدثین کے علاوہ سیرت حلبیہ میں امام حلبی رحمتہ اللہ علیہ نے متعدد مقامات پر بے انتہا بیش بہا معلومات اور  
اقوال ِ سلف پیش کیئے ہیں جو ہم یہاں پر لکھ رہے ہیں ملاحظہ کریں 
 
A part from these Muhaditheens [scholars of hadith], famous Imam of Seerah [biography] Imam Halabi(rta) has given really informative analysis and presented the sayings of Salaf as Saliheen, which can be read in Scans folder. In Short he also approved this hadith authentic. Check the scans to read in Urdu.
 
سیرت حلبیہ میں لکھا ہے (نوٹ، عکس ، سکینز وغیرہ اپلوڈ کردیئے گئے ہیں فولڈر لنک میں)۔کہ!۔ 
for more scans check the link in the end.


“حضرت اسماء بنت عمیس فرماتی ہیں کہ غزوہ خیبر کے دوران ایک دن حضور صلی اللہ علیہ وسلم پر وحی نازل ہورہی تھی اس وقت آپ کا سرمبارک حضرت علی کی گود میں رکھا ہوا تھا۔ حضور صلی اللہ علیہ وسلم پر یہ کیفیت سورج غروب ہونے کے بعد جاکر ختم ہوئی جب کہ حضرت علی رض نے اس وقت تک عصر کی نماز نہیں پڑھی تھی غرض جب حضور صلی اللہ علیہ وسلم کو اس کیفیت سے افاقہ ہوا تو آپ نے حضرت علی سے پوچھا 
 
کیا تم نے عصر کی نماز پڑھ لی تھی؟ 
انہوں نے عرض کیا نہیں!۔ 
آپ نے دعا فرمائی؛۔ اے اللہ یہ تیری اور تیرے رسول کی اطاعت اور خدمت میں تھا اس لیئے اسکے واسطے سورج کو لوٹا دے۔”  
 
حضرت اسماء کہتی ہیں کہ میں نے دیکھا سورج ڈوب جانے کے بعد دوبارہ نکل آیا۔  
 
بعض محدثین نے کہا ہے کہ جس شخص کو علم سے کچھ لگاؤ اور واقفیت ہے وہ ہرگز اس حدیث سے بے خبر نہیں ہوسکتا اسلیئے کہ یہ واقعہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی نبوت کی نشانیوں میں سے ایک ہے۔ یہ (حدیثِ متصل) ہے ۔ کتاب امتناع نے بھی اس حدیث کو نقل کیا ہے اور لکھا ہے کہ یہ حدیث حضرت اسماء سے پانچ سندوں کے ساتھ روایت ہے۔ 
…….some muhaditheen has said that if anyone has a least relation with knowledge, he cannot be unaware of this hadith, because this incident is among the Signs of Nabuwah of Holy Prophet (peace be upon him). This is hadith al Muttasil. Book Imtina has also recorded this hadith, and writes that this hadith has been narrated by Syaduna Asma (rda) through 5 isnads.”
 
امام صفحه ۵۲۸ جلد ۱ نصف الآخر میں لکھتے ہیں؛۔ 
 
اب اس بات سے ابن کثیر کا وہ قول رد ہوجاتا ہے جو پیچھے بیان ہوا (نوٹ ضرب حق: جو ہم آگے تحریر کریں گے)۔ جو  
پیچھے بیان ہوا کہ اس حدیث کو صرف ایک عورت نے بیان کیا ہے جو کہ بالکل غیرمعروف ہے اور جس کا حال کچھ معلوم نہیں ہے۔ اسی طرح اس سے ابن جوزی کے اس قول کی بھی تردید ہوجاتی ہے کہ یہ حدیث بلاشبہ موضوع یعنی من گھڑت ہے۔ 
In Seerah al Halabiyah page 528 vol 1 Imam Halabi further writes that!

