itqan-fiulomil-quran

Prophecy from Tafsir of Holy Quran which Happened [Ar-Ur-En]


قدیم تفسیراتِ قرآنی کے علوم کی ایک جھلک اور کیوں قدیم تفسیرات ہی اہمیت رکھتی ہیں۔ 
سلطان صلاح الدین ایوبی رحمتہ اللہ علیہ نے شہر حلب ۱۸ صفر ۵۷۹ ہجری میں فتح کیا۔ اس موقعہ پر امام ابوالمعالی محی الدین محمد بن ابوالحسن المعروف ابن ذکی الدین نے قصیدہ پڑھا جس میں فتح پر سلطان کو مبارکباد تھی۔ اور ساتھ میں یہ بھی بشارت دی کہ ماہ رجب میں بیت المقدس بھی فتح ہوجائے گا۔ ان کے قول کے مطابق رجب میں جب بیت المقدس فتح ہوگیا۔ تو سلطان نے مذکور عالم کو بلا کر پوچھا تمہیں اس فتح کا علم کیسے ہوا، انہوں نے فرمایا میں نے تفسیر ابن برجان میں ارشاد الٰہی 
 
الم غلب الروم فی ادنی الارض وھم من بعد غلبھم سیغلبون فی بضع سنین 
ترجمہ۔ الم ۔ رومی مغلوب ہوں گے ، زمین میں جلدی اور اسکے بعد وہ چند سالوں میں غالب آجائیں گے۔ (الروم۔ ۱ تا ۴)۔ 
 
سے مصنف کا یہ اسنباط پڑھا تھا کہ رجب میں بیت المقدس فتح ہوجائے گا۔ تو میں نے اس بنیاد پر اس فتح کی بشارت آپ کو دی تھی۔  
 
شیخ ابوالعباس احمد بن خلکان (ت۔ ۶۸۱) کے الفاظ میں یہ استنباط و بشارت ملاحظہ فرمائیں۔ 
 
امام ابن ذکی الدین کے حالات میں رقم طراز ہیں۔ محی الدین ان کا لقب، دمشق کے مشہور شافعی اور قاضی تھے۔ سلطان صلاح الدین ایوبی کے ہاں ان کی بڑی قدرومنزلت تھی۔ 
 
ترجمہ عربی؛۔  
 
جب سلطان مذکور نے بروز ہفتہ اٹھارہ صفر ۵۷۹ ھ میں شہر حلب فتح کیا تو اس موقعہ پر قاضی محی الدین مذکور نے قصیدہٗ باہیہ پڑھا جس میں ان کی خدمت کو خوب سراہا۔ اس قصیدہ کا ایک شعر تھا جو لوگوں کے ہاں معروف ہے۔ ماہ صفر میں قلعہ شہباٗ کا فتح ہونا یہ بشارت ہے کہ رجب میں بیت المقدس فتح ہوجائے گا تو اسی طرح ہوا جو انہوں نے کہا تھا۔ تو بیت المقدس ستائیس رجب ۵۸۳ھ میں فتح ہوگیا۔ قاضی محی الدین سے پوچھا گیا یہ تم نے کہاں سے پایا؟ تو کہنے لگے میں نے ابن برجان کی اس تفسیر میں پایا جو انہوں نے ارشاد الٰہی (الم غلبت الروم) کی تفسیرکی تھی۔ 
 
شیخ ابن خلکان کی تلاش 
شیخ ابن خلکان کہتے ہیں جب میں نے یہ حکایت اور شعر سنا تو میں اس تفسیر ابن برجان کی تلاش میں رہا۔  
 
حتی وجدتہ علی ھذہ الصورۃ لکن کان ھذا الفصل مکتوباً فی الحاشیۃ بخط غیرالاصل ولا ادری ھل کان من اصل الکتاب ام ھو ملحق بہ؟ (وفیات الاعیان ۴،۶۸)۔ ترجمہ۔ اور میں نے تمام صورت پالی لیکن یہ عبارت اسکے حاشیہ میں تھی اور اصل کے خط میں نہ تھی۔ علم نہیں کہ یہ اصل کتاب سے ہے یا اسکے ساتھ ملحق ہے۔  
 
امام بدرالدین زرکشی (ت ۷۹۸) فواتح سوُر پر گفتگو کرتے ہوئے لکھتے ہیں ان کے بارے میں چھٹا قول یہ ہے 
 