…now from this thing, that saying of Ibne Kathir has been rejected where he said, that this hadith is been narrated by only one woman and which is unknown, and as such saying of Ibn al Jawzi is also refuted, who said this hadith is Modu i.e., fabricated.”

further Imam halabi said: “….book of ‘Imtana’ narrates this hadith with five isnads, but in the fifth sanad, it has these words that,”on the day of Khyber, Hazrat Ali (rd) was busy with Prophet (sal-Allaho-alehi wasalam) in distributing ‘Mal-e-Ghaneemah’ ‘Bounty’ at that time, the sun sets down ………..[and then all of hadith as written before Imam halabi writes] and then Hazur (sal Allaho alehi wasalam) performed ablution and while sitting in Masjid, said two or three words, which seems to be in Habashi Language, at that time sun rises again likewise in the time of Asr, hazrat Ali (rd) stands up and he also performed ablution and then Namaz [Salah. Prayers] of Asr. Now You (Sal Allaho alehi wasalam) again recites those words and the sun was gone to set down in maghrib, and there was a voice like [the voice of cutter cutting the wood].”

but this narration is against all isnads, but we can say that, some of the news has been not presented in this sanad, actually first Hazrat Ali (Rd) was with Prophet (alehisalatowasalam) in Khyber in distributing Ghanimat, and then Prophet alehisalam sleeps,,,,as explained in hadith,,,,,and you alehisalam awake when sun was set down, in this way there could be no contradiction left.” [end of the page 528]

In Seerah al Halabiya Vol 1 P. 516 its written that:

…In this regard [the day when sun was stopped for the Prophet]……when that day came, Quraishians were out of their homes and waiting for the arrival of such Qafila [Caravan]. So the daylight was setting down, but Caravan does not arrives, until the Sun was going to [completely] set down i.e., [night fall]….at that time Prophet (alehisalam) did supplication from Allah to stop the sun setting down for until while that the Caravan could arrive [means, to stop or slow down the sun until the caravan reaches them and quraish could not say that it was a lie], so Allah stopped the sun on that place for a time being, uptil the Caravan reached to them, in which all other signs were also there which was said by the Prophet (sal Allaho Alehi wasalam).”

Aqul; the writer [Imam halabi writes]! I say,,,,,may be these words were for some other Qafila, about which you fixed a day, about which you passed by and seen, thus in previous narration has no doubt about which you said that, [caravan] is in now reaching to the point of Thaniya.

About this even Hamziya has also narrated it in his stanza from a poem.

Translation:

And the shining sun obeyed you (alehisalam) during its time of setting down, thus it was not set down, but upon your wish was stopped at place for a while
“.

On the same page Imam halabi is writing that:

In one narration its say that, sun was stopped from shining back, so in one narration its written that, a polytheist when asked Prophet alehi salam that tell us about our Caravan?. You alehi salato wasalam answered ,, I pass besides your caravan in a place called ‘Tane’eem’. People asked you how many camels where there in that caravan?, what kind of goods were they having?, and who and who was in that caravan?. Upon these questions, Prophet alehisalam replied, I was not able to think about that, i.e, how many camels,’ but then again You alehisalam was questioned by them, then Prophet alehisalam replied and informed them about all questions and said,’this caravan will reached you before the sun sets’. So Allah [upon the supplication of Prophet alehisalam] stop the sun till that time until the caravan reaches to Makkah. When these people gets out to check the caravan, suddenly someone among them said:

‘…look the sun again arises, on the same time, somebody else said loudly, and Look! the caravan also arrived and they are having all those men such and such [as Prophet alehisalam mentioned]“.

On Page 517 Imam halabi further writes that:

“As far as the question of the stopping of Sun is, this means that the movement of the sun was totally stopped. One saying is that, it was not fully stopped but actually the movement was slowed down. One other saying says, that this means the time was un-lapsed from its place for a while.”

Scholars has write that this event is only occured once for Prophet alehisalam and was never done again. One narration explains that, during the battle of Khandaq (Ghazwa-e-Khandaq), day, the sun was also stopped for Prophet (sal Allaho alehi wasalam), until you performed the prayers of Asr, and after that the sun goes down. But this narration is been refuted by this saying, that in which its said, that on that day Prophet alehisalam performed Asr prayers after the sunset {Ghurub}, and said that ‘these polytheists has stopped us from performing middle prayers i.e. Asr’..its details will be explaind further.

But some has written another saying about it, that ghazwa e Khandaq was for many many days, among those, one day the sun was stopped between the [red-lines setting down scenario] and when it becames yellowish], and then you performed prayers, and in some days the sun was not been stopped but, you prayed after sunset. Some people among these [thinkers] has said, that the [timelate-reddish-or-yellowish related] narration’s narrator is another person and the hadith [which say about complete sunset- i.e, rad al shams]’s narrator is another person, and as such these two things are been said about two different narrations“.

Imam Halabi further on the same page writes that:

Other Prophets for whom the sun was been stopped:

“….from a daeef narration, its narrated that for Prophet Dawood alehisalam (david), once the sun was stopped from setting down. Allama baghawi (rta) has written that just like this incidence, the sun was also been set down for Prophet Sulaiman (alehisalam) [solomon], so narrated by Hazrat Ali (rd) that Allah Tala, has ordered those angels who are appointed upon the sun to push it backside, so that Sulaiman (alehisalam) can perform Salah in the prescribed time.”

For the Sulaiman (alehisalam) the Sun was Stopped!!!

This means that for Prophet Sulaiman (alehisalam) the sun was turned back, actually not stopped, and here is the discussion about its stopping goes on, some people say, that Suleman alehisalam cutted off his ridersbelt of the horses and cutt off their heads because of whom he was not able to perform Salah in prescribed time of Asr, means he though was not able to follow the orders of Allah that time [i.e, performing salah on time] and he does not did Sadaqah [for that], still he did this in respect of the orders of Allah because the time’s been needed to do charity too.”

On page 518 its written that:

For Yushay alehisalam sun was stopped,,,,,,just like that another narration is about Prophet Musa [moses] (alehisalam)’s nephew hazrat Yusha (alehisalam) was also blessed with [this miracle], the such one is Ibn al-Nuh, Ibne Yusuf Siddiq alehisalam, and after Moses, he was his vice, and did the work of promoting religion of God.

[Admin Note: more will be translated soon] Update ends

 
مزید لکھتے ہیں؛ کتاب امتناع میں اس حدیث کو پانچوں سندوں کے ساتھ ذکر کیا گیا ہے مگر پانچویں سند میں یہ لفظ ہیں کہ خیبر کے دن حضرت علی ، حضور کے ساتھ مال غنیمت تقسیم کرنے میں مصروف تھے کہ اسی میں سورج غروب ہوگیا تھا۔ اس وقت حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے پوچھا کہ اے علی! کیا تم نے عصر کی نماز پڑھ لی؟۔ انہوں نے کہا نہیں۔ حضور نے یہ سن کر فوراً وضو فرمائی اور مسجد میں بیٹھ کر دو یا تین کلمے فرمائے جو ایسا لگتا تھا جیسے حبشی زبان کے کلمے ہوں۔ اسی وقت سورج پہلے کی طرح عصر کے وقت لوٹ آیا۔ حضرت علی اٹھے اور انہوں نے وضو کرکے عصر کی نماز پڑھی ۔ اب آنحضرت نے پھر اسی طرح کلمے فرمائے جیسے پہلے فرمائے تھے جس سے سورج پھر واپس مغرب میں جاکر چھپ گیا جس سے ایسی آواز سنائی دی جیسے آرہ چلنے کی آواز ہوئی ہے۔  
 
مگر یہ روایت تمام سندوں کے خلاف ہے البتہ یہ کہا جاسکتا ہے کہ اس سند میں کچھ خبریں رہ گئی ہیں۔ اصل میں پہلے حضرت علی رض، حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ خیبر کے مال غنیمت کی تقسیم میں مصروف تھے اس کے بعد آپ ان کی گود میں سررکھ کر سوگئے اور پھر آپ کی آنکھ اسوقت کھلی جب کہ سورج غروب ہوچکا تھا۔ اس طرح ان روایتوں میں کوئی اختلاف نہیں رہتا۔ (اختتام صفحہ مذکورہ)۔ 
 