ہرکتاب میں کچھ راز ہوتے ہیں تو قرآنی راز فواتح سُور ہیں، شیخ ابوالحسن احمد بن فارس (ت۔ ۳۹۵) نے اس قول کی تشریح یوں کی 
 
اراد من السر الذی لا یعلمہ الا اللہ والراسکون فی العلم واختارہ جماعۃ منھم ابوحاتم بن حبان۔ 
راز سے مراد یہ ہے کہ اسے اللہ تعالیٰ اور علم میں رسوخ رکھنے والے ہی جانتے ہیں، یہ ایک جماعت کا مختار ہے اور امام ابوحاتم بن حبان انہی میں سے ہیں۔ 
 
اسکے بعد اسکی تائید میں امام زرکشی رحمتہ اللہ علیہ لکھتے ہیں؛۔ 
 
قلت ، وقد استخرج بعض اٗئمۃ المغرب من قولہ تعالیٰ الم غلبت الروم فتوح بیت المقدس واستقاذہ من العدو فی سنتہ معینۃ وکان کما قال  
میں کہتا ہوں بعض ائمہ مغرب نے ارشادِ الٰہی الم غلب الروم سے بیت المقدس کی فتح اور اسکا دشمن سے نجات پانے کا معین سال مستنبط کیا اور جو انہوں نے لکھا اس کے مطابق فتح ہوئی۔ (البرھان فی علوم القرآن ۱،۲۲۴)۔ 
 
اسی پر حضرت امام جلال الدین محدث سیوطی رحمتہ اللہ علیہ (ت ۹۱۱) قاضی شمس الدین الخویی (ت ۶۳۷) کے حوالہ سے لکھتے ہیں؛۔ 
 
وقد استخرج بعض الائمۃ من قولہ تعالیٰ الم، علبت الروم ان البیت المقدس یفتحہ المسلمون فی سنۃ ثلاثۃ وثمانین وخمسائۃ ووقع کما قالہ۔ (الاتقان ج ۱ ص ۱۳۸۴ جز ۴مرکز الدراسات القرآنیۃ للمملکۃ العربیۃ السعودیۃ وزارۃ الشئوون الاسلامیہ والاوقاف والدعوۃ والارشاد)۔ 
بعض ائمہ نے ارشاد باری تعالیٰ الم غلبت الروم سے مستنبط کیا کہ مسلمان ۵۸۳ھ میں بیت المقدس فتح کرلیں گے اور اسی کے مطابق فتح ہوئی۔ 
 
شیخ ابن برجان کا تعارف؛۔ 
جس مغربی عالم نے یہ استنباط واستخراج کیا ان کا تعارف شیخ ابن خلکان نے یوں کروایا ہے؛۔ 
 
ترجمہ؛۔ ان کا نام ابوالحکم عبدالسلام بن عبدالرحمٰن بن محمد بن عبدالرحمٰن اللخمی ہے۔ یہ نہایت ہی صالح بزرگ ہیں، انہوں نے قرآن مجید کی تفسیر لکھی اور انکی اکثر گفتگو صاحبان احوال و مقاماتِ صوفیہ کے طریق پر ہے۔ ان کا وصال ۵۳۶ھ میں شہر مراکش میں ہوا اللہ تعالیٰ کی رحمتوں کا ان پر خوب نزول ہو، برجان، باپر زبر، ر مشدد اور اسکے بعد جیم اور اسکے بعد الف نون ہے (وفیات الاعیان۴، ۷۴)۔  
 

الغرض بیت المقدس کی فتح کی اطلاع و استنباط از قرآن ، وقوع فتح سے سینتالیس سال پہلے ہے۔ اسے تمام اہل علم نے سراہا اور قبول کیا۔

Quranic Sciences and Ullum

When Sultan Salah-ud-deen Ayoubi (rta) get victory over the city of Halab on 18 Sfr 579 Hijri. On that occassion Imam Abu al Ma’aali Muhai-ud-deen mohammad bin abu alhasan (aka) Ibn Zaki-ud-deen recited a poem. In which there was congratulation to Sultan on his victory and also there was prophecy that in the month of Rajab the Bait-al-Muqaddas will also be gained (victory over it). The thing just happened as was said. After victory Sultan asked that scholar to his courtship and questioned him about the victory, that how did you get that news (before it happened)?. The Scholar said, i get that from Tafsir Ibn Barj’an in which Allah’s word said

Alif-Laam-Meem (Alphabets of the Arabic language – Allah, and to whomever He reveals, know their precise meanings.) [Rum 30:1]
The Romans have been defeated. [Rum 30:2]

In the nearby land, and after their defeat they will soon be victorious. [Ruum 30:3]

Within a few (up to nine) years time; only for Allah is the command, before and after, and the believers will rejoice on that day. [Ruum 30:4]

Surah al Ruum Verses 1 to 4 Holy Quran.