سیرت حلبیہ جلد اول کے صفحہ 516 پر لکھا ہے کہ ؛۔ 
 
اس سلسلے میں حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے لیئے سورج یعنی دن کو روکا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔جب وہ دن آیا تو قریش کے لوگ گھروں سے نکل کر اس قافلے کا انتظار کرنے لگے ۔ آخر دن ڈھلنے لگا مگر وہ قافلہ نہیں پہنچا یہاں تک کہ سورج چھپنے کے قریب ہوگیا۔ اس وقت حضور نے اللہ تعالیٰ سے دعا فرمائی کہ سورج کو غروب ہونے سے اس وقت تک کے لیئے روک دے جب تک وہ قافلہ نہ آجائے (تاکہ اس طرح کفار آپ کو جھوٹا نہ سمجھیں) چنانچہ حق تعالیٰ نے سورج کو اس کی جگہ روک دیا یہاں تک کہ وہ قافلہ دن چھپنے سے پہلے پہنچ گیا جس میں وہ ساری علامتیں موجود تھیں جو حضور نے بتلائی تھیں۔
اقول؛ مولف کہتے ہیں: ممکن ہے یہ بات کسی دوسرے قافلے کے بارے میں آپ نے دن متعین کرکے فرمائی ہو جس کے پاس آپ کا گزر ہوا تھا۔ لہٰذا اس گزشتہ روایت میں کوئی شبہ نہیں پیدا ہوتا جس کے متعلق آپ نے فرمایا تھا کہ وہ اب ثنیہ کے مقام پر پہنچنے والا ہے۔  
 
سورج کے روکے جانے کے متعلق ہمزیہ کے شاعر نے بھی اپنے اس شعر میں اشارہ کیا ہے۔  
 
وشمس الضحیٰ طاعتک وقت مفیبھا 
فما غربت بل والفنک بوقفتہ 
 
ترجمہ اردو؛ اور چمکتے ہوئے سورج نے اپنے غروب ہونے کے وقت آپ کے حکم کی تعمیل کی چنانچہ وہ غروب نہیں ہوا بلکہ آپ کی خواہش کے مطابق کچھ دیر تک اپنی جگہ پر ٹھہرا رہا۔  
 
اسی صفحہ پر مزید لکھتے ہیں :۔  
 
ایک روایت میں یہ ہے کہ آپ کے سورج کو طلوع ہونے سے روکا گیا تھا۔ چنانچہ ایک روایت میں ہے کہ ایک مشرک نے جب آپ سے یہ کہا کہ ہمیں ہمارے قافلے کے متعلق بتاؤ تو آپ نے فرمایا کہ میں تمہارے قافلے کے پاس سے تنعیم کے مقام پر گزرا تھا۔ لوگوں نے پوچھا کہ اس قافلے میں کتنے اونٹ تھے کیا سامان تھا اور قافلے میں کون کون لوگ تھے۔ اس پر آپ نے فرمایا کہ میں اس پر غور نہیں کرسکا تھا۔ مگر اس کے بعد پھر آپ سے پوچھا گیا تو آپ نے قافلے میں اونٹوں کی تعداد سامان کی تفصیل اور قافلے والوں کے متعلق خبر دی اور فرمایا؛ (یہ قافلہ آفتاب طلوع ہونے کے وقت تمہارے پاس پہنچ جائے گا)۔ چنانچہ اللہ تعالیٰ نے (حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی دعا پر) اس وقت تک سورج کو طلوع ہونے سے روکے رکھا جب تک کہ وہ قافلہ مکے نہیں پہنچ گیا۔ یہ لوگ جب قافلے کو دیکھنے کے لیئے نکلے تو اچانک کسی نے کہا 
 
لو یہ سورج تو نکل آیا۔اسی وقت کسی دوسرے نے پکار کر کہا۔اور لو یہ قافلہ بھی آگیا۔ اس میں وہی فلاں فلاں آدمی ہیں”۔ 
قافلے میں وہ لوگ نکلے جن کے متعلق آپ علیہ السلام نے فرمایا تھا۔ اب اگر یہ روایت صحیح ہے تو اس کے متعلق بھی وہی بات کہی جاسکتی ہے جو پیچھے بیان ہوئی ۔ واللہ اعلم۔ 
 
صفحہ ۵۱۷ پر مزید لکھتے ہیں کہ ؛۔ 
 
جہاں تک سورج کے رکنے کا تعلق ہے اس کا مطلب یہ ہے کہ سورج کی حرکت (یعنی زمین کی گردش) بالکل رک گئی تھی ۔ ایک قول یہ ہے کہ حرکت ہلکی ہوگئی تھی اور ایک قول یہ ہے کہ اس کا مطلب ہے کہ وقت کے لحاظ سے اپنی جگہ سے پیچھے ہوجانا۔ 
 
علماء نے لکھا ہے اس موقعہ کے علاوہ اور کبھی حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے لیئے سورج کو نہیں روکا گیا۔ ایک روایت یہ ہے کہ غزوہ خندق کے دن بھی حضور علیہ السلام کے لیئے سورج کو غروب ہونے سے روکا گیا تھا۔ یہاں تک کہ آپ نے عصر کی نماز پڑھی اور اسکے بعد سورج غروب ہوا۔ مگر اس روایت کی تردید اس قول سے ہوجاتی ہے جس میں ہے کہ اس دن حضور علیہ السلام نے عصر کی نماز سورج غروب ہوجانے کے بعد پڑھی تھی اور فرمایا تھا کہ ان مشرکوں نے ہمیں نماز، وسطی درمیانی نماز یعنی عصر کی نماز سے روک دیا۔ اسکی تفصیل آگے آئے گی۔ 
 
مگر بعض حضرات نے اس بارے میں دوسری بات لکھی ہے کہ غزوہ خندق کئی تک تک رہا تھا۔ ان میں سے ایک دن سورج کو شفق یا اسکےبعد کی زردی کی شکل میں روکا گیا تھا اور آپ نے اسی وقت میں نماز پڑھی اور بعض دنوں میں روکا نہیں گیا بلکہ آپ نے غروب کے بعد نماز پڑھی۔ ان ہی بعض حضرات نے کہا ہے کہ شفق کی سرخی یا زردی میں تاخیر کی روایت کرنے والا دوسرا ہے اور غروب میں تاخیر کی روایت کرنے والا دوسرا شخص ہے اور اس طرح یہ دونوں باتیں الگ الگ روایتوں میں کہی گئی ہیں۔  
 
امام حلبی نے مزید لکھا ہے کہ ؛۔ 
 
دوسرے انبیاء جن کے لیئے سورج روکا گیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔ ایک ضعیف روایت ہے کہ داؤد علیہ السلام کے لیئے بھی ایک  
بار سورج کو غروب سے روکا گیا تھا۔ علامہ بغوی (رح) نے لکھا ہے کہ اسی طرح ایک مرتبہ سورج کو سلیمان علیہ السلام کےلئے بھی روکا گیا ہے چنانچہ حضرت علی (رض) سے روایت ہے کہ اللہ تعالیٰ نے ان فرشتوں کو حکم دیا جو سورج پر متعین ہیں کہ وہ اسکو پیچھے پھیر دیں تاکہ سلیمان علیہ السلام عصر کی نماز وقت کے اندر پڑھ لیں۔  
 
سلیمان علیہ السلام کے لیئے بھی سورج روکا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔ اس کا مطلب ہے کہ سلیمان علیہ السلام کے لیئے سورج کو پیچھے پھیرا گیا تھا روکا نہیں گیا تھا بلکہ یہاں اس کو روکے جانے کے سلسلہ میں ہی بحث چل رہی ہے ادھر بعض حضرات نے کہا کہ سلیمان علیہ السلام نے اپنے گھوڑوں کی کوچیں کاٹ ڈالی تھیں اور انکی گردن ماردی تھی کیونکہ ان کی وجہ سے وہ وقتِ عصر کی نماز ادا نہیں کرسکے تھے یعنی حق تعالیٰ کا حکم اس وقت میں پورا نہیں کرسکے تھے انہوں نے صدقہ نہیں کیا۔ تو یہ بھی انہوں نے حق تعالیٰ کے حکم کی تعظیم میں کیا تھا کیونکہ صدقہ کرنے میں بھی وقت کا صرف ہونا ضروری تھا۔ 
 