…and I read the saying by the writer (of exegesis) that Fatah (victory) will be in the month of Rajab for Bayt-al-Maqaddas, and because of those basis I give you Bashaarat (good news) of victory.

Sheikh Abul al Abbas Ahmed bin Khalkan (d. 481): Who had written about that glad tidings in these words..

[In the regard of Imam Ibn Zakki-ud-deen’s biography he writes]. Muhayi-ud-deen was his surname, was a famous Qadhi (Justice) from Shafi’e (school). And was having a great respect in the court of Sultan.

When Sultan Saladin got victory over Halab on Saturday 18th Safar in the year of 579 Hijri, on that occasion the Qadi Muhayi-ud-deen (aforementioned) recited poem of Baa’hiya, in which the efforts (of Sultan) was praised very well. In the poem there was a stanza which is famous among the people. In the month of Safar the Castle of Sheh’baa’s victory is a good tiding for the victory of Bait-al-Maqadas in the Rajab, that it will be taken. So such thing happened as he said. Baital Muqaddas was taken victoriously on 27th of Rajab in the year of 583 Hijri. Qadi was asked that, how he may have that news before its occurrence. He replied that I found it in the Tafsir of Ibne Barjaan which he wrote about saying of Almighty Allah (Alam Ghalabat’al Rum)’s exegesis.

Search of Sheikh Ibne Khalkan.

Sheikh Ibne Khalkan says, when I heard about this narration and poetry, I was in search of Tafsir ibn barjaan.

Tr:
…..and I got everything, but that saying was in the Hashiya, not in the original writing, and don’t know that was it from the actual book or was attached with it. {Wafiyat al Ayaan 4: 48}

Imam Badr-ud-deen Zarkashi (rta) (d. 798 H) writes about Fawateh’e’Suur, that the 6th saying about it is such: In every book there are some secrets, (in such way) the Quranic secrets are Fawateh’e’suur. Sheikh abul hasan ahmed bin faa’ras (d. 395 H) has exaggerate this saying in such way.

Tr:
By the ‘Secret’, means that only Allah Almighty and [his] people in the knowledge can get those. This is saying of one group and Imam Abu Haa’tim bin Hiban was one among them.

Further after this confirmation Imam Zarkashi (rta) writes:

TR:
I (Imam Zarkashi) say, that some Scholars of west has deducted from the saying of Almighty [al-Ruum 1-to-4] that victory will be gained over Biat al Muqaddas, and the year from which it will get rid of its enemy was [also deducted], so what was written the victory happened as prescribed. {al-Burhan fi Ulumil Quran 1.224}

On such thing, Hazrat Imam Mohadith Jalal-ud-deen Suyuti (rta) (d. 911 H), writes on the authority of Qadi Shams-ud-deen al Kha’weyy:

Tr: Some Aima deducted from [alam ghalabatal ruum] (the verse of Quran), that Muslims will gain victory of Bait-al-Muqaddas in 583 Hijri, and the such thing happened just like.

About Sheikh Ibn-e-Barjaan:
The western scholar who get this prophecy or knowledge, his introduction has been done by Ibne Khalkan in these words:

Tr:
His name was Abu al Hakm Abdus-Salaam bin Abdur-Rahman bin Muhammad bin AbdurRahman al-Lakhmi. He is very pious elder. He wrote exegesis of Holy Quran, and his sayings are basically based on the People of Thoughts and Sufi ways. He died in 534 Hijri in the city of Marakish, and may Allah’s blessings showered upon him. {Wafiyatal Aayan 4: 74}

Thus, the victory of Bait-al-Muqaddas’s news deducted by the verse of Holy Quran, was said before forty-five years of the victory. All scholars has accepted this.

 

 

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s