ص ۵۱۸ پر یہ بھی لکھتے ہیں کہ یوشع علیہ السلام کے لیئے بھی سورج روکا گیا تھا۔۔۔۔۔ اسی طرح حضرت موسیٰ علیہ السلام کے بھانجے حضرت یوشع علیہ السلام کے لیئے بھی سورج روکا گیا ہے یہی ابن نون ابن یوسف صدیق علیہ السلام ہیں۔ موسیٰ علیہ السلام کے بعد یہی ان کے جانشین ہوئے اورانہوں نے تبلیغِ دین کا کام کیا۔ 
 
ص ۵۲۴ پر لکھتے ہیں؛۔  
 
اسکے بعد اسی کتاب میں لکھا ہے کہ جب موسیٰ علیہ السلام کی وفات کا وقت قریب آیا تو انہوں نے کہا۔ 
 
اے پرودگار مجھے بیت المقدس کی سرزمین سے اک تیر کی مار کے برابر قریب کردے۔ 
 
اس پر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا؛۔ اگر میں وہاں ہوتا تو تم کو ان کی قبر دکھلاتا جو ریت کے سرخ ٹیلے کے پاس راستے پر ہے۔ 
 
علامہ ابن کثیر کہتے ہیں؛۔ حضور علیہ السلام کا یہ فرمانا کہ سوائے یوشع علیہ السلام کے سورج کو کسی انسان کے لیئے نہیں روکا  
گیا۔ اس بات کا ثبوت ہے کہ یہ واقعہ حضرت یوشع کی خصوصیات میں سے تھا۔ لہٰذا اس کی روشنی میں وہ روایت کمزور ہوجاتی ہے جو ہم نے بیان کی ہے کہ غزوہ خیبر کے موقعہ پر سورج کو غروب ہونے کے بعد لوٹایا گیا تھا یہاں تک کہ حضرت علی نے عصر کی نماز پڑھی جو اسلیئے رہ گئی تھی کہ حضور اپنی سواری پر سوگئے تھے۔ یہ واقعہ آگے بیان ہوگا۔ (پھر علامہ ابن کثیر خیبر والی روایت کے بارے میں کہتے ہیں کہ) یہ حدیث منکر ہے۔ اس میں صحیح یا حسن ہونے کا کوئی جز نہیں ہے پھر یہ اگر حدیث صحیح ہوتی تو مختلف وجہوں سے اس کی روایت ضروری تھی اور بہت سے معتبر راوی اسکو بیان کرتے مگر اس کو اہلبیت میں سے صرف ایک عورت نے روایت کی ہے اور وہ ایسی کہ اسکےمتعلق کوئی تفصیل نہیں (کہ عام زندگی میں وہ کیسی تھی اور اسکی باتیں قابلِ اعتبار ہوتی تھیں یا نہیں) “یہاں تک علامہ ابن کثیر کا کلام ہے۔ 
 
مگر اس روایت پر جو شبہ ہوتا ہے وہ آگے بیان ہوگا (نوٹ؛ضرب حق؛ جو پہلے ہی اوپر جواب کے ساتھ بیان کیا جاچکا ہے)۔ کیونکہ ایک حدیث یہ ہے کہ سورج کو سوائے حضور کے کسی کے لیے نہیں روکا گیا۔ یہاں یہ بات واضح رہے کہ مراد سورج کو روکنے سے ہے اس کو غروب ہوجانے کے بعد پھیرنے یعنی واپس لوٹانے سے نہیں ہے۔ جب کہ ان دونوں باتوں میں فرق ہے کیونکہ سورج کو روکنے کا مطلب ہے اسکو اپنی جگہ پر ٹھہرا دینا اور پھیرنے کا مطلب ہے اسکے غروب ہونے کے بعد اس کو پھر واپس لانا بہرحال یہ اختلاف قابلِ غور ہے۔  
 
مزید لکھتے ہیں؛۔ 
 
علامہ سبط ابن جوزی نے لکھا ہے کہ یہاں یہ کہاجاسکتا ہے کہ سورج کو روکنا یا اس کو دوبارہ پھیردینا مشکل ہے جو سمجھ میں نہیں آسکتا کیونکہ اسکے رکنے کی وجہ سے یا لوٹائے جانے کی وجہ سے دن اور رات میں فرق پیدا ہوگا اور اسکے نتیجے میں آسمانوں کا نظام درہم برہم ہوجائے گا۔  
 
اس شبہ کا جواب یہ ہے کہ یہ واقعہ معجزات میں سے ہے اور معجزات کے سلسلے میں کوئی عقلی قیاس بھی کام نہیں کرسکتا (بلکہ وہ حق تعالیٰ) کی طرف سے ظاہر ہونے والی ایک خلافِ عادت بات ہوتی ہے جو جزو اور کل کا مالک ہے۔ 
امام حلبی نے مزید صفحہ ۵۲۵ میں بغداد کے ایک شیخ کا واقعہ بھی لکھا ہے کہ؛۔ 
بعض روایتوں سے معلوم ہوتا ہے کہ اسی قسم کا واقعہ بغداد میں ایک بزرگ کے لیئے بھی پیش آیا ہے۔ یہ بزرگ عصر کی نماز کے بعد وعظ کہنے کے لیئے بیٹھے اور اس میں انہوں نے حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے اہل بیت یعنی خاندان والوں کے فضائل ومناقب بیان کرنے شروع کئے۔ اسی دوران میں ایک بادل سورج کے سامنے آگیا جس سے روشنی کم ہوگئ۔ اس پر ان بزرگ اور دوسرے تمام حاضرین نے یہ سمجھا کہ سورج چھپ گیا ہے اس لیئے انہوں نے مغرب کی نماز کے لیے اٹھنے کا ارادہ کیا یہ دیکھ کہ ان بزرگ نے لوگوں کوہاتھ سے اشارہ کیا کہ وہ ابھی نہ جائیں اس کے بعد انہوں نے مغرب کی جانب اپنا رخ کرکے کہا۔ 
 
لا تغربی یاشمس حتی ینتھی 
مدجی لال المصطفی رلنجلہ 
ان کان للمولی وقوفک فلیکن 
ھذا الوقوف لولدہ ولنسلہ 
 
ترجمہ: اے سورج! اس وقت تک غروب مت ہو جب تک کہ میں حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی اولاد کی تعریفیں و مدح ختم نہ کرلوں۔اگر تو اب سے پہلے آقائے نامدار کے لیئے ٹھہرا تھا تو اس وقت تیرا ٹھہرنا آقائے نامدار کی اولاد اور نسل کے لیئے ہوگا۔ 
 
ان کی اس دعا پر سورج ایک دم پھر سامنے آکر چمکنے لگا۔ اس واقعہ کو دیکھ کر ان بزرگ پر لوگوں نے ہدیوں اور پوشاکوں کی بارش کردی۔ یہاں تک علامہ سبط ابن جوزی کا کلام ہے۔ 
 
مختلف حوالہ جات؛ 
 
الشفا بتعريف حقوق المصطفے، القاضي ابي الفضل عياض مالکي، ص ۳۸۴ دارالکتب العلميه بيروت، طباعت اردو، مکتبه اعلي حضرت ، س ۲۶۰ و ۲۶۱ مجلد ۱ 
 
امام یوسف نبھانی نے علامہ ابن السبکی رحمتہ اللہ علیہ کا بھی قول تحریر کیا ہے اور کہا ہے کہ اس روایت کو قاضی عیاض مالکی نے الشفاء شریف ، میں ، امام الطحاوی نے ، طبرانی کی معجم الکبیر سے ، امام ابن مندہ ، ابن شاھین نے ابن مردویہ سے جنہوں نے ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے مروی کیا ہے، جبکہ فرماتے ہیں 
 
وروی الطبرانی فی معجمہ الاوسط باسناد ِ حسن۔ جس کو طبرانی نے اپنی معجم الاوسط میں اسنادِ حسن سے روایت کیا ہے۔ مزید لکھا ہے کہ۔ قاضی عیاض کے علاوہ امام نووی، حافظ ابن حجر اور حافظ مغلطائ نے بھی روایت کیا ہے۔ 
 
الانوار المحمديه من المواهب اللدنيۀ، القاضي شيخ يوسف بن اسماعيل النبهاني، ص۱۷۶، حديث رد الشمس، دارالکتب العلميه بيروت 
 
مزید حوالہ جات؛ 
 
حافظ عراقی نے طرح التثریب فی شرح القریب میں ص ۲۴۷ و ۲۴۸ پر۔ 
 
حجتہ اللہ علی العالمین، فی معجزات سید المرسلین، للنبھانی ص ۲۵۵ لاهور پاکستان 
 
مجمع الزاوئد ومنبع الفوائد، الحافظ نورالدين علي بن ابي بکر بن سليمان الهيثمي المصري الشافعي، جز سادس ۷.کتاب المغازي والسير ص ۶۴۸ 
 
مناهل الصفا في تخريج احاديث الشفا، ابي الفضل جلال الدين عبدالرحمن السيوطي، ص ۱۱۹ موسسته الکتب الثقافيه، دار الجنان، طبراني کي شرط پر صحيح قرار ديا. 
 
المقاصد الحسنه امام الحافظ المورخ شمس الدين ابي الخير محمد بن عبدالرحمن السخاوي، ص ۲۲۶ دارالکتب العلميه بيروت 
المعجم الکبير للحافظ ابي القاسم سليمان بن احمد الطبراني، ۲۶۰ تا ۳۶۰ هجري جز ۱۴ ص ۱۴۴ و صفحات ۱۴۵ و ۱۴۷ و ص ۱۵۲ از.مکتبه ابن تيميه قاهره مصر 
 
نسيم الرياض في شرح شفا القاضي عياض، شهاب الدين احمد بن محمد بن عمر الخفاجي المصري متوفي ۱۰۶۹ هجري جز ۳ القسم الاول ص ۴۸۵ ، دارالکتب العلميه بيروت 
 
شرح الشفا، للامام ملا علي القاري الهروي المکي الحنفي متوفي ۱۰۱۴ هجري، جز ۱، ص ۵۸۸ و صفحات ۵۹۴ و ۵۹۶ و ۵۹۳ از.فصل في انشقاق القمر وحبس الشمس، دارالکتب العلميه بيروت 
 
المواهب اللدنيه ، از علامه زرقاني صفحات ۲۰۹ تا ۲۱۰ دارالکتب العلميه بيروت 
 
شرح مشکل الآثار، امام المحدث الفقيه المفسر ابي جعفر احمد بن محمد بن سلامه الطحاوي موسسته الرسالۀ بيروت صفحات ۹۲ تا ۹۴، باب ۱۶۵ بيان مشکل ماروي 
 
تاريخ مدينۀ دمشق ، للامام ابن عساکر، باب علي بن ابي طالب، صفحات ۳۱۳ و ۳۱۴ ج ۴۲ ، دارالفکر بيروت 
 
ہم اہلسنت وجماعت اسلاف کے قول پر پوری طرح پابند ہیں اسلیئے ہم اکا دکا علماء کے اقوال کی جگہ جمہور کے اقوال کو اہمیت دیتے ہیں، اسی لیئے ہمارے نزدیک یہ حدیث بھی بالکل درست ہے اور اسکی تائید میں دیگر احادیث اسکو قوی بنا دیتی ہیں جیسا کہ اوپر تفصیل میں بیان کیا گیا۔ اس پر مزید کام ابھی جاری ہے۔ انشاء اللہ مزید اپڈیٹ جلد ہی کردی جائے گی۔ شکریہ
Scans On this topic:

Al Mawahib al Laduniya – Imam Zarqani

Shifa and its Sharuhat – Imam Qadi Iyad Maliki (rta):
and
and
and:
and Naseem ur Riyaz Sharhi Shifa Qazi Ayaz By Imam Mulla Ali Qari al-Hanafi :
and

Manahil al Safa – Hafidh Jalal-ud-deen al-Sayooti:

And:

Maqasid al Hasanah – Imam Shams-ud-deen abi al Khair Abd-Rahman al-Sakhawi:

And

Shifa Sharif In Urdu:

and In Anwar al Muhammadiyah By Sheikh Yusuf bin Ismail al-Nabhani (rta):
Insha-Allah more scans will be updated soon: [Continued – Click to Access our Forum Link ]  [Scans Drives A & B]
Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s